اے۔کے 47

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
اے۔کے 47[N 1]
AK-47 type II Part DM-ST-89-01131.jpg
اے۔کے 47
قسم Assault rifle
مقام منشاء سویت یونین
تاریخ استعمال
استعمال میں 1949–present
1949–1980s (USSR)
مستخدم See Users
تاریخ پیداوار
طرحکار میخائیل کلاشنکوف
طرح شدہ 1946–1948[1]
صنائع Izhmash and various others including Norinco
پیداوار 1949–1959[2]
تعداد پیداوار ≈ 75 million AK-47s, 100 million Kalashnikov-family weapons[3][4]
متغیرات See Variants
تخصیصات
وزن Without magazine:
3.47 kg (7.7 lb) AK[5]
Magazine, empty:
0.43 kg (0.95 lb) (early issue)[5]
0.33 kg (0.73 lb) (steel)[6]
0.25 kg (0.55 lb) (plastic)[7]
0.17 kg (0.37 lb) (light alloy)[6]
Ammo weight:
16.3 g × 30 = 0.49 kg (1.1 lb)[8]
لمبائی 880 mm (35 in) fixed wooden stock[حوالہ درکار]
875 mm (34.4 in) folding stock extended[حوالہ درکار]
645 mm (25.4 in) stock folded[5]
Barrel لمبائی 415 mm (16.3 in) total[5]
369 mm (14.5 in) rifled[5]

Cartridge 7.62×39mm
Action Gas-operated, rotating bolt
Rate of fire Cyclic 600 rounds/min,[5] practical
40 rounds/min semi-automatic[5]
100 rounds/min fully automatic[5]
Muzzle velocity 715 m/s (2,350 ft/s)[5]
Effective range 400 metres (440 yd) semi-auto[9]
300 metres (330 yd) full auto[9]
Feed system Standard magazine capacity is 30 rounds;[5] there are also 5- 10-, 20- and 40-round box and 75- and 100-round drum magazines
Sights Adjustable iron sights with a 378 mm (14.9 in) sight radius:[5]
100–800 m adjustments (AK)[5]
100–1000 m adjustments (AKM)[7]
اے کے 47

AK47 یہ دنیا میں سب سے زیادہ استعمال ہونے والی رائفل ہے۔ روس کے ہتھیار ڈیزائنر میخائیل کلاشنکوف نے 1947ء میں اے۔کے 47 ایجاد کی۔

استعمال کرنے والے ممالک[ترمیم]

اے۔کے 47 عام طور پر مشرقی بلاک کے ممالک میں استعمال ہوتی ہے۔ یہ دنیا میں سب سے زیادہ استعمال ہونے والی بندوق ہے، اور عام طور غریب افواج کے زیر استعمال ہے۔ اے۔کے 47 بنادی طور پر مشین گن کی خصوصیات کے ساتھ بنائی گئی ہے۔ اس میں یہ خاصیت ہے کہ یہ ایک ایک کر کے اور اکٹھے بھی مشین گن کی طرح گولیاں چلا سکتی ہے۔ امریکہ نے اس کے مقابلے میں ایم 16 بندوق بنائی۔ ویتنام کی جنگ میں ان دونوں کا ہی مقابلہ تھا۔



اے۔کے 47 بمقابلہ ایم 16[ترمیم]

اورM16کا موازنہ AK47

یہ بات ثابت شدہ ہے کہ ایم 16 کی حد اور ٹھیک نشانہ لگانے کی صلاحیت کلاشنکوف سے بہت زیادہ ہے۔ ایم 16 کی گولی با نسبت اے۔کے 47 کی گولی کے چھوٹی ہوتی ہے۔جس کی وجہ سے کلاشنکوف کی گولی میں زیادہ طاقت ہوتی ہے۔ مگر اے۔کے 47 سے چلائی گئی گولی کے خطا ہونے کے امکانات زیادہ ہوتے ہیں۔

ایم 16 کی بناوٹ میں پلاسٹک استعمال ہوا ہے جب کے اے۔کے 47 کی بناوٹ میں مختلف دھاتیں اور لکڑی استعمال ہوتی ہے۔ جس کا نقصان یہ ہے کہ کلاشنکوف کا وزن زیادہ ہوتا ہے مگر دست بدست لڑائی میں دشمن فوجی پر اے۔کے 47 کا بٹ استعمال کر سکتے ہیں جبکہ ایم 16 کے ٹوٹ جانے کا خطرہ ہوتا ہے۔

ایم 16 کا دور کا نشانہ ٹھیک ہوتا ہے اور اے۔کے 47 کا کمزور۔ ایک امریکی فوجی کا کہنا ہے کہ ویتنام کی جنگ میں دشمن اس قدر قریب ہوتا تھا کہ ہم آپس میں بندوقیں تبدیل کرلیتے تھے۔

ایم 16 کی صفائی بہت ضروری ہے جب کے اے۔کے 47 کی صفائی نہ بھی ہو مگر چلتی ضرور ہے۔

استعمال[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]


خطا در حوالہ: <ref> tags exist for a group named "N", but no corresponding <references group="N"/> tag was found, or a closing </ref> is missing

  1. ^ Monetchikov 2005, chpts. 6 and 7 (if AK-46 and −47 are to be seen as separate designs).
  2. ^ Popenker, Maksim (5 February 2009). "Kalashnikov AK (AK-47) AKS, AKM and AKMS assault rifles (USSR)". World Guns. Modern Firearms & Ammunition. http://world.guns.ru/assault/rus/ak-akm-e.html۔ اخذ کردہ بتاریخ 14 March 2011. 
  3. ^ Killicoat 2007, p. 3.
  4. ^ "AK-47 Inventor Doesn't Lose Sleep Over Havoc Wrought With His Invention". FoxNews.com. USA: News Corporation. 6 July 2007. http://www.foxnews.com/story/0,2933,288456,00.html۔ اخذ کردہ بتاریخ 3 April 2010. 
  5. ^ 5.00 5.01 5.02 5.03 5.04 5.05 5.06 5.07 5.08 5.09 5.10 5.11 НСД. 7,62-мм автомат АК 1967, pp. 161–162.
  6. ^ 6.0 6.1 НСД. 7,62-мм автомат АКМ (АКМС) 1983, pp. 149–150.
  7. ^ 7.0 7.1 "AKM (AK-47) Kalashnikov modernized assault rifle, caliber 7.62mm". Izhmash. http://www.izhmash.ru/eng/product/akm.shtml۔ اخذ کردہ بتاریخ 8 June 2012. 
  8. ^ Land Forces Weapons: Export Catalogue. Moscow: Rosoboronexport. 2003. p. 85. OCLC 61406322. http://www.scribd.com/doc/30301368/Rosoboronexport-Land-Forces-Weapons-Catalogue. 
  9. ^ 9.0 9.1 Shelford Bidwell et al. (25 February 1977). Bonds, Ray. ed. The Encyclopedia of land warfare in the 20th century. A Salamander book. London; New York: Spring Books. p. 199. ISBN 978-0-600-33145-2. OCLC 3414620. http://books.google.com/books?id=RuIgAQAAIAAJ.