نفخ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
Featured article candidate.svg
یہ مضمون منتخب مقالہ بنائے جانے کے لیے امیدوار ہے۔ اس لیے اس مضمون کو خاص توجہ کی ضرورت ہے۔
نفخ
جماعت بندی اور بیرونی ذرائع
QUSAIBA.PNG
Emphysema H and E.jpg
بالائی تصویر؛ قصیبہ انتہائیہ کی ساخت و مقام کو ظاہر کرتی ہے جو کہ اسناخ یا ہوا کے خانوں میں کھلتی ہے جہاں ہوا کا تبادلہ ہوتا ہے۔ زیریں تصویر؛ پھیپڑوں کے تراشے کی خردبین سے لی گئی تصویر ہے جس میں خلیات کے مرکزوں کو رنگنے کیلیۓ بقمین (haematoxylin) نامی رنگ (stain) اور خلیہ مائع و دیگر نسیجات کو رنگنے کیلیۓ شفقین(eosin) نامی رنگ کو استعمال کیا گیا ہے۔ بقمین ، جامنی رنگ میں اور شفقہ ، گلابی یا سرخی مائل رنگ میں نظر آتا ہے۔ تصویر میں سرخ رنگ میں نظر آنے والے دانے اصل میں خون کے سرخ خلیات ہیں۔
آئیسیڈی-10 J43.
آئیسیڈی-9 492
معطیات 4190
میڈلائین 000136
ایمیڈ med/654 
اصطلاحات

نفخ
نفخ
نفاخ

سوجن / پھولا ہوا
emphysema
neoplasm

نفخ (emphysema) جسکو عام الفاظ میں پھیپڑوں کی سوجن یا پھول جانا کہا جاسکتا ہے ایک ایسی کیفیت ہوتی ہے کہ جس میں پھپڑوں میں پھیلی ہوئی وہ ہوائی نالیاں کہ جو ایصالی منطقۂ کے اختتام پر پائی جاتی ہیں وہ غیر معمولی یا غیر طبیعی طور پر پھیل جاتی ہیں یا کشادہ ہو جاتی ہیں۔ ان اختتامی ہوا کی نالیوں کو قُصیبہ انتہائیہ (terminal bronchioles) کہا جاتا ہے۔ ایمفیسیما (امفیزیما) یا نفاخ کو مزمن رکاوٹی پھیپڑی امراض (chronic obstructive pulmonary diseases) میں شمار کیا جاتا ہے، اس بات کو آسان الفاظ میں یوں کہ سکتے ہیں کہ نفاخ کو پھیپڑوں کے ایسے امراض میں شمار کیا جاتا ہے کہ جن میں پــرانی (chronic) یعنی طویل عرصے پر چلنے والی ہوا یا سانس کی رکاوٹ پائی جاتی ہو۔

آسان بیان[ترمیم]

نفخ ، پھیپڑوں کی ایسی بیماری ہوتی ہے کہ جس میں پھیپڑوں میں پائے جانے والے وہ چھوٹے چھوٹے ہوا کے خانے کہ جہاں سے سانس کے ساتھ داخل ہونے والی تازہ ہوا خون میں داخل ہوتی ہے وہ معمول سے زیادہ پھیل جاتے ہیں۔ ایسا انکی دیوارں میں لچک اور مضبوطی کم ہونے کی وجہ سے ہوتا ہے، اور یہ کمی مختلف ماحولی آلودگیوں کی وجہ سے ہوسکتی ہے جن میں سب سے اہم اور سب سے زیادہ بڑی قابل انسداد وجہ تمباکو نوشی ہے۔ چونکہ ہوا کے خانے ضرورت سے زیادہ پھیل جاتے ہیں اور انکی واپس سکڑ اپنی جسامت پر واپس آنے کی طاقت بھی یا تو ختم ہوچکی ہوتی ہے یا انتہائی کم لہذا ان میں پہلے سے موجود ہوا مکمل طور پر ان میں سے نکل نہیں پاتی اور ظاہر ہے کہ جب پہلے سے موجود ہوا مکمل نہیں خارج ہوگی تو تازہ ہوا بھی مکمل طور پر داخل نہیں ہوسکے گی اور اسی وجہ سے نفخ کے مرض میں ہوا (یا گیسوں) کے تبادلے کا نظام بری طرح متاثر ہوتا ہے۔

