فہمیدہ مرزا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
ڈاکٹر فہمیدہ مرزا

ڈاکٹر فہمیدہ مرزا

در منصب
19 مارچ 2008 – 3 جون 2013ء
صدر آصف علی زرداری
وزیرِ اعظم یوسف رضا گیلانی
پیشرو چوہدری امیر حسین
جانشین سردار اياز صادق

پیدائش 20 دسمبر 1956 (1956-12-20) ‏(57)
بدین, سندھ, مغربی پاکستان
سیاسی جماعت پاکستان پیپلز پارٹی
ازواج ڈاکٹر ذوالفقار مرزا
مذہب شیعہ


پاکستان

مقالہ بسلسلہ مضامین:
پاکستان کی حکومت اور سیاست



ڈاکٹر فہمیدہ مرزا (انگریزی: Dr. Fehmida Mirza) پیشے کے لحاظ سے ایک ڈاکٹر، زرعی ماہر اور کاروبار کی ماہر ہیں۔ ان کا تعلق پاکستان میں صوبہ سندھ کے شہر حیدر آباد سے ہے۔ فہمیدہ مرزا پاکستان میں پہلی خاتون ہیں جو کہ قومی اسمبلی یا ایوان زیریں کی سپیکر منتخب ہوئیں۔ ان کو اس عہدہ پر 19 مارچ 2008ء کو منتخب کیا گیا۔[1] وہ مسلم ممالک میں بھی پہلی خاتون ہیں جو اس عہدہ پر منتخب کی گئیں۔[حوالہ درکار]
وہ تین بار مسلسل عام انتخابات 1997ء، 2002ء اور 2008ء میں کامیاب ہوئیں اور بدین سندھ سے رکن قومی اسمبلی منتخب ہوئیں۔ ڈاکٹر فہمیدہ مرزا نے طب کے شعبے میں اعلٰی تعلیم 1982ء میں لیاقت میڈیکل کالج، جامشورو سندھ سے مکمل کی۔

خاندان[ترمیم]

فہمیدہ مرزا کا تعلق ایک سندھی شیعہ مسلمان سیاسی گھرانے سے ہے۔ یہ خاندان حیدر آباد کے قاضی بھی کہلاتا ہے۔ آپ کے دادا قاضی عبدالقیوم، حیدر آباد میونسپلٹی کے پہلے مسلمان صدر تھے۔ آپ کے والد قاضی عبدالمجید عابد صوبہ سندھ میں کئی وزارتوں کے سربراہ منتخب ہوئے اور وفاقی کابینہ میں بھی شامل رہے 1982ء سے 1990ء کے دوران وہ صوبائی وزیر مواصلات، وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات، وفاقی وزیر زراعت و خوراک، وفاقی وزیر تعلیم اور وفاقی وزیر پانی و بجلی کے عہدوں پر فائز رہے۔ آپ کے چچا قاضی محمد اکبر بھی صوبائی کابینہ میں بطور وزیر داخلہ شامل رہے۔ ڈاکٹر فہمیدہ مرزا ڈاکٹر زوالفقار علی مرزا جو کہ آصف علی زرداری کے قریبی دوست ہیں کی بیوی ہیں۔ آپ کے شوہر اور بھائی (قاضی اسد عابد) پاکستان کی قومی اسمبلی کے رکن رہ چکے ہیں۔ [2] آپ کے شوہر ڈاکٹر ذوالفقار علی مرزا سندھ اسمبلی کے رکن ہیں اور صوبائی وزیر داخلہ کے عہدے پر فائز ہیں۔ ڈاکٹر فہمیدہ مرزا پیر مظہر الحق کی چچی بھی ہیں جو کہ تین بارصوبہ سندھ میں صوبائی وزیر کے عہدے پر فائز رہے اور اب بھی اسمبلی کے رکن ہیں اور صوبہ سندھ کی صوبائی اسمبلی میں پاکستان پیپلز پارٹی کے پارلیمانی لیڈر ہیں۔ پیر مظہر الحق سندھی سیاسی خاندان سے تعلق رکھتے ہیں اور فہمیدہ مرزا کی والدہ کی جانب سے رشتہ دار ہیں۔ پیر مظہر الحق اس وقت سندھ کے صوبائی وزیر تعلیم ہیں اور سینیئر وزیر بھی ہیں۔

فنی سفر[ترمیم]

ڈاکٹر فہمیدہ مرزا نے لیاقت یونیورسٹی آف میڈیکل ہیلتھ سائنسز جامشورو سے اپنی تعلیم 1982ء میں مکمل کی۔ سیاست میں آنے سے پہلے آپ ایک ایڈورٹائزنگ کمپنی چلاتی رہیں جس کا نام انفو-مشین تھا، بعد میں اس کا نام تبدیل کر کے انفارمیشن کمیونیکیشن لمیٹڈ رکھ دیا گیا۔ آپ نے اپنے شوہر کے آبائی حلقے بدین سے 1997ء میں پہلی بار انتخابات میں حصہ لیا اور کامیاب قرار پائیں، اس کے بعد ہونے والے تمام عام انتخابات میں اسی حلقے سے آپ کامیاب قرار پاتی رہی ہیں۔ ڈاکٹر فہمیدہ مرزا قومی اسمبلی کی ان چند خواتین ارکان میں سے ہیں جو خواتین کی مختص نشستوں کی بجائے عام انتخابات کے زریعے کامیاب قرار پائیں۔

مکلم[ترمیم]

بطور مکلم پارلیمان فہمیدہ نے عدالت اعظمی کا فیصلہ نظرانداز کرتے ہوئے بیان دیا کہ اپنی سیاسی جماعت کے مجرم وزیراعظم گیلانی کے خلاف انتظابی کاروائی کے لیے مقدمہ انتخابی لجنہ کو بھیجنے کا سوال ہی پید نہیں ہوتا۔[3]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]

سیاسی دفاتر
پیشرو
چوہدری امیر حسین
قومی اسمبلی کے سپیکر
2002– 2008
جانشین
سردار اياز صادق