ضلع عمرکوٹ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
ضلع  عمرکوٹ
عمرڪوٽ
عمومی معلومات
ملک Flag of Pakistan.svg پاکستان
صدر مقام عمرکوٹ
صوبہ سندھ 
رقبہ 5608 مربع کلومیٹر
آبادی 663،100 بمطابق 1998ء
زبانیں سندھی،
منطقۂ وقت متناسق عالمی وقت +5
ناظم مگھن [1]
نائب ناظم ہمیر سنگھ
تحصیل
عمرکوٹ
کنری
سامارو
پتھورو


صوبہ سندھ کے نقشے میں ضلع عمرکوٹ محل وقوع

ضلع عمرکوٹ پاکستان کے صوبہ سندھ کا ایک ضلع ہے۔

آخری قومی مردم شماری 1998ء کے مطابق ضلع کی کل آبادی 663،100 ہے۔ ضلع کا کل رقبہ 5608 مربع کلومیٹر ہے۔

نام[ترمیم]

اس کے نام کے حوالے سے دو آراء ہیں، چند ماہرین سومرو بادشاہ عمر سومرو کے نام سے موسوم سمجھتے ہیں جبکہ چند کا کہنا ہے کہ یہ رانا امر سنگھ کے نام پر امرکوٹ تھا جو بعد ازاں بدل کر عمرکوٹ بن گیا۔

تاریخ[ترمیم]

صحرائے تھر میں واقع یہ علاقہ تاریخی اہمیت کا حامل ہے۔ جب شیر شاہ سوری نے مغلیہ سلطنت کے دوسرے فرمانروا ہمایوں کو شکست دے کر تخت چھین لیا تو ایران جاتے ہوئے عمرکوٹ میں قیام کے دوران جلال الدین اکبر پیدا ہوا جو بعد ازاں اکبر اعظم کہلایا۔ موجودہ عمرکوٹ قصبہ کے مغرب میں اکبر کے مقام پیدائش پر ایک یادگار بھی نصب ہے۔ علاوہ ازیں یہاں کا مشہور قدیم قلعہ قلعہ عمرکوٹ بھی سیاحوں کے لیے پرکشش حیثیت رکھتا ہے خصوصا یہاں سے منسوب عمر اور ماروی کی قدیم داستان قومی سطح پر شہرت رکھتی ہے۔

محل وقوع[ترمیم]

ضلع عمرکوٹ مشرقی سندھ میں بھارت کی سرحد کے قریب واقع ہے اور اس کے بیشتر علاقے پر صحرائے تھر پھیلا ہوا ہے۔ عمرکوٹ کے شمال میں ضلع سانگھڑ واقع ہے جبکہ شمال مشرق میں اس کی کچھ سرحد بھارت سے لگتی ہے۔ جنوب مشرق اور جنوب میں ضلع تھرپارکر جبکہ مغرب میں ضلع میرپور خاص واقع ہے۔

انتظامی تقسیم[ترمیم]

ضلع انتظامی طور پر چار تحصیلوں (تعلقوں) میں تقسیم ہے:

یہ چاروں تحصیلیں مزید 27 انتظامی اکائی یونین کونسلوں میں تقسیم ہیں۔

اہم شخصیات[ترمیم]

یہاں کی اہم سیاسی شخصیات میں خانصاحب عبدالکریم پلی اور 1993ء سے 1996ء تک پاکستان پیپلز پارٹی کے دور حکومت میں وفاقی وزیر خوراک و زراعت اور جماعت کی سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کے موجودہ رکن یوسف ٹالپر اور 6 مارچ 1992ء سے 19 جولائی 1993ء تک سندھ کے وزیر اعلی رہنے والے سید مظفر حسین شاہ اہم ہیں۔ مظفر حسین شاہ کا تعلق فنکشنل لیگ سے ہے۔ وزارت اعلی کے علاوہ آپ مختلف ادوار میں متعدد اہم عہدوں پر فائز رہے ہیں۔ اور حاجی محمد بقا پلی صاحب ہیں

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ قومی تعمیر نو بیورو ضلع ناظمین کی فہرست - سندھ


بیرونی روابط[ترمیم]