علامات و اشارات[ترمیم]

  1. سانس میں دقت یا عسر سانس (breathlessness)
  2. کھانسی
  3. تَنخّــَع (expectoration) یعنی نخامہ یا بلغم خارج ہونا۔
  4. جلد نیلاہٹ زدہ ہوجانا (یہ انتہائی بگڑی ہوئی حالت کا اشارہ ہے)
  5. سہرانا (wheezing) یہ باریک سوں سوں کی آوازیں ہوتی ہیں جو کہ سینے یا سانس کی نالیوں سے آتی ہیں
  6. صلصلہ (rhonchi) ؛ یہ اصل میں سماعہ (stethoscope) سے سننے پر باریک سیٹیوں کی سی آوازوں کو کہا جاتا ہے۔
  7. چرچراہٹ (crepitation) ؛ یہ بھی سماعہ (stethoscope) کے زریعے سنی جانے والی آوازیں ہیں جو کہ چرمراہٹ کے جیسی آتی ہیں۔

اگر مندرجہ بالا علامات اور اشارات حد سے زیادہ بڑھ جائیں تو پھر ان کے ساتھ ساتھ مریض میں نفسیاتی طور پر پریشانی اور اضطراب کی علامات بھی نمودار ہونے لگتی ہیں، اسکے لیۓ لیٹنا اور مکمل نیند سونا دشوار ہوسکتا ہے جو کہ ان علامات و اشارات کو مزید پریشان کن بناتا ہے۔

سببیات[ترمیم]

پھیپڑوں میں ہوا یا گیسوں کے تبادلے کو درہم برہم کرنے والے اس مرض کی اسبابیات حتمی طور پر تو نہیں معلوم ، یا یوں کہنا زیادہ درست ہوگا کہ کوئی ایک ایسا سبب نہیں ہے کہ جسکو اس کی اسبابیات کا مکمل ذمہ دار ٹہرایا جاسکتا ہو۔

تمباکونوشی[ترمیم]

طبیبوں کے تجربات و تحقیقات سے یہ بات ظاہر ہوتی ہے کہ تمباکونوشی ، نفخ سمیت دیگر سانس کے امراض میں نہایت اہم سبب کی حیثیت رکھتی ہے [1] ۔ تمباکونوشی سے پہلا اثر تو پھیپڑوں پر انکی خلیاتی ساخت میں تخریب کا ہوتا ہے اور دوسرا اثر اس تخریب کے ردعمل میں پیدا ہونے والی سوزش (inflammation) ہے جو کہ اس تخریب کاری توڑ پھوڑ میں مزید تیزی پیدا کرتی ہے۔

لوچمرہ و ضد لوچمرہ[ترمیم]

پھیپڑوں میں پایا جانے والا ہوا کے تبادلے کا نظام؛ چھوٹے خانے اسناخ کہلاتے ہیں جن میں خون اور سانس کے ساتھ داخل ہونے والی ہوا کے درمیان تبادلہ انجام پاتا ہے۔ تصویر میں نیلی نالیاں وریدوں کو ، سرخ نالیاں شریانوں کو اور پیلی نالیاں سیالہ کو ظاہر کرتی ہیں۔

لوچمرہ ، خلیات میں پیدا ہونے والا ایک ایسا خامرہ ہوتا ہے کہ جو ہوائی خانوں (alveoli) کی دیوار میں پائے جانے والے لچکدار یا لوچ دار مرکب (لوچین (elastin)) کو تباہ کرتا ہے یا اس میں توڑ پھوڑ کرتا ہے۔ یہ خامرہ ان خلیات سے خارج ہوتا ہے جو کہ کسی دیگر سبب (مثلا تمباکو نوشی ، حقہ نوشی اور ماحولی آلودگی وغیرہ) کے نتیجے میں پیدا ہونے والی سوزش میں ملوث ہوتے ہیں۔ عام طور پر جسم میں اس قسم کے خامرے سے پھیپڑوں کے فعالی خلیات کی حفاظت کرنے کیلیۓ قدرتی طور پر چند ایسے مرکبات ہوتے ہیں جو کہ اس لوچمرہ (elastase) خامرے کے مخالف کام کرتے ہیں یا اسکو تباہ کاری سے روکے رکھتے ہیں ، ایسے مرکبات کو اس ہی وجہ سے ضد لوچمرہ (anti-elastase) کہا جاتا ہے، انکی ایک مثال Alpha-1 antitrypsin کہلاتی ہے [2]۔

