آیت

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

آیت (عربی: آية) عربی زبان کا اسمِ مونث جس کے معنی ہیں اس نے نشانی کی۔ اصطلاحاَ َ قرآن میں ایک پورا جملہ جو شروع ہوتا اور ختم ہوتا ہے،وہ گول نشانقرآنمیں جملہ ختم ہونے پر ٹھہرنے کے واسطے بنا ہوتا ہے۔ کلام الہٰی کا ایک فقرہ بھی آیت کہلاتا ہے۔ قرآن شریف پڑھتے وقت جس آیت پر قطعی ٹھہرنا پڑے اسے آیت مطلق اور جس پر ٹھہرنا لازم نہ ہو۔ اسے آیت (لا) کہتے ہیں۔

آیت کے معنی[ترمیم]

لغوی معنی[ترمیم]

اصطلاحی معنی[ترمیم]

قرآن میں آیت کے معنی[ترمیم]

خود قرآن مین آیت مختلف معنوں مین آیا ہے۔

  • کسی جگہ اس سے مراد محض علامت یا نشانی کے ہیں
  • کسی جگہ آثار قدرت کو آیات کہا گيا ہے
  • کچھ جگہمعجزہکو آیات کہا گیا ہے
  • کہیں آیت قرآن کے فقروں کو کہا گیا ہے۔

مشہور آیات[ترمیم]

آیت الکرسی[ترمیم]

یہسورۃبقرہکی آیت 255 ہے جو آیت الکرسی کے نام سے جانی جاتی ہے۔ یہ نام خود نبی صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے اس آیت کو دیاہے اور شروع سے ہی مسلمان اس کو اس نام سے پکارتے آئے ہیں۔ اس کے فضاہل حدیثمیں وارد ہوئے ہیں۔

آیت مباہلہ[ترمیم]

سورۃآل عمرانکی آیت 61 کو مفسرین آیت مباہلہکہتے ہیں۔جس میں نجرانکے عیساہیوں کے ساتھ نبی صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کو مباہلہ کرنے کا کہا گيا۔ مگر عیسائی ڈر گئے اور مباہلہ نہ کیا۔

پھر اے حبیب! تمہارے پاس علم آ جانے کے بعد جو تم سے عیسی کے بارے میں جھگڑا کریں تو تم ان سے فرما دو:آو ہم اپنے بیٹوں کو اور تمہارے بیٹوں کو اور اپنی عورتوں کو اور تمہاری عورتوں کو اور اپنی جانوں کو اور تمہاری جانوں کو (مقابلے میں) بلا لیتے ہیں پھر مباہلہ کرتے ہیں اور جھوٹوں پر اللہ کی لعنت ڈالتے ہیں۔

(ترجمہ صراط الجنان فے تفسیر القران ، مفتی محمد قاسم)

آیت نور[ترمیم]

سورۃ النور کی آیت 35 کو علماء اور مفسرین نے "آیت نور" کا نام دیا ہے۔ اس آیت میں اللہ تعالی کی ایک صفت "نور" کا بیان ہے کہ "اللہ زمیں و آسمان کا نور ہے

اللہ نور ہے آسمانوں اور زمین کا، اس کے نور کی مثال ایسی جیسے ایک طاق کہ اس میں چراغ ہے، وہ چراغ ایک فانوس میں ہے، وہ فانوس گویا ایک ستارہ ہے موتی سا چمکتا، روشن ہرتا ہے برکت والے پیڑ زیتون سے جو نہ پورب کا نہ پچھم کا، قریب ہے کہ اس کا تیل بھڑک اٹھے اگرچہ اسے آگ نہ چھوئے، نور پر نور ہے، اللہ اپنے نور کی راہ بتاتا ہے جسے چاہتا ہے اور اللہ مثالیں بیان کرتا فرماتا ہے لوگوں کے لیے اور اللہ سب کچھ جانتا اے

(ترجمہ کنز الایمان، احمد رضا خان)

آیت مواریث[ترمیم]

سورۃ النساء کی آیت 11 اور 12۔کو تفاسیر میں آیت المواریث کہا گيا ہے، جن کی اساس پر اسلامی قانون میراث استوار ہے۔آیت کا ترجمہ

