سلطان حیدر علی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
سلطان حیدر علی

دورحکومت 1722ءتا 1784ء

حیدر علی
ಹೈದರ್ ಅಲಿ
سلطنت میسور کے سلطان
"Hyder Ali," a steel engraving from the 1790's (with modern hand coloring).jpg
A steel engraving from the 1790s, with modern hand colouring
عہد حکومت 1761–1782
پورا نام Shams ul-Mulk, Amir ud-Daula, Nawab Hyder 'Ali Khan Bahadur
پیشرو Krishnaraja Wodeyar II
جانشین ٹیپو سلطان
شاہی گھرانہ سلطنت میسور کے سلطان
والد Fath Muhammad
مذہب اسلام

حیدر علی خان Hyder Ali Khan (کناڈا: ಹೈದರ್ ಅಲಿ; ہندی زبان: हैदर अली ; 1721 – 7 دسمبر 1782) جنوبی ہند دکن کی سلطنت میسور کے سلطان تھے۔ ان کا نام حیدر نائک تھا۔ والئی میسور ۔ نسلا افغان تھے۔ ان کے پردادا گلبرگہ دکن میں آکر آباد ہوگئے تھے۔ والد فتح محمد ریاست میسور میں فوجدار تھے۔ حیدر علی پانچ برس کے ہوئے تو والد ایک لڑائی میں مارے گئے۔ ان کے چچا نے انھیں فنون سپہ گری سکھائے ۔ 1752ء میں حیدر علی نے راجا میسور کی ملازمت کر لی اور بڑی بہادری سے مرہٹوں کے حملوں سے ریاست کو بچایا۔ 1755ء میں راجا نے انھیں اپنی فوج کا سپہ سالار بنا دیا۔ میسور کی بدانتظامی اور راجا کی نااہلی کے سبب بالآخر حیدر علی نے 1766ء میں راجا کو وظیفہ مقرر کرکے حکومت کی باگ ڈور اپنے ہاتھ میں لے لی۔ حیدر علی کی تخت نشینی کے وقت ریاست میسور میں صرف 33 گاؤں تھ۔ مگر انھوں نے تھوڑے ہی عرصے میں اسی ہزار مربع میل علاقے میں اپنی حکومت قائم کر لی۔ انگریزوں کے خلاف سلطان حیدر علی نے دو جنگیں لڑیں۔ پہلی جنگ میسور 1766ء تا 1769ء میں حیدر علی نے مدارس کی دیواروں کے نیچے پہنچ کر انگریزوں کو صلح پر مجبور کر دیا۔ دوسری جنگ میسور 1780ء تا 1784ء میں انھوں نے کرنل بیلی اور میجر منرو کو فیصلہ کن شکستیں دیں۔ اسی جنگ کے دوران دسمبر 1784ء میں سلطان نے بعارضہ سرطان وفات پائی۔

سلطان حیدر علی ان پڑھ تھے مگر بڑے بیدار مغز حکمران تھے۔ وہ پانچ مکتلف زبانوں میں بات چیت کرسکتے تھے۔ ان کی قوت حافظہ بہت تیز تھی۔ وہ بیک وقت کئی احکامات جاری کرتے اور لکھواتے وقت ہر حکم کی عبارت میں تسلسل قائم رکھتے اور پیچیدہ گھتیوں کو فوراً حل کر لیتے تھے۔ شخصی خوبیوں کو بھانپنے میں انھیں کمال حاصل تھا۔ ان میں تعصب نام کو بھی نہ تھا۔ ہر مذہب اور ہر فرقے کے لوگوں سے یکساں سلوک کرتے اور عدل و انصاف کے تقاضوں کو پورا کرنے میں کسی سے رعایت نہ کرتے تھے۔ ان کی عقابی نگاہوں نے مغل سلطنت کے زوال ، ہندوستان کی طوائف الملوکی اور ایسٹ انڈیا کمپنی کے استعماری منصوبوں کو بھانپ لیا اور ہندوستان کی جدوجہد آزادی کی داغ بیل ڈالی۔ آپ کی وفات کی کے بعد آپ کے فرزند ٹیپو سلطان تخت میسور پر بیٹھے۔

مزید دیکھئے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]