نظریاتی طور پر صحتمند جسم میں لوچمرہ اور ضد لوچمرہ کے مابین ایک توازن پایا جاتا ہے۔ لیکن جب کسی دیگر وجہ، جیسے تمباکو نوشی ، کے سبب پھیپڑوں میں سوزش پیدا ہوتی ہے تو سوزشی خلیات (inflammatory cells) میں بھی ظاہر ہے کہ اضافہ ہوگا اور جیسا کہ اوپر ذکر آیا کہ ان سوزشی خلیات سے ہی لوچین کو نقصان پہنچانے والا خامرہ (لوچمرہ) خارج ہوتا ہے، اس اضافی لوچمرہ کی وجہ سے لوچمرہ - ضد لوچمرہ توازن بگڑ کر لوچمرہ کی جانب پلڑا جھک جاتا ہے اور یوں ضد لوچمرہ حفاظتی کام میں کمزور ہوجاتا ہے جسکی وجہ سے لوچمرہ ، ہوائی خانوں کی لوچین (elastin) کو ختم کرتا رہتا ہے اور یوں ہوائی خانوں کی دیواریں اپنی طاقت کھو کر یا ڈھیلی پڑ کر پھیل جاتی ہیں اور نفخ کی کیفیت پیدا ہوتی ہے۔

داخل وریدی حقنہ[ترمیم]

ان افراد میں نفخ کے ورود کی شرح زیادہ دیکھی گئی ہے کہ جو نشہ آور ادویات کو جسم میں داخل کرنے کی غرض سے داخل وریدی حقنات (جمع حقنہ (injection)) کا استعمال کرتے ہیں۔ کوکائین اور ہیروئین کا نشہ کرنے والوں میں پیدا ہونے والے چھالے (bullae) عام طور پر پھیپڑوں کے بالائی فصوص (upper lobs) میں اور میتھاڈون کا نشہ کرنے والوں میں یہ چھالے قاعدی فصوص (basilar lobes) میں بنتے ہیں۔

ورود[ترمیم]

پـرانی سوزش قصبات (chronic bronchitis) میں نفخ کا ورود سوزش کے عرصے اور عمر پر منحصر ہوتا ہے جبکہ ایک اندازے کے مطابق تمباکونوشی اس ورود کے ظاہر ہونے کو لگ بھگ 15 سال کم (باالفاظ دیگر تیز) کردیتی ہے۔ جن ممالک (مثلا امریکہ، یورپ اور جاپان وغیرہ) میں امراضی معطیات کے مکمل سِجِلات دستیاب ہوتے ہیں وہاں نفخ کے ظاہر ہونے کی شرح کا اندازہ 3 تا 6 فیصد لگایا گیا ہے [3] ، ترقی پذیر عوام کے بارے میں کوئی سِجِل دستیاب نہیں ہوسکا، لیکن تمباکو نوشی کی شرح اور ماحولی آلودگی کے تناسب کو دیکھتے ہوئے اندازہ ہے کہ ورود کی شرح ترقی یافتہ ممالک سے زیادہ نہیں تو کم از کم برابر ضرور ہوگی[4]۔ ایک عالمی تجزیۓ کے مطابق نفخ کے ورود کا عالمی طور پر تناسب 1.8 فیصد سامنے آیا ہے[5]

طبی معائنہ و اختبارات[ترمیم]

طبی معائنے کے دوران مریض میں ان اشارات میں سے چند یا کئی مل سکتے ہیں کہ جو اوپر علامات و اشارات کے قطعے میں درج ہیں۔ اور پھر طبی معائنے پر ملنے والے اشارات اور مریض کی بیان کردہ علامات کی روشنی میں طبی اختبارات کا فیصلہ کیا جاتا ہے، جو کہ نا صرف مرض کی موجودہ صورتحال جاننے کیلیۓ درکار ہوتا ہے بلکہ اس سے درست ادویہ کے انتخاب میں بھی مدد ملتی ہے[6] ۔

