ازنیق

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش



ازنیق
İznik
Lefke Kapisi Iznik 932a.jpg
عمومی معلومات
ملک Flag of Turkey.svg ترکی
صوبہ بورصہ
رقبہ 753 مربع کلومیٹر
آبادی 20169 بمطابق 2000ء
منطقۂ وقت متناسق عالمی وقت +2 (موسم گرما +3)
رمزِ ڈاک 16x xx
رمزِ بعید تکلم 0224


ازنیق (İznik) (قدیم نام نیقیہ (Nicaea)) ترکی کا ایک شہر ہے جو جھیل ازنیق کے کنارے زرخیز علاقے میں واقع ہے۔ یہ یونانی عہد کا ایک قدیم شہر ہے جو دو کلیسائی مجلسوں کے لیے معروف ہے۔ اس کے علاوہ یہ سلطنت نیقیہ کا دارالحکومت بھی رہا ہے اور چوتھی صلیبی جنگ کے بعد 1204ء سے 1261ء تک بازنطینی سلطنت کا بھی دارالحکومت رہا۔ 1331ء میں عثمانیوں کی جانب سے فتح کیے جانے کے بعد کچھ عرصہ ان کا دارالحکومت رہا۔ 1930ء سے یہ جمہوریہ ترکی کے صوبہ بورصہ کا حصہ ہے۔

تاریخ[ترمیم]

ازنیق کا قدیم نام نیقیہ (Nicaea) ہے۔ یہ قدیم عثمانی دارالحکومت بورصہ سے تقریبا 80 کلومیٹر شمال مغرب میں واقع ہے۔ نیقیہ دو کلیسائی مجلسوں کے لیے مشہور ہے۔ ایک 325ء کی نیقیہ مجلس، جس میں اسکندریہ کے پادری ایریس (Arius) کے اس نظریے کو رد کیا کہ عیسیٰ خدا نہیں اور اس کے بجائے "نظریۂ نیقیہ" یعنی الوہیتِ مسیح کا نظریہ مسیحیت کی بنیاد قرار پایا۔ [1]

دوسری نیقیہ مجلس 787ء میں بت شکن عیسائیوں (Iconoclasts) کی مذمت کر کے بت پرستی کو جزو عیسائیت بنا گیا۔ [2]

عربوں نے 717ء اور 725ء میں نیقیہ کے ناکام محاصرے کیے۔ 1081ء میں شہر سلیمان بن قتلمش سلجوقی کے قبضے میں آ گیا۔ 1096ء میں سلیمان کے بیٹے اور جانشیں الپ ارسلان نے نیقیہ کے سامنے صلیبیوں کو شکست فاش دی مگر آیندہ سال 20 جون 1097ء کو یہ شہر گوڈفرے کی سرکردگی میں حملہ آور صلیبیوں کا مقابلہ نہ کر سکا اور اس نے اطاعت قبول کر لی۔ عثمانی سلطان اورخان اول نے طویل محاصرے کے بعد 1331ء میں نیقیہ پر قبضہ کیا اور کچھ دنوں کے لیے اسے اپنا دارالحکومت بنایا۔ 1402ء میں تیمور لنگ کی فوج کے ایک دستے نے اس شہر پر قبضہ کر کے اسے ویران کر دیا۔

عثمانی سلطنت کی دوبارہ بحالی کے بعد اس شہر نے اپنی خوبصورت چینی کے کام کی وجہ سے عالمی سطح شہرت سمیٹی۔ یہاں تیار ہونے والی چینی کی سلیں (ٹائلیں) استنبول اور ملک کے دیگر بڑے شہروں کی مساجد میں استعمال ہوئیں اور انہیں مشہور عثمانی معمار سنان پاشا نے بھی اپنی تعمیرات میں استعمال کیا۔ سلیں تیار کرنے کی یہاں کی صنعت ازنیق چینی کہلاتی ہے

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ اردو دائرۂ معارف اسلامیہ:508,507/2
  2. ^ آکسفرڈ انگلش ریفرنس ڈکشنری، ص 979