مرجان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
wikipedia:How to read a taxoboxHow to read a taxobox
مرجان
Brain Coral, Diploria labyrinthiformis
Brain Coral, Diploria labyrinthiformis


قواعد اسم بندی
ساحہ:
domain
حقیقی المرکزیہ
مملکہ:
kingdome
حیوانات
شعبہ:
division
ریسمانیہ
جماعت:
class
گلحیوانات
Ehrenberg, 1831
طبقہ:
order
حیوان گلطبق
خاندان:
family
متعدد
جنس:
genus
متعدد
نوع:
species
متعدد
ذیلی جماعتیں

الکیوناریہ
حیوان گلتیہ

مـرجان طرح طرح کی اقسام اور رنگوں میں پائے جانے والے ایک سمندری جانور کا نام ہے جنکو انگریزی میں coral کہا جاتا ہے۔ اسکا تعلق حیوانات کی جماعت گلحیوانات (گل + حیوانات = گل نما حیوانات) سے ہے جسکو انگریزی میں Anthozoa کہا جاتا ہے (antho = گل ، zoa = حیوان) اور جانداروں کی اس حماعت کو یہ نام دینے کی وجہ کچھ یوں ہے کہ انکے جسم کے خوبصورت رنگوں کے باعث ان پر پھول (گل) ہونے کا گمان ہوتا ہے۔ حیوان گل نامی اس جماعت میں مرجان کے ساتھ ساتھ ایک اور نسبتا ملتے جلتے خوبصورت بحری جاندار بھی شامل ہیں جنکو شقائق بحری (sea anemone) کہا جاتا ہے۔

جماعت ، گلحیوانات میں شامل یہ دونوں (مرجان اور شقائق بحری) جاندار معدی دورانی (gastrovascular) ہیں کیونکہ ان میں غذا کی نالی (معدہ) ہی ہضم شدہ غذا کو پھر جسم کے تمام حصوں تک پہنچا دیتا ہے (دورانی)۔ شعبہ ریسمانیہ (Cinidaria) سے انکا تعلق ہونے کی وجہ سے انکو ریسمانی بھی کہا جاتا ہے۔

ریسمانیہ کا لفظ ریسمان سے بنا ہے جسکا مطلب ، دھاگہ ہوتا ہے۔ چونکہ ان جانداروں میں دھاگہ نما اجسام رکھنے والے خانے پائے جاتے ہیں جنکو کیسہ خیطیہ (nematocyst) کہا جاتا ہے ، یہ جاندار ان دھاگہ نما خیطیوں کو اپنے بچاؤ اور شکار میں استعمال کرتے ہیں۔ ان الفاظ کی مزید وضاحت کیلیۓ انکے صفحات مخصوص ہیں

یہ جاندار عموما مستعمرات یعنی کالونیاں بنا کررہتے ہیں۔ ان ہی میں جانداروں کا وہ مشہور گروہ بھی شامل ہے کہ جسکو سنگابی مرجان (hermatypic corals) کے نام سے جانا جاتا ہے۔ یہ جاندار ، ذیلی جماعت ، حیوان گلتیہ (zoantharia) کے طبقہ استخوانیہ (Scleractinia) سے تعلق رکھتے ہیں ، انکے طبقہ کو استخوانیہ کہنے کی وجہ یہ ہے کہ یہ جاندار ایک سخت ڈھانچہ (استخوان) بناتے ہیں ، انکے مزید ذکر کے لیۓ انکا صفحہ مخصوص ہے۔

ایک مرجان کا نظر آنے والا گول جسم یا سر دراصل کئی چھوٹے چھوٹے گولوں سے ملکر بننے والی ایک کالونی ہوتا ہے، ان چھوٹے گولوں کو سَليلَہ (polyp) کہا جاتا ہے ، ہر سلیلہ جسامت میں صرف چند ملی میٹر قطر کا ہوتا ہے۔ اور یہ معتدد سلیلوں سے بنی ہوئی کالونی یا مستعمرہ ، ایک واحد اکائی یا واحد جاندار کی طرح رہتا ہے کہ یہ تمام کے تمام سلیلے ایک ہی واحد معدی دورانی نطام سے اپنی غذا حاصل کرتے ہیں ۔ مزید یہ کہ مرجان کے جسم کے مستعمرہ یا کالونی میں موجود یہ تمام سلیلے درحقیقت مثل تولیدے (clones) ہوتے ہیں کیونکہ ان تمام میں وراثی مادے کی ساخت (genetic structure) یکساں یا مثالی ہوتی ہے۔ سلیلوں کی ہر نئی آنے والی نسل ، اپنے سے پہلی نسل کے سلیلوں کے چھوڑے ہوئے ڈھانچوں پر پروان چڑھتی ہے اور اسی طرح اس جاندار وہ جسم بنتا ہے جسکے لیۓ یہ مشہور ہیں (دیکھیے شکل)، مگر یہ جاندار ماحولیاتی اثرات سے متاثر بھی ہورہے ہیں جیسا کہ بعد میں ذکر آۓ گا۔

گو کہ شقائق بحری اپنی غذا کے لیۓ مچھلیوں وغیرہ اور مرجان ، عوالق (plankton) کو شکار کرسکتے ہیں مگر اپنی غذا کا بڑا حصہ یہ یک خلوی متعایشی (symbiotic) جانداروں سے حاصل کرتے ہیں ، ان یک خلوی جانداروں کو دوامی سیاط (dinoflagellates) کہا جاتا ہے اور انکو یہ نام دینے کی وجہ یہ ہے کہ طحالب (algae) کی اس قسم کے جانداروں کے جسم میں تار نما ساخت لگی ہوتی ہے جو انکو حرکت میں چپوؤں کی طرح مدد دیتی ہے اس ساخت کو سیاط (flagella) کہا جاتا ہے اور ان جانوروں کے سیاط میں خاص بات یہ ہوتی ہے کہ یہ مستقل گردشی حرکت میں رہتا ہے اسی مستقل پن وجہ سے انکے نام میں دوامی کا لفظ شامل ہوا ، یعنی دوامی سیاط۔ انکو گردشی حرکت کے باعث چرخ سیاط بھی کہ سکتے ہیں ۔

نگار خانہ[ترمیم]