معائنہ[ترمیم]

ایک طبی معائنے کے عام طور پر چار مراحل ہوا کرتے ہیں۔

  • معائنہ (Inspection) --- یعنی نظر سے معائنہ کرنا، جس دوران مندرجہ ذیل باتیں سامنے آسکتی ہیں۔
  • لمس (Palpation) --- یعنی چھو کر یا لمس سے معائنہ کرنا
  • قرع (Percussion) --- یعنی انگلی سے ٹھونک کر یا ضرب لگا کر آواز سے تشخیص کرنا
  • قرع پر آنے والی آواز کا معمول کی نسبت گونجدار ہو جانا، اور ساتھ ہی جگر اور دل جیسے اعضاء کی ٹھوس آواز ناپید ہو جانا۔
  • اوپر علامات و اشارات میں درج شدہ آوازیں۔

اختبارات[ترمیم]

معالجہ[ترمیم]

سب سے پہلا اقدام جو کہ اس مرض کے معالجے میں ایک طبیب کی جانب سے کیا جانا چاہیۓ وہ مریض کی معمول کی زندگی میں پیدا ہونے والے خلل کو ممکنہ حد تک دور کرنے کی کوشش ہے (خواہ ایسا ممکن ہونا مشکل ہی نظر آتا ہو) اور اس مقصد کی خاطر مریض میں مزمن رکاوٹی پھیپڑی امراض (chronic obstructive pulmonary diseases) کی کیفیت کا درست اندازہ کر کہ اس سے پیدا ہونے والے کو درست اور مفید ہدایات اور ادویات سے واپس معمول کی جانب لوٹانے تدابیر اختیار کرنا ضروری ہے۔ اہم ترین بات جو کہ خود مریض بھی فوری طور پر اختیار کرسکتا ہے وہ ہے ان اسباب کو ترک کرنے کی جو اب تک کی تحقیق کے مطابق اس مرض کا سبب بنتے ہیں ، جن میں تمباکونوشی کا فوری اور یکسر ترک کردینا لازمی ہے۔

طبی ہدایات[ترمیم]

  • اہم ترین سبب کو ترک کرنا ضروری ہے یعنی سگرٹ، بیڑی، حقہ یا سگار وغیرہ کو فوری اور یکسر ترک کرنا لازمی ہے۔
  • لافاعل (passive) تمباکو نوشی بھی تمباکونوشی کی مانند مضر ہے، بیڑی پینے والوں کی صحبت سے بچا جانا چاہیۓ۔
  • ماحولی آلودگی بھی مضرِ پھیپڑا اثرات کی حامل ہے، جہاں تک ممکن ہو سکے اس سے بچا جاۓ۔
  • پیشہ اور روزگار زندگی اگر ایسا ہے کہ جس میں کسی بھی قسم کی دھول یا کوئی اور طرح کے باریک ذرات سانس میں جانے کے امکانات مستقل ہوتے ہوں اور یہ صورتحال روزآنہ مکمل کام کے اوقات میں یا کچھ مدت (چند گھنٹوں) کیلیۓ (مگر روزآنہ) آتی ہو تو پھر چہرے پر حفاظتی نقاب لگانا چاہیۓ۔
  • چند ایسی ورزشیں مفید ہو سکتی ہیں کہ جن میں پیٹ کے عضلات کو ڈھیلا کیا جاتا ہے، اور یا پھر پھیپڑوں میں ہوا کا دباؤ بڑھایا جاسکتا ہو، مثلا
  • سر اور گھٹنوں کے نیچے تکیہ رکھ کر لیٹ جانا اور پھر پرسکون انداز میں سانس کھینچنا۔
  • کھلے منہ سے سانس اندر لے کر سکڑے ہونٹ کے ساتھ سانس باہر نکالنے سے پھیپڑوں کے اندر ہوا کا دباؤ بڑھتا ہے جو کہ منہدم یا پچک جانے والی باریک سانس کی نالیوں اور خانوں کیلیۓ مفید ہوتا ہے۔

طبی (لاجراحی) معالجہ[ترمیم]

