راؤ سکندر اقبال

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

راؤ سکندر اقبال پاکستانی سیاستدان، سابق وزیر دفاع ، سابق وفاقی وزیر خوراک و زراعت، وزیر کھیل و سیاحت، 1942ء میں پیدا ہوئے۔ پاکستان پیپلز پارٹی کے بانی ارکان میں سے ایک تھے۔ انہیں فوجی آمریت کے دوران ایم آر ڈی تحریک میں سر گرم رہنے پر کئی مرتبہ جیل بھی کاٹننی پڑی۔ بینظیر بھٹو کے پہلے دور حکومت میں وفاقی وزیر خوراک اور زراعت رہے جبکہ 1993ء میں دوبارہ بے نظیر بھٹو کی کابینہ کے رکن بنے اور انہیں کھیل اور سیاحت کی وزارت کا قلمدان دیا گیا۔

دور مشرف[ترمیم]

سنہ دو ہزار دو میں جنرل پرویز مشرف کے دور حکومت میں انہوں نے پیپلز پارٹی کو چھوڑ کر پیپلز پارٹی پیٹریاٹ کے نام سے اپنا ایک گروپ تشکیل دیا اور پھر اسے مسلم لیگ ق میں ضم کردیا۔ 2002ء کے انتخابات میں پیپلز پارٹی کی ٹکٹ پر کامیاب ہوکر رکن قومی اسمبلی بنے لیکن پھر انہوں فیصل صالح حیات اور دیگر ساتھیوں کے ساتھ مل کر قومی اسمبلی میں فاروڈر بلاک بنایا اور مسلم لیگ ق کو وہ مطلوبہ ارکان کی تعداد فراہم کی جو حکومت کی تشکیل کے لیے درکار تھی۔ راؤ سکندر اقبال سابق فوجی صدر جنرل پرویز مشرف کے دور اقتدار کے دوران ہزار دو سے دو ہزار سات تک وزیردفاع رہے۔ راؤ سکندر اقبال ’پیپلز پارٹی پیٹریاٹ‘ اور ’پاکستان پیپلز پارٹی (شیرپاؤ)‘ کے ادغام کے بعد وجود میں آنے والی پیپلز پارٹی کے چیئرمین جبکہ آفتاب احمد خان شیر پاؤ اس کے صدر بن گئے۔


مسلم لیگ ق[ترمیم]

مرحوم نے بعد میں اپنی جماعت کو مسلم لیگ ق میں ضم کردیا اور خود بھی اس میں شامل ہوگئے۔2008ء میں ہونے والے عام انتخابات میں راؤ سکندر اقبال نے اپنے آبائی علاقے اوکاڑہ سے مسلم لیگ قاف کے ٹکٹ پر حصہ لیا لیکن وہ کامیاب نہ ہوسکے۔

انتقال[ترمیم]

طویل عرصے تک گردے کے عارضے میں مبتلا رہنے کے بعد 29 ستمبر 2010 کو اوکاڑہ میں ان کا انتقال ہوا۔