اللہ تمہیں تمہاری اولاد کے بارے میں حکم دیتا ہے، بیٹے کا حصہ دو بیٹیوں کے برابر ہے پھر اگر صرف لڑکیاں ہوں اگرچہ دو سے اوپر تو ان کے لیے ترکے کا دو تہائی حصہ ہو گا اور اگر ایک لڑکی ہو تو اس کے لئے آدھا حصہ ہے اور اگر میت کی اولاد ہو تو میت کے ماں باپ میں سے ہر ایک کے لئے ترکے سے چھٹا حصہ ہو گا پھر اگر میت کی اولاد نہ ہو اور ماں باپ چھوڑے تو ماں کے لئے تہائی حصہ ہے پھر اگر اس (میت) کے کئی بہن بھائی ہوں تو ماں کا چھٹا حصہ ہو گا، (یہ سب احکام) اس وصیت (کو پوراکرنے) کے بعد(ہوں گے) جو وہ (فوت ہونے والا) کر گيا اور قرض(کی ادائیگی) کے بعد (ہوں گے)۔ تمہارے باپ اور تمہارے بیٹے تمہیں معلوم نہیں کہ ان میں کون تمہیں زیادہ نفع دے گا، (یہ) اللہ کی طرف سے مقرر کردہ حصہ ہے۔ بیشک اللہ بڑے علم والا، حکمت والا ہے۔(11)اور تمہاری بیویاں جو (مال) چھوڑ جاہیں اگر ان کی اولاد نہ ہو تو اس میں سے تمہارے لئے آدھا حصہ ہے، پھر اگر ان کی اولاد ہو تو ان کے ترکہ میں سے تمہارے ہئے چوتھائی حصہ ہے۔ (یہ حصے) اس وصیت کے بعد (ہوں گے) جو انہوں نے کی ہو اور قرض (کی ادائیگی) کے بعد (بعد ہوں گے) اور اگر تمہارے ارلاد نہ ہو تو تمہارے ترکہ میں سے عورتوں کے لئے چوتھائی حصہ ہے، پھر اگر تمہاری اولاد ہو تو ان کا تمہارے ترکہ میں سے آٹھواں حصہ ہے (یہ حصے) اس وصیت کے بعد (ہوں گے) جو وصیت تم کر جا‌و اور قرض (کی ادائیگی) کے بعد (ہوں گے) اور اگر کسی ایسے مرد یا عورت کا ترکہ تقسیم کیا جانا ہو جس نے ماں باپ اور اولاد (میں سے) کوئی نہ چھوڑا اور (صرف) میں کی طرف سے اس کا ایک بھائی یا ایک بہن ہو تو ان میں سے ہر ایک کے لیے چھٹا حصہ ہو گا پصر اگر وہ (ماں کی طرف والے) بہن بھائی ایک سے زیادہ ہوں تو سب تہائی میں شریک ہوں گے (یہ دونوں صورتیں بھی) میت کی اس وصیت اور قرض (کی ادائیگی) کے بعد ہوں گی جس (وصیت) میں اس نے (ورثاء کو) نقصان نہ پہنچایا ہو۔ یہ اللہ کی طرف سے حکم ہے اور اللہ بڑے علم والا ہے ، بڑے حلم والا ہے۔(12)

۔[1]

آیت فتح[ترمیم]

آیات سجدہ[ترمیم]

وہ آیات جن کی تلاوت کرنے یا ان کو سننے پر سجدہ کیا جاتا ہے۔ بعض علماء کے نزدیک یہ سجدہ واجب ہے بعض کے نزدیک سنت۔ قرآن میں ایسے 14 متفق علیہ اور ایک اختلافی مقام، جن کو تلاوت کرنے یا سننے سے سجدہ واجب ہو جاتا ہے۔

آیات کی تقسیم بااعتبار نزول[ترمیم]

مکی و مدنی آیات[ترمیم]

مکی و مدنی دونوں اصطلاحیں ہیں۔ جو آیات ہجرت سے پہلے نازل ہوہیں وہ مکی اور جو ہجرت کے بعد نازل ہوہیں وہ مدنی۔ اکثر آیات مدنی ہیں جو قرآن کے شروع کے پاروں میں ہیں۔

