مرکب سود

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
اصطلاح term

راس المال
مرکب
سُود
موثر
شرح

prinicipal
compound
interest
effective
rate

مرکب سود یہ تصور ہے کہ مقررہ دورانیہ تک جمع ہوئے سود کو اصل رقم میں شامل کر کے حاصل ہونے والی رقم کو اگلے دورانیہ کے لیے اصل رقم مانتے ہوئے سود شمار کیا جائے، اور یہی عمل ہر دورانیہ پر دہرایہ جائے۔ مثلاً اگر بنک آپ کو 1000 روپیہ قرض دیتا ہے مرکب سالانہ شرح سود 5% پر، جس کا مرکب دورانیہ بھی ایک سال ہے، تو سال کے بعد آپ قرضہ

1000\left(1+\frac{5}{100}\right)=1000 \times 1.05 = 1050

ہو گا، جو اگلے سال کے لیے اصل رقم تصور ہو گی۔ دو سال بعد آپ پر قرضہ 1050 \times 1.05 = 1102.50 روپے ہو جائے گا (یہ تصور کرتے ہوئے کہ آپ نے کچھ واپس نہیں کیا)۔

مثال: قرضہ کارڈ (credit card) ادارہ 19% سالانہ سود پر پیسے دیتا ہے اور مرکب ماہانہ وار ہوتا ہے، تو اگر اصل قرضہ کی رقم P ہے، تو سال کے آخر میں قرضہ ہو گا
P\left(1+\frac{0.19}{12}\right)^{12}

(اگر آپ نے کچھ واپس نہیں کیا)، کیونکہ ماہانہ سود کی شرح \ \frac{19}{12}% بنتی ہے۔ اس لیے ہم موثر سود کی شرح r_{eff} تعریف کرتے ہیں،

r_{eff}=\frac{P_1-P}{P}

جہاں سال کے آخر میں ادا کی گئ رقم کو P_1 لکھا ہے۔ اس لیے اس مثال میں موثر سالانہ شرحِ سُود

\left(1+\frac{0.19}{12}\right)^{12}-1=0.20745

یعنی 20.745% ہو گی۔

اب اگر مرکب دورانیہ کو کم کرتے جائیں تو کیا ہو گا؟ فرض کرو کہ پوری مدت 1 ہے اور اس مدت کے لیے شرح سود r ہے۔ اس مدّت کے ہم n حصے کرتے ہیں یعنی مرکب دورانیہ \ 1/n ہے، تو مدت 1 کے بعد اصل مقدار P سے بڑھ کر

P\left(1+\frac{r}{n}\right)^{n}

ہو جائے گی۔ اگر n لامتناہی کی طرف جائے، یعنی مرکب استمری ہو، تو یہ رقم Pe^r ہو گی، کیونکہ

\lim_{n \to \infty}\left(1+\frac{r}{n}\right)^{n}=e^r

اور جہاں e\approx 2.718 ہے۔

اُوپر کی مثال میں اگر مرکب استمری ہو، تو سالانہ موثر شرح سود

r_{eff}=\frac{Pe^r-P}{P}= e^{0.19}-1 = 0.20925

ہو گی (20.925%)۔

اگر n سال کے لیے رقم P قرضہ پر لی گئ ہے، مرکب سالانہ شرح سود r پر، جو استمری مرکب ہوتا ہے، تو n سال بعد واجب الادا رقم Pe^{nr} ہو گی۔

اصطلاح term

موجودہ قدر
معیاد
قرضہ

present value
period
loan

موجودہ قدر[ترمیم]

فرض کرو ہم رقم قرض پر لے بھی سکتے ہیں، اور قرض پر دے بھی سکتے ہیں، شرحِ سود r پر، جو مقررہ معیاد پر مرکب ہوتا ہے۔ اس صورت میں معیاد n کے بعد کی جانے والی ادائیگی کی موجودہ قدر کیا ہے؟ اگر ہم آج q کا قرضہ لیتے ہیں تو معیاد n کے بعد ہمیں \ q(1+r)^n ادا کرنا ہو گا۔ اس لیے معیاد n کے بعد q کی ادائیگی کی موجودہ قدر \ q/(1+r)^n ٹھیری۔

موجودہ قدر تجزیہ سودی کاروبار میں مفید رہتا ہے۔ مثلاً آپ نے بنک سے قرضہ کی رقم Q لی، جو n ماہانہ برابر اقساط میں واپس کرنا ہے۔ ماہانہ شرحِ سود r ہے، اور مرکب بھی ماہانہ ہے۔ فرض کرو کہ ماہانہ قسط کی رقم a ہے، تو آج ان ماہانہ اقساط کی موجودہ قدر

\frac{a}{1+r}+ \frac{a}{(1+r)^2}+ \cdots + \frac{a}{(1+r)^n}

ہے، جو ظاہر ہے Q کے برابر ہونا چاہیے:

\frac{a}{1+r} \left( 1+ \frac{1}{1+r}+ \frac{1}{(1+r)^2}+ \cdots + \frac{1}{(1+r)^{n-1}}\right) = Q

اب ہندساتی متوالیہ کی خصوصیت استعمال کرتے ہوئے، قسط کی رقم بنتی ہے

 a = \frac{Qr}{1-(1+r)^{-n}}

مثلاً آپ نے دس لاکھ روپے قرضہ لے کر نئ نکور گاڑی خریدی، سالانہ شرحِ سود 6 فیصد، اور ماہانہ مرکب، اور 96 ماہانہ قسطوں میں قابلِ ادا۔ چونکہ ماہانہ شرح سود r=.06/12 ہے،n=96، Q=1000000، اس لیے ماہانہ قسط 13141 روپے بنتی ہے۔

ماہ k کی ادائیگی کے بعد بقیہ راس المال کی رقم کو P_k کہو۔ ماہ k+1 پر ادائیگی سے پہلے بقیہ راسالمال کی رقم \ P_k(1+r) ہو گی ، اور

P_{k+1}=(1+r)P_k-a

اس رَجعت نسبت سے ہمیں حاصل ہوتا ہے

P_k=\frac{Q((1+r)^n-(1+r)^k)}{(1+r)^n-1}\,,\,\, k=0,1,\cdots,n

اگر ماہ k کے آخر میں سود کی رقم کو I_k لکھا جائے تو

I_k=r P_{k-1}

ماہ k پر قسط ادائیگی کی وہ مقدار جو قرض ہٹانے میں کام آتی ہے وہ a-I_k ہے۔ اوپر کی مثال میں پہلے مہینے پر آپ کی قسط میں سے 5000 روپے سود کے لیے ہیں، اور بقیہ 8141.40 قرضہ اتارنے کے لیے۔ قسط 49 پر سود کی رقم 2797.80 روپے رہ جائے گی۔

اور دیکھو[ترمیم]


بیرونی روابط[ترمیم]

E=mc2     اردو ویکیپیڈیا پر ریاضی مساوات کو بائیں سے دائیں LTR پڑھیٔے     ریاضی علامات