منہاج ویلفیئر فاؤنڈیشن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(منہاج فلاحی موسسہ سے رجوع مکرر)
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

منہاج ویلفیئر فاؤنڈیشن، تحریک منہاج القرآن کا فلاحی ادارہ ہے، جس کی بنیاد 17 اکتوبر 1989ء میں رکھی گئی [1]۔ یہ فلاحی ادارہ قدرتی آفات میں ہنگامی امدادی سرگرمیوں میں حصہ لینے کے علاوہ مستقل نوعیت کے فلاحی منصوبہ جات پر بھی کام کرتا ہے، جن میں یتیم بچوں کی کفالت کا منصوبہ آغوش [2]، غریب و بے سہارا جوڑوں کی اجتماعی شادیاں وغیرہ شامل ہیں۔

قیام کے مقاصد[ترمیم]

منہاج ویلفیئر فاؤنڈیشن تحریک منہاج القرآن کے تحت ایک بین الاقوامی فلاحی و رفاہی تنظیم ہے، جس کا مقصد امداد باہمی کے تصور کے تحت معاشرے کے تمام طبقات میں تعاون، اخوت، عزت و احترام اور انہیں خوشحال زندگی گزارنے کے لیے اعانت فراہم کرنا ہے۔

منہاج ویلفیئر فاؤنڈیشن ’’تعلیم‘‘، ’’صحت‘‘ اور ’’فلاح عامہ‘‘ کے میدانوں میں نمایاں خدمات سرانجام دے رہی ہے۔

نعرہ[ترمیم]

ہمارا عزم ہمارا کام ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ تعلیم، صحت اور فلاح عام

تعلیم[ترمیم]

اداروں کا قیام[ترمیم]

پاکستان میں اب تک قائم ہونے والے تعلیمی اداروں کی تفصیل یہ ہے:

  • پرائمری و ثانوی اسکولز: 572
  • انفارمیشن ٹیکنالوجی کالجز: 17
  • چارٹرڈ یونیورسٹی: 1 (لاہور میں)

تعلیم سب کیلئے[ترمیم]

تعلیم منہاج ویلفیئر فاؤنڈیشن کی اولین ترجیح تعلیم سب کے لیے (Education for All) ہے۔ اس مقصد کے لیے غیر حکومتی سطح پر رسمی و غیر رسمی تعلیم اور تعلیم بالغاں کے ذریعے پاکستان میں شرح خواندگی میں اضافے کی کاوشیں جاری ہیں۔

نظام تعلیم اور نظام امتحان میں تبدیلی[ترمیم]

تعلیمی اداروں میں جدید ترقی یافتہ نظام تعلیم نافذ کیا گیا ہے جس میں دینی اور دنیاوی تعلیم کو مربوط کر کے نصاب مرتب کیا گیا ہے اور اسے بین الاقوامی معیار سے ہم آہنگ کرنے کیلئے ترقی یافتہ ممالک کے تجربات سے فائدہ اٹھایا گیا ہے۔ طلبہ کی تعلیمی استعداد بڑھانے کیلئے نظام امتحانات میں اصلاحات کی جا رہی ہیں۔ موجودہ نظام امتحان طلبہ کی تعلیمی استعداد و قابلیت کی بجائے محض یاد داشت کا امتحان ہے۔ تعلیم اور نظام امتحان کو ’’تحصیلِ علم‘‘ کا نظام بنایا جا رہا ہے۔

بامقصد تعلیم کا فروغ[ترمیم]

نظام تعلیم میں اصلاحات کے ذریعے معیاری اور مقداری تبدیلی لانے کی کوشش کی گئی ہے۔ ابتدائی سے لیکر اعلیٰ سطح تک تمام تعلیمی اداروں میں تعلیم کو بامقصد، علمی اور بین الاقوامی معیار سے ہم آہنگ کیا گیا ہے۔

تعصب پر مبنی نصاب کا خاتمہ[ترمیم]

تعلیمی اداروں سے ہر طرح کے مذہبی، علاقائی، لسانی، طبقاتی اور فرقہ وارانہ تعصبات اور نفرتوں کو تعلیمی نصاب اور تعلیمی اداروں سے خارج کیا گیا ہے۔

اہداف[ترمیم]

  • مراکز خواندگی اور پرائمری اسکولوں کا قیام
  • ایک ہزار ماڈل اسکولوں، کالجوں اور اسلامی مراکز کا قیام
  • صوبائی سطح پر 5 یونیورسٹیز کا قیام
  • ایک بین الاقوامی چارٹر یونیورسٹی کا قیام
  • غریب و مستحق طلبہ و طالبات کیلئے تعلیمی وظائف کا انتظام

صحت[ترمیم]

فری میڈیکل کمپلیکس و ہسپتال[ترمیم]

منہاج ویلفیئر فاؤنڈیشن کے تحت ساہیوال [3]، ملتان، پاکپتن، گجرانوالہ اور مردان میں پانچ منہاج ویلفیئر ہسپتال قائم کیے جا چکے ہیں۔ مرکزی تعلیمی اداروں کے اسٹاف ممبرز اور طلباء و طالبات کیلئے ایک منہاج کلینک قائم کیا گیا ہے جہاں علاج و معالجہ کی سہولت مفت پہنچاتی ہے۔

منہاج فری ڈسپنسریز[ترمیم]

منہاج ویلیفئر فاؤنڈیشن ’منہاج فری ڈسپنسریز‘ کے نام سے پاکستان بھر میں 107 ڈسپنسریز چلا رہی ہے۔

