بیبرس

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

رکن الدین بیبرس مملوک سلطنت کا پہلا نامور حکمران ہے۔ اس نے 1260ء سے 1277ء تک 17 سال مصر و شام پر حکومت کی۔ وہ ہلاکو خان اور دہلی کے غیاث الدین بلبن کا ہمعصر تھا۔

وہ نسلا ایک قپچاق ترک تھا جسے غلام بنانے کے بعد قپچاق میں فروخت کردیا گیا۔ کہا جاتا ہے کہ منگولوں نے بھی اسے غلام بناکر شام میں فروخت کردیا تھا۔ وہ ایوبی سلطان الصالح ایوب کا ذاتی محافظ تھا۔

وہ ساتویں صلیبی جنگ میں فرانس کے لوئس نہم اور 1260ء میں جنگ عین جالوت میں منگولوں کو شکست دینے والے لشکروں کا کمانڈر تھا۔

جنگ عین جالوت[ترمیم]

تفصیلی مضمون کے لئے جنگ عین جالوت

بغداد کو تباہ کرنے کے بعد جب ہلاکو کی فوجیں شام کی طرف بڑھیں تو بیبرس اور ایک دوسرے مملوک سردار سیف الدین قطز نے مل کر 1260ء میں عین جالوت کے مقام پر ان کو فیصلہ کن شکست دی اور شام سے منگول فوجوں کو نکال باہر کیا۔ بیبرس کایہ بہت بڑا کارنامہ ہے کہ اس نے مصر و شام کو منگولوں کی تباہ کاریوں سے بچایا۔ ورنہ ان ملکوں کا بھی وہی حشر ہوتا جو ایران، عراق اور ترکستان کا ہوا۔ بیبرس نے نہ صرف یہ کہ شام پر منگولوں کے حملوں کو پسپا کیا بلکہ خود ان کے علاقوں پر حملہ آور ہوا۔ اس نے مصری سلطنت کی شمالی سرحد ایشیائے کوچک کے وسطی علاقوں تک پہنچادی۔

اس نے جنگ عین جالوت کے بعد مملوک بادشاہ سیف الدین قطز کو قتل کرکے حکومت سنبھالی۔ کہا جاتا ہے کہ اس نے اپنے ایک ساتھی کے قتل کا بدلہ لینے کے لئے سیف الدین کو قتل کیا۔ بلکہ حادثاتی طور پر قتل ھوا تھا جس کا اسے بہت افسوس تھا کیونکہ یہ قاضی کی عدالت میں فیصلہ چاہتا تھا۔

عیسائیوں کے خلاف مہمات[ترمیم]

بیبرس کا دوسرا بڑا کارنامہ شام کے ساحل پر قابض یورپی حکومتوں کا زور توڑنا ہے۔ یہ حکومتیں پہلی صلیبی جنگ کے زمانے سے شام کے ساحلی شہروں پر قابض تھیں۔ نور الدین زنگی اور صلاح الدین ایوبی نے اگرچہ اندرون ملک اور فلسطین سے صلیبیوں کو نکال دیا تھا لیکن ساحلی شہروں پر ان کا اقتدار عرصے تک قائم رہا۔ ان کو بحری راستے سے یورپ سے برابر مدد پہنچتی رہتی تھی۔ یہ حکومتیں مصر و شام کے خلاف منگولوں سے اتحاد کرلیتی تھیں اور مسلمان چکی کے دو پاٹوں کے درمیان دب گئے تھے۔

اس نے عین جالوت میں منگولوں کے ساتھ اتحاد کرنے کی کوشش کرنے پر 1268ء میں عیسائی سلطنت انطاکیہ کا خاتمہ کیا۔ انطاکیہ کی سلطنت کا خاتمہ 1271ء میں نویں صلیبی جنگ کا باعث بنا جس کی قیادت انگلستان کے شاہ ایڈورڈ نے کی تاہم وہ بیبرس سے کوئی بھی علاقہ چھیننے میں ناکام رہے۔

اس نے صلیبیوں کو دیگر کئی جنگوں میں بھی شکست دی۔

سلطنت میں توسیع[ترمیم]

