شيخ عبدالقادر جيلانی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
سیدناغوثِ اعظم کا مزارِ اقدس
Ghawtheazamgp9.jpg
نام شیخ سیدناعبدالقادرجیلانی
لقب غوثِ اعظم
تاریخ ِ پیدائش 470ہجری
تاریخ ِ وصال 561ہجری
وجہءشہرت بانی سلسلہ ءقادریہ
مزارِ اقدس بغدادعراق

شیخ عبدالقادرجیلانی(470تا561ہجری)(جنہیں حضور سیدنا عبدالقادرجیلانی رضی اللہ تعالٰیٰ عنہ،شیخ عبدالقادرجیلانی رضی اللہ تعالٰیٰ عنہ اورحضرت شیخ سیدناعبدالقادرجیلانی الگیلانی رضی اللہ تعالٰیٰ عنہ کے ناموںسے بھی جاناجاتاہے)(1077-1166)جوکہ سُنّی حنبلی طریقہ کے نہایت اہم صوفی شیخ اور سلسلہ قادریہ کے بانی ہیں۔آپ کی پیدائش رمضان کے درمیان 1077عیسوی میں فارس کے صوبہ گیلان(ایران) ، وہ گیلان، 40 کلومیٹر جنوبی بغداد [1] کے تاریخی شہروں کے قریب عراقی گاؤں میں پیدا کیا گیا تھا کہا جاتا ہے کہ جس Trgehh تاریخی مطالعہ اور جدید خاندان Alkilanih بغداد کو اپنانے میں ہوئی۔جس کو کیلان بھی کہا جاتاہے اوراسی لئے آپ کا ایک اورنام شیخ عبدالقادر کیلانی بھی ماخوذہے۔ شیخ عبدالقادرجیلانی کاتعلق جنید بغدادی کے روحانی سلسلے سے ملتاہے۔شیخ عبدالقادرجیلانی کی خدمات و افکارکی وجہ سے شیخ عبدالقادرجیلانی کو مسلم دنیامیں غوثِ اعظم دستگیر کاخطاب دیاگیاہے۔

اکابرینِ اسلام کی عبدالقادر جیلانی کے لئے چند پیشن گوئیاں

1۔شیخ عبدالقادرجیلانی کی ولادت سے چھ سال قبل حضرت شیخ ابواحمد عبداللہ بن علی بن موسیٰ نے فرمایاکہ میں گواہی دیتاہوں کہ عنقریب ایک ایسی ہستی آنے والی ہے کہ جس کا فرمان ہوگا کہ

قدمی ھذا علی رقبۃ کل ولی اللہ
کہ میرا قدم تمام اولیاءاللہ کی گردن پر ہے۔ [2]

[حوالہ درکار]

حضرت شیخ عقیل سنجی رضی اللہ عنہ سے پوچھا گیا کہ اس زمانے کے قطب کون ہیں؟ فرمایا، اس زمانے کا قطب مدینہ منورہ میں پوشیدہ ہے۔ سوائے اولیاءاللہ کے اُسے کوئی نہیں جانتا۔ پھر عراق کی طرف اشارہ کرکے فرمایاکہ اس طرف نوجوان عجمی ظاہر ہوگا۔ وہ بغداد میں وعظ کہے گا۔ اس کی کرامتوں کو ہر خاص و عام جان لے گااور وہ فرمائیگا کہ

قدمی ھذا علی رقبۃ کل ولی اللہ
کہ میرا قدم تمام اولیاءاللہ کی گردن پر ہے۔ [2]

سالک السالکین میں ہے کہ جب عبدالقادر جیلانی کو مرتبہء غوثیت و مقام محبوبیت سے نوازا گیا توایک دن جمعہ کی نماز میں خطبہ دیتے وقت اچانک آپ پر استغراقی کیفیت طاری ہو گئی اوراسی وقت زبانِ فیض سے یہ کلمات جاری ہوئے

