سراندیبی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
مصور بیٹھے ہوئے پرندے کی تصویر کھینچ رہا تھا۔ بعد میں اس نے "سراندیبی" دریافت کیا کہ ایک ہد ہد پیچھے اُڑتا ہؤا تصویر میں آ گیا ہے جب بعد میں اس نے تصویر بنا کر دیکھا۔

سراندیب سری لنکا کا پرانا نام ہے جو عربوں میں رائج تھا۔ مشہور فارسی لوک کہانی "سراندیب کے تین شہزادے" مقبول ہوئی تو یہ لفظ فرانسیسی اور انگریزی میں آیا۔ انگریزی میں یہ اب "serendipity" کہلاتا ہے، اور اس سے مراد اتفاقا اور خوش قسمتی سے کچھ دریافت کرنا ہے جبکہ تلاش کسی بالکل مختلف چیز کی ہو۔ ہوریس والپول نے 1754ء میں یہ لفظ انگریزی میں مقبول کیا، وہ اپنے خط میں لکھتا ہے:

ایک دفعہ میں نے بدھو پری کہانی پڑھی بنام "سراندیب کے تین شہزادے":جب یہ عزت مآب سفر کرتے تو ہمیشہ دوران سفر نئی دریافتیں کرتی جاتے، حادثہ تاً اور دانشمندانہ، ان چیزوں کی جن کی ان کو تلاش نہیں تھی: مثلاً ان میں سے ایک کو پتہ چلا کہ ایک اونٹ جو دائیں آنکھ سے کانا تھا، حالیہ دنوں میں ایک راہ پر چلتا رہا ہے کیونکہ گھاس بائیں طرف زیادہ کھایا ہؤا تھا اور دائیں طرف کی نسبت بری حالت میں تھا-- اب تمہیں "سراندیبی" کا معنی پتہ چلا؟ ...........

سائنس اور طرزیات میں کردار[ترمیم]

سراندیبی میں کلیدی کردار "دانشمندی" کا ہے جس کی مدد سے بے ضرر حقائق کا ربط سمجھ کر مفید نتائج اخذ کیے جاتے ہیں۔ اگرچہ کچھ سائنسدان اور موجد حادثاتی دریافتوں کا ذکر نہیں کرتے، دوسرے کھلے عام اس کا اعتراف کرتے ہیں: اصل میں سراندیبی سائنسی دریافتوں اور ایجادوں کا بڑا جُز ہے۔ یہ یاد رہنا چاہیے کہ سرندیبی دریافتیں سائنسی ترقی میں خاصی اہمیت کی حامل ہیں اور اکثر اوقات ادراک میں اہم چھلانگ کی بنیاد بنتی ہیں۔ مختلف سائنسی شعبہ جات میں سرندیبی دریافتوں کا حصہ بہت زیادہ تفاوت ہے۔ علم الادویہ اور کیمیاء میں سراندیبی غالباً زیادہ عام ہے۔

سائنس اور طرزیات میں مثالیں[ترمیم]

علم الادویہ[ترمیم]

علم الفلکیات[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ آرس تکنیکا، 31 دسمبر 2009ء، "The key to astronomy has often been serendipity"