بیبرس نے اپنی سلطنت کو جنوب میں سوڈان کی طرف بھی وسعت دی اور نوبہ کا علاقہ بھی فتح کرلیا جو ایوبی سلاطین کے زمانے سے مصر کی حکومت میں شامل کرلیا گیا تھا۔ اپنی ان فتوحات اور کارناموں کی وجہ سے بیبرس کا نام مصر و شام میں صلاح الدین کی طرح مشہور ھۓ. وہ نہ صرف مصری عوام بلکہ تمام عالم اسلام کا بڑا مقبول ہیرو ہے۔

سیرت و کارنامے[ترمیم]

بیبرس صرف ایک فاتح نہیں تھا بلکہ سمجھدار اور عادل حکمران بھی تھا۔ اس کے دور حکومت میں کئی اہم کام انجام دیئے گئے۔ ان میں سے ایک خلافت کے سلسلے کی بحالی ہے۔ سقوط بغداد اور خلیفہ مستعصم باللہ کی شہادت کے بعد اسلامی دنیا تین سال تک بغیر خلافت کے رہی۔ اتفاق سے ظاہر باللہ عباسی کا ایک لڑکا ابو القاسم احمد منگولوں کی قید سے چھوٹ کر 1262ء میں مصر آگیا۔ بیبرس اس کو عزت و احترام کے ساتھ قاہرہ لایا اور اس زمانے کے مشہور عالم عزیز الدین عبدالسلام کی موجودگی میں اس کے ہاتھ پر خلافت کی بیعت کی اور مصر میں اس کے نام کا خطبہ اور سکہ جاری کیا۔ اس طرح عباسی خلافت اب بغداد سے قاہرہ منتقل ہوگئی۔ اگرچہ مصر کے یہ عباسی خلیفہ صرف نام کے ہوتے تھے اور اصل میں اقتدار مملوک بادشاہوں کے پاس ہوتا تھا لیکن اس طرح کم از کم ایک اسلامی شعار کو زندہ رکھنے کی کوشش کی گئی۔

بیبرس اسلامی تعلیمات کا خود بھی پابند تھا اور اپنی سلطنت میں اس نے اسلامی احکام پر عمل کرانے کی بھی پوری کوشش کی۔ اس کے عہد میں عدالت میں بڑے سے بڑے آدمی پر مقدمہ چلایا جاسکتا تھا۔ کئی مرتبہ خود بیبرس پر بھی لوگوں نے مقدمات دائر کئے اور اس کو عدالت میں آنا پڑا۔ بیبرس نے شراب بنانے اور اس کی خرید و فروخت پر بھی پابندی لگادی تھی۔ حج سے پہلے مصر سے غلاف کعبہ کو مکہ معظمہ سے لے جانے کی رسم کا آغاز بھی بیبرس کے زمانے میں ہی ہوا۔ وہ پہلا حکمران ہے جس نے چاروں فقہات مالکی، حنفی، شافعی اور حنبلی کو سرکاری طور پر تسلیم کیا اور مصر و شام میں چاروں فقہ سے تعلق رکھنے والے قاضیوں کا تقرر کیا۔ اس سے پہلے صرف شافعی قاضی مقرر کئے جاتے تھے کیونکہ مصر میں اکثریت فقہ شافعی پر عمل کرنے والوں کی ہے۔

بیبرس نے رفاہ عامہ کے کام بھی کئے۔ نہریں، پل اور مدرسے تعمیر کرائے۔ وہ اپنے تعمیر کئے ہوئے ظاہریہ کتب خانہ (دمشق) کے احاطے میں دفن ہے۔

اس کی سوانح حیات "سیرت السلطان بیبرس" نامی کتاب میں درج ہے۔ وہ صلاح الدین ایوبی کی جنگی کامیابیوں سے بہت متاثر تھا اور اس کے کارناموں کو دہرانا چاہتا تھا۔

متعلقہ مضامین[ترمیم]

جنگ عین جالوت

صلیبی جنگیں

مملوک سلطنت

بیرونی روابط[ترمیم]

مدرسہ ظاہریہ اور بیبرس کا مزار]

بیبرس پر تفصیلی مضمون، انگریزی زبان