قدمی ھذا علی رقبۃ کل ولی اللہ
کہ میرا قدم تمام اولیاءاللہ کی گردن پر ہے۔

معاًمنادیءغیب نے تمام عالم میں ندا کردی کہ جمیع اولیاءاللہ اطاعتِ غوثِ پاک کریں۔ یہ سنتے ہی جملہ اولیاء اللہ جو زندہ تھے یا پردہ کرچکے تھے سب نے گردنیں جھکادیں۔ (تلخیض بہجتہ الاسرار) [2] [حوالہ درکار]

حالاتِ زندگی

ایامِ طفولیت

تمام علماءواولیاء اس بات پر متفق ہیں کہ سیدناعبدالقادرجیلانی مادرزاد یعنی پیدائشی ولی ہیں۔ آپ کی یہ کرامت بہت مشہور ہے کہ آپ ماہِ رمضان المبارک میں طلوعِ فجر سے غروبِ آفتاب تک کبھی بھی دودھ نہیں پیتے تھے اور یہ بات گیلان میں بہت مشہور تھی۔

ولد للاشراف ولد لایرضع فی رمضان
یعنی سادات کے گھر انے میں ایک بچہ پیدا ہوا ہے جو رمضان میں دن بھر دودھ نہیں پیتا۔[3]

کھیل کود سے لاتعلقی

بچپن میں عام طور سے بچے کھیل کود کے شوقین ہوتے ہیں لیکن آپ بچپن ہی سے لہو ولہب سے دور رہے۔ آپ کا ارشاد ہے کہ

کلما ھممت ان العب مع الصبیان اسمع قائلا یقول الی یا مبارک
ترجمہ: یعنی جب بھی میں بچوں کے ساتھ کھیلنے کا ارادہ کرتا تو میں سنتا تھا کہ کوئی کہنے والا مجھ سے کہتا تھااے برکت والے، میری طرف آجا۔ [4]

ولایت کا علم

ایک مرتبہ بعض لوگوں نے سید عبدالقادرجیلانی سے پوچھا کہ آپ کو ولایت کا علم کب ہوا؟ تو آپ نے جواب دیا کہ دس برس کی عمر میں جب میں مکتب میں پڑھنے کے لئے جاتا تو ایک غیبی آواز آیا کرتی تھی جس کو تمام اہلِ مکتب بھی سُنا کرتے تھے کہ

افسحوالولی اللہ
ترجمہ: اللہ کے ولی کے لئے جگہ کشادہ کردو۔[5]

پرورش وتحصیلِ علم

آپ کے والد کے انتقال کے بعد ،آپ کی پرورش آپ کی والدہ اور آپ کے نانانے کی۔ شیخ عبدالقادرجیلانی کاشجرہ ءنسب والد کی طرف سے حضرت امام حسن علیہ السلام اوروالدہ کی طرف سے حضرت امام حسین علیہ السلام سے ملتاہے اوریوںآپ کاشجرہ ءنسب حضرت محمدصلی اللہ علیہ و آلہ وسلم سے جاملتاہے۔اٹھارہ ( 18)سال کی عمر میں شیخ عبدالقادرجیلانی تحصیل ِ علم کے لئے بغداد(1095)تشریف لے گئے۔جہاں آپ نے فقہ کا علم ابوسیدعلی مخرمی ،حدیث کا علم ابوبکر بن مظفراورتفسیرکے لئے ابومحمدجعفرجیسے اساتذہ میسرآئے۔ [6].

ریاضت و مجاہدات

تحصیل ِ علم کے بعد شیخ عبدالقادرجیلانی بغدادشہر کوچھوڑااورعراق صحراؤںاورجنگلوںمیں 25سال تک سخت عبادت وریاضت کی[7]۔1127میں آپ نے اللہ کے حکم پر دوبارہ بغدادمیں سکونت اختیارکی اوردرس و تدریس کا سلسلہ شروع کیا۔ جلد ہی آپ کی شہرت و نیک نامی بغداداورپھردوردورتک پھیل گئی۔ 40سال تک آپ نے اسلا م کی تبلیغی سرگرمیوںمیں بھرپورحصہ لیانتیجتاًہزاروںلوگ مشرف بہ اسلام ہوئے ۔اس سلسلہ تبلیغ کو مزید وسیع کرنے کے لئے دوردرازوفودکوبھیجنے کا سلسلہ شروع کیا۔ خودشیخ عبدالقادرجیلانی نے تبلیغِ اسلام کے لئے دوردرازکاسفرکیااوربرِ صغیرتک تشریف لائے اورملتان(پاکستان)میں قیام پذیرہوئے ۔

