امریکی عقوبت یاداشتیں

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

اپریل 2009 میں امریکی صدر بارک اوبامہ نے پچھلے صدر جارج بش کے دور حکومت کی چار یاداشتیں جاری کیں جن میں غیر ملکی قیدوں کو اذیت اور تشدد پر کرنے کے طریقے تفصیل سے بیان کیے گئے ہیں۔ یہ دستاویزات امریکی انتظامیہ کے سرکاری افسران اور وکلاء نے 2002 اور 2005 میں تحریر کیے۔[1] یہ دستاویزات امریکی تنظیم ACLU کے مطالبہ پر منظر عام پر لائی گئیں۔ یہ تشدد طریقے امریکی خفیہ ادارے CIA کے اہلکاروں کو تشدد کے طریقے بتاتے ہیں جو انھوں نے قیدیوں پر استعمال کیے۔ ان طریقوں میں مار پیٹ، چھوٹے ڈبے میں کیڑوں کے ساتھ بند کرنا، ایسے پانی میں ڈبونا کہ آدمی سمجھے کہ وہ ڈوبنے والا ہے، وغیرہ شامل ہیں۔ ان سے واضح ہوتا ہے کہ امریکی ڈاکٹروں (جو سی آؤ اے کے ملازم تھے) نے بھی تشدد کرنے میں حصہ لیا۔ امریکی صدر نے کہا کہ کسی اہلکار کے خلاف ان طریقوں پر عمل کرنے کے الزام میں مقدمہ نہیں چلے گا کیونکہ یہ امریکہ کے لیے سوچ بچار کا وقت ہے، انتقام کا نہیں۔ مبصرین کے مطابق یہ دستاویزات امریکی انتظامیہ کے جینوا معاہدے کے تحت جنگی جرائم میں ملوث ہونے کا ثبوت ہیں۔ اقوام متحدہ کے تشدد پر نمائندہ مانفرڈ نوواک نے رائے دی ہے کہ عالمی قانون کے تحت امریکہ تشدد میں ملوث اپنے اہلکاروں پر مقدمہ چلانے کا پابند ہے۔[2] اوبامہ کے ناقدین کا کہنا ہے کہ یہ یاداشتیں جاری کر کے اس نے امریکہ کے دشمنوں کو تشدد کے کارگر طریقوں بارے معلومات فراہم کر دی ہیں۔

یاداشتوں کی فہرست:

اٹھارہ صفحہ یاداشت، 1 اگست 2002، جے بائبی، نائب جامع وکیل، امریکی محکمہ انصاف، کی طرف سے جان رازیو، جامع وکیل سی آئی اے کو۔

A 18-page memo, dated August 1, 2002, from Jay Bybee, Assistant Attorney General, OLC, to John A. Rizzo, General Counsel CIA.

چھیالیس صفحہ یاداشت، 10 مئی 2005، سٹیون براڈبری، اداکار جامع وکیل، امریکی محکمہ انصاف، کی طرف سے جان رازیو، جامع وکیل سی آئی اے کو۔

A 46-page memo, dated May 10, 2005, from Steven Bradbury, Acting Assistant Attorney General, OLC, to John A. Rizzo, General Counsel CIA

بیس صفحہ یاداشت، 10 مئی 2005، سٹیون براڈبری، اداکار جامع وکیل، امریکی محکمہ انصاف، کی طرف سے جان رازیو، جامع وکیل سی آئی اے کو۔

A 20-page memo, dated May 10, 2005, from Steven Bradbury, Acting Assistant Attorney General, OLC, to John A. Rizzo, General Counsel CIA

چالیس صفحہ یاداشت، 30 مئی 2005، سٹیون براڈبری، قائم مقام جامع وکیل، امریکی محکمہ انصاف، کی طرف سے جان رازیو، جامع وکیل سی آئی اے کو۔

A 40-page memo, dated May 30, 2005, from Steven Bradbury, Acting Assistant Attorney General, OLC, to John A. Rizzo, General Counsel CIA

ان یاداشتوں کے ایک مصنف جے بائبی امریکہ کے نویں دوران عدالت کے تاحیات منصف ہیں، جس کی منظوری امریکی کانگریس نے 2003ء میں دی تھی۔

امریکہ میں ان دستاویزات کے اجراء پر ردعمل کے بعد اوبامہ خود CIA کے مرکزی دفتر چل کر گئے اور اہلکاروں کی قربانیوں کو خراج تحسین پیش کیا۔ اس نے کہا کہ امریکہ اپنی غلطیوں سے سیکھتا ہے۔[3] امریکی صدر کے قانونی کارندوں نے یہ اعلان بھی کیا کہ وہ لوگوں کو غیرمعینہ مدت تک قید رکھنے کی سابق صدر کی حکمت عملی بھی جاری رکھے گا چاہے ان قیدیوں کو عدالت بری بھی کر دے۔[4]

بیرونی روابط[ترمیم]

  1. ^ aclu
  2. ^ بی بی سی، 19 اپریل 2009ء، "CIA torture exemption 'illegal' "
  3. ^ بی بی سی، 21 اپریل 2009ء، "Obama reaffirms support for CIA "
  4. ^ wsws, 10 جولائی 2009ء، "Obama claims right to imprison “combatants” acquitted at trial "