سالانہ فری آئی سرجری کیمپ[ترمیم]

منہاج ویلفیئر فاؤنڈیشن ضلع ناروال میں ہر سال ’سالانہ فری آئی سرجری کیمپ‘ کا اہتمام کرتی ہے، جہاں معروف آئی اسپیشلسٹ مریضوں کا معائنہ اور آپریشن کرتے ہیں۔ آئی کیمپ میں مریضوں کے قیام، طعام، ادویات، ٹیسٹ اور آپریشن کا مکمل خرچ منہاج ویلفیئر فاؤنڈیشن کے ذمہ ہوتا ہے۔

اہداف[ترمیم]

  1. ملک کی ہر یونین کونسل میں فری ڈسپنسریوں کا قیام
  2. ہر یونین کونسل میں ماہانہ بنیادوں پر فری میڈیکل کیمپوں کا انعقاد
  3. ملک کے تمام بڑے شہروں اور 500 تحصیلوں میں منہاج ایمبولینس سروس کا قیام
  4. ملک کی تمام تحصیلوں میں منہاج ہسپتالوں کا قیام
  5. ملک بھر میں بلڈ ڈونیشن سوسائٹیوں کا قیام

فلاح عام[ترمیم]

آغوش[ترمیم]

ٹاؤن شپ لاہور میں یتیم اور بے سہارا بچوں کی کفالت اور تعلیم کیلئے آغوش کے نام سے پانچ منزلہ عمارت بنائی گئی، جہاں 8 اکتوبر 2005ء کو صوبہ خیبر پختونخوا اور آزاد کشمیر میں آنے والے زلزلہ سے متاثرہ یتیم بچے مقیم ہیں۔ [4]

بیت المال[ترمیم]

منہاج ویلفیئر فاؤنڈیشن نے ’بیت المال‘ قائم کیا ہے جس کا مقصد غریب اور نادار افراد کی مالی مدد کرنا ہے۔

اجتماعی شادیاں[ترمیم]

پاکستانی معاشرے کی غریب، نادار اور مستحق بچیوں کی شادیوں کی اجتماعی تقاریب کا سلسلہ بھی جاری ہے۔ جہیز کا سامان، بارات اور مہمانوں کی باعزت تواضع اور بچیوں کی رخصتی کا اہتمام منہاج ویلفیئر فاؤنڈیشن کرتی ہے۔ سال 2015ء تک ایک ہزار سے زیادہ نادار بچیوں کی شادیاں کروائی جا چکی ہیں۔

فراہمی آب کا منصوبہ[ترمیم]

پاکستان کے دور افتادہ علاقوں میں پانی کی فراہمی ایک جانگسل کام ہے، جہاں خواتین کئی میل سفر طے کر کے پینے کا پانی لے کر آتی ہیں۔ غریب آبادی کو پینے کے پانی کی مفت فراہمی کیلئے ابتدائی طور پر 1500 مقامات پر پانی کے نل لگوائے جا چکے ہیں۔

اہداف[ترمیم]

  1. ملک کے تمام بڑے شہروں میں یتیم و بے سہار ابچوں کی تعلیم و تربیت اور کفالت کیلئے ادارہ جات (آغوش) کا قیام
  2. فراہمی آب کے منصوبہ میں 5000 مقامات پر جہاں پانی کی کمی ہے واٹرپمپس کی انسٹالیشن
  3. قدرتی آفات زلزلہ، سیلاب، بارش اور دہشت گردوں سے متاثرہ علاقوں میں ایمرجنسی ریلیف فنڈز کا قیام اور بحالی کیلئے فی الفور عملی اقدامات کرنا
  4. بےروزگار نوجوانوں کیلئے خود روزگار اسکیم (Micro Finance Scheme) کے ذریعے بلاسود قرضے فراہم کرنا اور انکی کاروبار میں معاونت کرنا

وسائل[ترمیم]

منہاج ویلفیئر فاؤنڈیشن کسی ملکی یا غیرملکی ایجنسی، فلاحی ادارے، حکومت یا حکومتی ادارے سے اپنے منصوبہ جات کیلئے امداد نہیں لی۔ تمام فلاحی منصوبہ جات کیلئے امدادری رقوم کی فراہمی تحریک منہاج القرآن کے کارکنان اور ممبران کے ذمہ ہے۔ بالخصوص بیرون پاکستان مقیم منہاج القرآن کی تنظیمات اور ممبران اس کے وسائل کا سب سے بڑا ذریعہ ہیں۔ [5]

پاکستان کے اندر فنڈز جمع کرنے کیلئے درج ذیل ذرائع استعمال کئے جاتے ہیں:

  • قربانی کی کھالوں کی ملک گیر مہم
  • زکوٰۃ اکٹھا کرنے کی ملک گیر مہم
  • عمومی عطیات (Donations)
  • خصوصی عطیات (کسی پراجیکٹ کےلیے)

بیرونی روابط[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ منہاج ویلفئیر فاؤنڈیشن کا تعارف
  2. ^ یتیم بچوں کی کفالت
  3. ^ منہاج القرآن فری میڈیکل کمپلیکس ساہیوال
  4. ^ آغوش، یتیم بچوں کی لفالت و تعلیم کا ادارہ
  5. ^ منہاج ویلفیئر فاؤنڈیشن


بیرونی روابط[ترمیم]

متناسقات: 31°29′00″N 74°18′32″E / 31.4833738°N 74.3088156°E / 31.4833738; 74.3088156

حوالہ جات[ترمیم]