حلیہ

جسم نحیف قد متوسط، رنگ گندمی، آواز بلند، سینہ کشادہ، ڈاڑھی لمبی چوڑی، چہرہ خوبصورت، سر بڑا، بھنوئیں ملی ہوئی۔ [8]

فرموداتِ غوثِ اعظم

  1. اے انسان، اگر تجھے محد سے لے کر لحد تک کی زندگی دی جائے اور تجھ سے کہا جائے کہ اپنی محنت، عبادت و ریاضت سے اس دل میں اللہ کا نام بسالے تو ربِ تعالٰیٰ کی عزت و جلال کی قسم یہ ممکن نہیں، اُس وقت تک کہ جب تک تجھے اللہ کے کسی کامل بندے کی نسبت وصحبت مئیسر نہ آجائے۔ [9]
  2. اہلِ دل کی صحبت اختیار کر تاکہ تو بھی صاحبِ دل ہو جائے۔
  3. میرا مرید وہ ہے جو اللہ کا ذاکر ہے اور ذاکر میں اُس کو مانتا ہوں، جس کا دل اللہ کا ذکر کرے۔

القاباتِ غوثِ اعظم

  1. غوثِ اعظم
  2. پیران ِ پیردستگیر
  3. محی الدین
  4. شیخ الشیوخ
  5. سلطان الاولیاء
  6. سردارِ اولیاء
  7. قطب ِ ربانی
  8. محبوبِ سبحانی
  9. قندیل ِ لامکانی
  10. میراں محی الدین
  11. امام الاولیاء

علمی خدمات

شیخ عبدالقادرجیلانی نے طالبین ِ حق کے لئے گرانقدرکتابیں تحریرکیں، ان میں سے کچھ کے نام درج ذیل ہیں:

  1. غنیة الطالبین
  2. الفتح الربانی والفیض ِ رحمانی
  3. ملفوظات
  4. فتح الغیوب
  5. جلاءالخاطر
  6. وردالشیخ عبدالقادرالجیلانی
  7. بہجة الاسرار
  8. الحدیقة المصطفویہ
  9. الرسالة الغوثیہ
  10. آدابِ سلوک و التوصل الی ٰ منازل ِ سلوک

وصال

شیخ عبدالقادرجیلانی کاانتقال1166کوہفتہ کی شب (8ربیع الاوّل561ہجری )کونواسی(89)سال کی عمر میں ہوااورآپ کی تدفین ،آپ کے مدرسے کے احاطے میں ہوئی[10][11]۔

حوالہ جات

  1. ^ * كتاب جغرافية الباز الاشهب (نسخه الكترونيه من الكتاب).
  2. ^ 2.0 2.1 2.2 اکابرینِ اسلام کی عبدالقادر جیلانی کے لئے پیشن گوئیاں
  3. ^ قلائد والجواہر، ص: 3 
  4. ^ بہجتہ الاسرار، ص: 3 
  5. ^ قلائد والجواہر، ص: 9 
  6. ^ * كتاب بهجة الاسرار ومعدن الانوار للشطنوفي تحقيق د.جمال الكيلاني ، ص76. {طبعة محققة الكترونية من الكتاب}
  7. ^ ابدالِ حق، , اکبر, p.11
  8. ^ حضورغوث اعظم کا حلیہ مبارک
  9. ^ بہجتہ الاسرار، ص: 7 
  10. ^ ماجدعرسان ِ کیلانی ،نشاطِ طریقة القادریہ
  11. ^ سیدناغوثِ اعظم کا مزارِ اقدس (PDF)
Incomplete-document-purple.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کرکے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