صدقہ (یہودیت)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
مقالہ بہ سلسلۂ مضامین

یہودیت

Star of David.svg
Lukhot Habrit.svg  Menora.svg

تاریخ یہودیت

عقائد
خدا کی وحدانیت · ارض اسرائیل · بنی اسرائیل · صدقہ · صنوعت
عبادات اور عبادت گاہیں
مِقواہ · شول · بیت مِقداش · منیان · شاخاریت · منخا · معاریب · شماع
تہوار
شابات · روش ھاشاناہ · عشرۃ التوبہ · یوم کِپور · سکوت · سِمخات توراہ · ہنوکا · عیدپوریم · عید فسح · شاوُوت
اہم شخصیات
ابراہیم · سارہ · اسحاق · یعقوب عرف اسرائیل · بارہ قبائل · موسیٰ · سلیمان · داؤد
کتب و قوانین
تورات · زبور
مشنی ·
تلمود · ہالاخا · کاشرُوت

یہودیت میں صدقہ (عبرانی: צדקה‎؛ عربی: صدقة؛ انگریزی: Tzedakah) کا تصور اسلامی صدقہ سے فرق ہےـ ہر یہودی پر فرض ہے کہ وہ غریبوں کو خیرات دیں اور قوم کی بہتری کے لیے کام کریں ـ عبرانی لفظ کا تعلق عدل و انصاف سے ہے اور صدقہ دینا انصاف کرنے کے برابر ہے۔ صدقہ کا حکم ہر یہودی پر ہے خواہ وہ امیر ہو یا غریب۔


تورات کے احکامات کے مطابق[ترمیم]

تورات ک جز التثنية میں حکم ہے:

جو زمیں تمہارے رب نے تمہیں عطا کی ہے، اس کے کسی بھی شہر میں اگر تمہارے بیچ موجود کوئی غریب آدمی ہے، تو اس سے اپنا دل سخت نہ کرو اور اپنا ہاتھ بند نہ کرو، بلکہ اپنا ہاتھ کھولو اور اس کو جو ضرورت ہو وہ ادھار دے دو۔ ( التثنية 15: 7-8)


علما کی وضاحت[ترمیم]

بارہویں صدی کے یہودی عالم اور فلسفی موسی بن میمون کے مطابق صدقہ کی آٹھ درجات ہیں ـ[1]

  1. دل برا کر کہ دینا
  2. خوشی سے دینا مگر کم دینا
  3. مناسب دینا مگر کسی کے مانگنے کے بعد دینا
  4. کسی کے مانگنے سے پہلے دے دینا
  5. دینا مگر دینے والے کو ظاہر نہ ہو کہ کس کو دیا گیا ہے
  6. دینا مگر ملنے والے کو ظاہر نہ ہو کہ کس نے دیا ہے
  7. ایسے دینا کہ نہ دینے والے نہ ملنے والے کو پتا لگے کہ کس نے کس کو دیا
  8. کسی کو کام دینا تاکہ وہ خود کما سکے


نگار خانہ[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ torah.org