قلعہ الموت

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
قلعہ الموت
Alamut Castle
الموت

قلعہ الموت
عمومی معلومات
قلعہ
مقام الموت
قصبہ یا شہر معلم‌ کلایہ
ملک ایران
جغرافیائی متناسق نظام 36°26′40.63″N 50°35′9.58″E / 36.4446194°N 50.5859944°E / 36.4446194; 50.5859944
تکمیل 602
تباہ 1256

قلعہ الموت (Alamut Castle) (فارسی: دژ الموت) بحیرہ قزوین کے نزدیک صوبہ جیلان، ایران میں ایک پہاڑی قلعہ تھا۔ یہ موجودہ تہران، ایران سے تقریبا 100 کلومیٹر (60 میل) کے فاصلے پر ہے۔ اسماعیلی فرقے کے حسن بن صباح کی قیادت میں یہ دہشت پسند اور خفیہ جماعت حشاشین (Assassins) کا مرکز رہا۔ اس جماعت کا خاتمہ ہلاکو خان کے ہاتھوں ہوا۔ جس نے قلعہ الموت کو فتح کرکے حسن بن صباح کے آخری جانشین رکن الدین کو گرفتار کرلیا اور ہزاروں فدائیوں کو بڑی بے رحمی سے قتل کر دیا۔

الموت کے اسماعیلی حکمران[ترمیم]

  • حسن بن صباح - (1090–1124)
  • کیا بزرگ امید - (‎(1124–1138
  • محمد بزرگ امید - (‎(1138–1162
  • امام حسن علی ذکره السلام - (1162–1166)
  • امام نور الدین محمد - (1166–1210)
  • امام جلال الدین حسن - (1210–1221)
  • امام علاء الدین محمد - (1221–1255)
  • امام رکن الدین خورشاه - (1255–1256)

تصاویر[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]