سلطان راہی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
سلطان راہی
پیدائش سلطان محمد
1938
اتر پردیش، برطانوی راج
وفات 9 جنوی 1996 (عمر 57)
گوجرانوالہ، پاکستان
پیشہ اداکار
سالہائے فعالیت 1959–1996

سلطان محمد یا 'سلطان راہی' (1938- 1996) ایک بہت مقبول پاکستانی فلمی اداکار تھے۔ انہوں نے زیادہ تر پنجابی فلموں میں نمایاں اداکاری کی۔انہوں نے 700 سے زیادہ پنجابی اور اردو فلمون میں کام کیا اور گنیز ورلڈ ریکارڈز کی کتاب میں ان کا نام آتا ہے۔


معلومات زندگی[ترمیم]

سلطان راہی اتر پردیش، برطانوی راج میں پیدا ہوئے۔ وہ زیادہ تر پنجاب، پاکستان اور بھارتی سکھوں میں مشہور تھے۔ ان کی زیادہ مشہور فلموں میں مولا جٹ، شیر خان، چن وریام، کالے چور اور گاڈ فادر شامل ہیں۔ وہ 58 برس کی عمر میں گوجرانوالہ میں قتل کر دئیے گئے۔


پیشہ ورانہ خدمات[ترمیم]

1959ء میں سلطان راہی کو اضافی اداکار کے طور پر کام ملا، 1960ء کی دہائی تک ان کو کوئی خاطر خواہ کامیابی نہ ملی لیکن 1972ء میں انہیں ایک بہت بڑی کامیابی ملی جب ان کی تین فلموں کی ڈائمنڈ جوبلی منائی گئی۔ سلطان راہی نے مسعود رانا اور یونس ملک جیسے ہدایتکاروں کے ساتھ زیادہ کام کیا۔ انہوں نے 700 سے زائد اردو اور پنجابی فلموں میں کام کیا۔

قتل[ترمیم]

سلطان راہی نے 9 جنوری 1996ء تک پاکستانی فلمی صنعت پر چھائے رہے۔ انہیں جی ٹی روڈ پر گولی مار دی گئی اور وہ فوت ہو گئے۔ ان کے قاتل آج تک نہیں مل سکے۔

چند مشہور فلمیں[ترمیم]

سال فلم کردار تفصیل
1971 دل اور دنیا
1972 خان چاچا
سلطان
بشیرا
1973 بنارسی ٹھگ
زرق خان
مغلز کشمیری
1974 دل لگی
الٹی میٹم
راستے کا پتھر
سدھا رستہ
1975 دادا
وحشی جٹ
شریف بدمعاش
1976 طوفان
جگا گجر
1977 لاہوری بادشاہ
قانون
جیرا سائیں
1978 رنگا ڈاکو
1979 جٹ سورما
مولا جٹ
گوگا شیر
وحشی گجر
1980 بہرام ڈاکو
بائیکاٹ
ہٹلر
1981 انوکھا داج
شیر میدان دا
ملے گا ظلم دا بدلہ
جی دار
جٹ ان لندن
وریام
اتھرا پتر
شیر خان
سالا صاحب
چن وریام
1982 دو بگھا زمین
مفت پر
رستم
1983 راکا
لاوارث
دارا بلوچ
رستم خان
مراد خان
شان
بگھی شیر
1984 کالیا
شعلے
قاتل حسینہ
جابر خان
1985 قسمت
عجب خان
جگا
1986 قیدی
قیمت
1987 سنگل
اللہ رکھا
دلاری
بادل
ناچے ناگن
1988 مولا بخش
مفرور
حسینہ 420
روٹی
1989 حکومت
سپر گرل
کالکا
بلاول
سلطانہ
ڈکیٹ
رنگیلے جاسوس
مجرم
خدا بخش
1990 سیرن
شیر دل
1991 شیر دل
کالے چور
چراغ بالی
بدمعاش ٹھگ
قاتل قیدی
1992 ماجھو
1994 بالا پیرے دا
1996 سخی بادشاہ

بیرونی روابط[ترمیم]