بعض دفعہ ایک یہ بھی تقسیم کی جاتی ہے کہ جو آیات مکہ کے لوگوں کو خطاب کرنے لی لیے نازل ہوہیں وہ مکی اور جو مدینہ کے لوگوں کو خطاب کرتی ہیں وہ مدنی، اس طرح یہ بھی ایک صورت ہے کہ مکی وہ آیات جو مکہ میں نازل ہوہیں (اس میں فتح مکہ، اور حجۃالوداعپر جو نازل ہوہیں وہ بھی )مکی ہیں۔جو سفر میں (مکہ اور مدینہ کے باہر) نازل ہوہیں، وہ نہ مکی نہ مدنی۔[2]

مزید تقسیم[ترمیم]

  • حضری آیات، جو نبی کریم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے طوطن میں نازل ہوہیں۔ اکثر ايات ایسی ہی ہیں۔
  • سفری آیات، جو حالت سفر میں نازل ہوہیں۔
  • نہاری آیات، جو دن کے اوقات میں نازل ہوہیں۔
  • لیلی آیات، جو رات میں نازل ہوہیں۔
  • صیفی آیات، جو موسم گرما مین نازل ہوہیں۔
  • شتائی آیات، جو موسم سرما میں نازل ہوہیں۔
  • فراشی آیات، جو بستر نبوی صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم پر نازل ہوہیں۔
  • نومی آیات، جو نیند کی حالت میں نازل ہوہیں۔
  • سماوی آیات، جو معراج کی رات آسمانوں پر نازل ہوہیں۔
  • فضائی آیات، جو فضا میں نازل ہوہیں۔

تقسیم آیات بالحاظ موضوع[ترمیم]

آیاتِ متشابہات[ترمیم]

ایسے جملے جن کے معنی صاف ظاہر نہ ہوں بلکہ تاویل اور تفسیر کے محتاج ہوں اور ان میں بہت سے معنوں کا احتمال ہو۔ آیاتِ متشابہات کہلاتے ہیں۔ امام ابو حنیفہ کے نزدیک متشابہات وہ آیتیں ہیں جن کاعلم خدائے تعالٰے کے سوا کسی کو نہیں۔

آیات محکمات[ترمیم]

جو آیتیں تاویل کی محتاج نہیں ہیں ان کے معنی صاف ظاہر ہیں، انھیں آیات محکمات کہتے ہیں۔

آیات الحفظ[ترمیم]

وہ آیات جن میں حفاظت و نگہبانی کا ذکر ہو، جیسے

  • سورہ البقرہ کی آیت 255 "اس کی کرسی میں سمائے ہوئے ہیں آسمان اور زمین اور اسے بھاری نہیں ان کی نگہبانی اور وہی ہے بلند بڑائی والا ".
  • سورہ یوسف کی آیت 64 "تو اللّٰہ سب سے بہتر نگہبان اور وہ ہر مہربان سے بڑھ کر مہربان"۔
  • سورہ رعد کی آیت11 "آدمی کے لئے بدلی والے فرشتے ہیں اس کے آگے اور پیچھے کہ بحکمِ خدا اس کی حفاظت کرتے ہیں"۔

آیات دلیل[ترمیم]

وہ آیات جو عقل و فکر اور دلیل و برہان کی دعوت دیتی ہیں۔

آیات رحمت[ترمیم]

وہ آیات جن میں اللہ کی صفت رحمت کا ذکر ہو۔ جیسے سورہ مریم کی پہلی آیت۔

  • "یہ مذکور ہے تیرے رب کی اس رحمت کا جو اس نے اپنے بندہ زکریا پر کی"۔

آیات شفاعت[ترمیم]

آیات قدرت[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ترجمہ کنز العرفان، سورۃ النساء ، آیت 11، 12
  2. ^ سید قاسم محمود، انسائیکلوپیڈیا قرآنیات، حصہ 3، صفحہ 175
‘‘http://ur.wikipedia.org/w/index.php?title=آیت&oldid=1011950’’ مستعادہ منجانب