تمباکو نوشی جو نقصان پہنچا چکی ہوتی ہے اسکو فوری طور پر مزید بڑھنے سے روکنے کی تدابیر کرنا اس قدر اہم ہے کہ کم و پیش تمام طبیب تمباکونوشی ترک کرنے کو معالجاتی ہدایات کی حد تک محدود رکھنے کے بجاۓ اسکو باقاعدہ طبی معالجے کا ایک حصہ بناتے ہیں۔ طبی معالجاتی انتظام کے بنیادی مقاصد میں بالترتیب ؛ روزمرہ زندگی کو معمول کیجانب لوٹانا، کیفیت حیات کو بہتر کرنا، علامات کو ممکنہ حد تک روکنا، تشدید المرض (دوران تضبیط) اور رجعت المرض (بعد از تضبیط) کی روک تھام کرنا شامل ہیں۔

ترک تمباکونوشی[ترمیم]

جو لوگ عرصے سے بیڑی یا حقہ پیا کرتے ہوں بعض اوقات انکے لیۓ اسے یک دم ترک کردینا مشکل نہیں تو کچھ ایسا آسان بھی نہیں ہوتا۔ ترک تمباکونوشی کیلیۓ مریض کے مشوروں اور مصالحت سے بنایا گیا طبیب کا ایک خاکہ یا منصوبہ ہونا لازمی ہے جس پر مریض مکمل دیانتداری سے عمل نا کرے اور طبیب مستقل توجہ نا دے تو کامیابی کے مواقع قریبا ناپید ہوجاتے ہیں۔ اس منصوبہ بندی میں ؛ ابتداء ترک کی ایک طے شدہ تاریخ، آغاز ترک کے بعد نمودار ہونے والی بیچینی و اضطرابی کیفیات کی روک تھام، کے ساتھ ساتھ اگر ضرورت پڑے تو ترک تمباکونوشی کیلیۓ ادویاتی امداد (مثلا نکوٹین بدلی معالجہ (nicotine replacement therapy) کے انتخابات بھی شامل ہوتے ہیں۔

ادویات[ترمیم]

  1. مُوسّع قصبی (bronchodilator) ---- یعنی ایسی ادویات جو کہ قصبہ یا سانس کی نالیوں کو موسع کرتی ہیں یا وسیع کرتی ہیں۔ مجموعی طور پر انکے ادویاتی اثرات سے کھانسی اور سانس کی تنگی میں سہولت آنے کی امید ہوا کرتی ہے۔
  2. تنفسی استیروید (steroid inhalation) ---- ان سے ایسی صورت میں مدد لی جاسکتی ہے کہ جب نفخ کے ساتھ دمے کی علامات محسوس ہوتی ہوں، عام طور پر انکو ضبابی بخاخ (aerosol spray) کی شکل میں استعمال میں لایا جاتا ہے لہذا انکا اثر بہت جلد اور تیزی سے ظاہر ہوتا ہے کیونکہ یہ براہ راست سانس کے راستے پھیپڑوں کی نالیوں اور سوراخوں میں پہتچتی ہیں۔ انکو ضد سوزش معالجہ (anti inflammatory therapy) کے طور پر تصور کیا جاتا ہے۔
  3. مضادات حیوی (antibiotics) ---- انکی ضرورت بطور خاص اس وقت پیش آتی ہے کہ جب COPD (یا کسی دیگر) وجہ سے جراثیم (bacteria) کے پھیپڑوں میں موجود ہونے کی علامات (مثلا بخار) وغیرہ سامنے آہیں۔
  4. حال مخاط (mucolytics) ---- یہ ادویات بلغمی مادے کو پتلا کرتی ہیں اور اسطرح اسکی لزوجیت کم ہوجاتی ہے جسکی وجہ سے وہ کم رکاوٹی ہوجاتا ہے اور اسکو خارج کرنا سہل ہوجاتا ہے۔

جراحی معالجہ[ترمیم]

نفخ کا جراحت سے علاج گویا کامل نہیں مگر اس سے انتہائی کیفیات میں بعض مواقع پر کافی حد تک مدد اور بہتری کی امید ہوتی ہے۔ اور وسیع پیمانے پر کیے گئے چند تحقیقاتی اندراجات اس بات کی تصدیق کرتے ہیں کہ جراحی نفخ کے مرض میں ایک اختیار کے طور پر اہم معالجہ ثابت ہو سکتا ہے[7]۔

