لیوی سٹراؤس

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

دبیز متن

لیوی سٹراؤس

فرانس کے معروف ماہرِ بشریات ۔لیوی سٹراؤس 28 نومبر 1908ء میں برسلز میں ایک یہودی فرینچ گھرانے میں پیدا ہوئے۔ انہوں نے پیرس میں سوربون سے تعلم حاصل کی۔ انیس سو تیس کی دہائی میں برازیل کے جنگلوں میں رہنے والے قبائلیوں پر تحقیق کی تھی۔ دوسری عالمی جنگ کے بعد انہوں نے کچھ عرصہ امریکہ میں گزارا جہاں ان کی ماہر بشریات فرانز بواز سے ملاقات ہوئی جو ان کے لیے ایک اہم دوست اور دانشور ثابت ہوئے۔ فرانس واپسی کے بعد لیوی سٹراؤس نے اپنا کام جاری رکھا اور شہرت پائی۔ ان کی اہم کتابوں میں ’دی ایلیمنٹری سٹرکچرز آف کِن شِپ‘ اور ’دا سیویج مائنڈ‘ شامل ہیں۔

کارہائے نمایاں[ترمیم]

کلاؤد لیوی سٹراؤس کا بیسویں صدی کے اہم اور انتہائی با اثر دانشوروں میں شمار کیا جاتا ہے۔ انہوں نے تقریباً ساٹھ سال پہلے بشریات میں ’سٹکچرلِسزم‘ کا نظریہ بیان کیا تھا۔ اس نظریے کے تحت یہ سوچ پیش کی گئی تھی کہ ساخت کو عمل سے زیادہ اہمیت ہوتی ہے۔اس سے پہلے سٹرکچرل سوچ لسانیات کی تحقیق میں استعمال کی گئی تھی لیکن لیوی سٹراؤس نے اسے انسانی معاشروں اور رشتوں کی تحقیق میں استعمال کیا اور یوں اس کی روشنی میں معشروں کی ثقافت اور خاندانی تنظیم کا تقابلی مطالعہ کیا۔ اردو میں لیوس اسٹروس کی ساختیاتی فکر پر نقاد اور ادبی نظریہ دان احمد سہیل نے اپنی کتاب " ساختیات"،(تاریخ، نظریہ اور تنقید) میں مختلف زاویوں سے فکری بحث کی ھے۔ یہ کتاب 1999 میں دہلی سے شائع ھوئی۔

انتقال[ترمیم]

30 اکتوبر 2009ء کو سو سال کی عمر میں ان کا انتقال ہوا۔