ریاستہائے متحدہ امریکہ پیٹرائٹ قانون

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

پیٹرائٹ قانون ریاست متحدہ ہائے امریکہ کی کانگریس کا منظور کیا ہوا قانون ہے جسے صدر جارج بش نے 26 اکتوبر 2011ء کو منظور کیا۔ لفظ پیٹرائٹ اصل میں ان الفاظ کا

PATRIOT= Providing Appropriate Tools Required to Intercept and Obstruct Terrorism

ترخیمہ ہے، مگر اگثر عامی اسے حُب وطن کے معنی میں سمجھتے ہیں۔ اس قانون کا مقصد امریکی حکومت کو رعایا پر جاسوسی کرنے کے وسیع اختیارات دینا ہے، جس میں پولیس اور ریاست کو لوگوں کی نجی مواصلاتی، ہاتف، برقی خط گفتگو کو سننا اور تلاش کرنا، مالیاتی اور طبی وثائق تک رسائی، مالیاتی لین دین پر اختیار، اور لوگوں کو بآسانی گرفتار کرنا شامل ہیں۔ سرکار اس قانون کے دائرہ کو بہت وسیع سمجھتی ہے بنسبت عامیوں کی سمجھ میں اس کے دائرہ عمل کے۔[1] اس کالے قانون کے کچھ حصے مستقل ہیں، اور کچھ کی تجدید چند سال بعد امریکی کانگریس کو کرنا ہوتی ہے۔ [2]