منی باجی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
اداکار
تخلص منی باجی
پیدائش 14 جنوری 1929 (1929-01-14)
شملہ, ہندوستان
وفات 14 فروری 2007 (عمر 78 سال)
کراچی
پیشہ اداکارہ
قومیت پاکستانی

ریڈیو فنکار : منی باجی
اصل نام : پروین اختر
پیدائش : 1929 شملہ، ہماچل پردیش، برطانوی ہندوستان
وفات : حرکت قلب بند ھونے کے سبب 14 فروری ،2007
قد: چار فٹ دو انچ
ازدواجی حیثیت : تا حیات مجرد رھیں
قریبی دوست : شکیل احمد، انوربہزاد، عرش منیر، ایس ایم سلیم، طلعت حسین، ظفر صدیقی،
قاضی واجد، امیر خان، رفعت قدیر ندوی، سنتوش رسل،
جمشید انصاری،زینت یاسمیں، وراثت مرزا، محمود علی،
قربان جیلانی، ماجد علی اور منور سعید وغیرہ.
اعزاز: حکومت پاکستان کی جانب سے "پرایڈ آف پرفورمینس" ملا۔
"نگار" ایوارڈ سے بھی نوازہ گیا۔

1940 میں شاعر بہزاد لکھنوی کی سفارش پردہلی ریڈیو پر ملازمت ملی۔ تقسیم کے بعد منی باجی لاھور آگیں اور ان کو ڈرامہ آرٹسٹ کی نوکری مل گی۔ جہان ضیاجالنرھری نے انھیں تربیت دی اور ان کے ساتھ ریڈیائی ڈراموں میں حصہ لیا۔ وہ لاھور میں اپنی مترکہ جائیداد کے سلسلے میں دو سال مقیم رھی۔ پھر کراچی میں ریڈیو پاکستان کے عقب میں رتن تلاؤ (برنس روڈ) منتقل ھو گیں۔ ریڈیو پاکستان کے ڈائریکٹر زیڈ۔ اے بخاری انکے دادا کے دوست تھے ۔ جن کی معاونت سےریڈیو پاکستان کراچی میں ملازمت ملی۔ منی باجی کے والد کراچی میں سرکاری کینٹین چلایا کرتے تھے ۔ جسکو انھوں نے اپنی بیٹی پروین اختر(منی باجی) اور انکے چھوٹے بھائی مقصود کو چلانے کے لیےدے دی۔ مگر یہ کام ان کے مزاج کے خلاف تھا۔ 1958 میں دوبارہ ریڈیو میں واپس آگیں او ر پھر ان کی آواز بچوں کی آواز کی صورت میں 45 سال سے زائد ریڈیو پر گونجتی رھی۔ ان کے دو ریڈیائی سلسلے "قید ہوس" اور ‘زنجیر بولتی ہے" بہت مشہور ھوئے۔ ان کا پروگرام " بچون کی دنیا" 60 اور 70 کی دہائی میں مقبول رہا۔