استصال آبلہ[ترمیم]

استصال آبلہ (bullectomy) ایک ایسا طریقۂ کار ہے کہ جس میں پھیپڑوں میں بن جانے والے بڑے آبلے یا چھالے نکال دیے جاتے ہیں۔ اس قسم کی جراحی کرتے وقت یا تو میانی اور یا پھر جانبی قطع قص (sternotomy) کی راہ اختیار کی جاتی ہے۔

تخفیفِ ششی حجم جراحی[ترمیم]

تخفیف ششی حجم جراحی (Lung volume reduction surgery) یہ طریقہ کار کوئی چالیس برس قبل پہلی بار استعمال کیا گیا تھا جس میں نفخ زدہ پھیپڑوں کا وہ حصہ کہ جو ناکارہ ہو چکا ہوتا ہے اسکو کاٹ کر نکال دیا جاتا ہے۔ گویا بادی النظر میں دیکھا جاۓ تو ایسا محسوس ہوتا ہے کہ اس قسم کی جراحت کہ جس میں نفخ زدہ پھیپڑوں سے (جن میں پہلے ہی ہوائی تبادلے کا خاصہ حصہ کم ہو چکا ہوتا ہے) اگر مزید پھیپڑے کا حصہ کاٹ کر نکال دیا گیا تو بجاۓ فائدے کے مزید صورت حال خراب ہو نا ہوجاۓ گی؟ لیکن اصل میں ایسا نہیں ہوتا بلکہ اس طرح ناکارہ حصہ نکالنے سے جو اضافی جگہ سینے میں پیدا ہوتی ہے وہ باقی ماندہ پھیپڑے کو پھیلنے اور ہوا کے تبادلے میں معاونت کرتی ہے اور اس طرح اس جراحی سے افاقہ ظاہر ہوتا ہے (حوالہ 7)۔

حوالہ جات و بیرونی روابط[ترمیم]

  1. ^ Silverman RA, Boudreaux ED, Woodruff PG, Clark S, Camargo CA Jr. Cigarette smoking among asthmatic adults presenting to 64 emergency departments. Chest 2003;123:1472–1479. (PDF)
  2. ^ Welle I, Bakke PS, Eide GE, Fagerhol MK, Omenaas E, Gulsvik A. Increased circulating levels of alpha1-antitrypsin and calprotectin are associated with reduced gas diffusion in the lungs. Eur Respir J 2001;17:1105–1111. (PDF)
  3. ^ Incidence and Mortality after Acute Respiratory Failure and Acute Respiratory Distress Syndrome in Sweden, Denmark, and Iceland. Owe R. Luhr, Kristian Antonsen. Am. J. Respir. Crit. Care Med. 1999; 159: 1693-2028 (PDF)
  4. ^ Rashmi Mayur: Environmental Problems of Developing Countries. Annals, AAPSS, 444, July 1979 (PDF)
  5. ^ eMedicine from WebMD; Emphysema, June 14, 2006
  6. ^ Cecil Text Book of Medicine; 17th Ed. ISBN 1416001859 W.B. Saunders
  7. ^ Evaluation of Lung Volume Reduction Surgery for Emphysema; NATT
لاتعلقیت: اس مضمون میں مرض سے متعلق معلومات اور ادویات کی وضاحت صرف علمی معلومات مہیا کرنے کی خاطر دی گئی ہیں انکا مقصد نا تو علاج میں کسی قسم کی مداخلت کرنا ہے اور نا ہی معاونت کرنا یا کوئی مشورہ فراھم کرنا، یہ کام اس طبیب کا ہے جسکے زیر اثر مریض ہو۔ کسی طبیب کے مشورے کے بغیر ادویات کا استعمال یا خود علاج کی کوشش شدید نقصان کا باعث ہوسکتی ہے۔ مزید یہ کہ طب ایک تیزرفتاری سے تبدیل ہوتے رہنے والا شعبۂ علم ہے اور اس صفحہ کی معلومات مستقبل میں ہونے والی تحقیق کی وجہ سے تبدیل ہوسکتی ہیں، انہیں مستقل تادمِ تاریخ کرتے رہنے کی ضرورت ہوگی۔
‘‘http://ur.wikipedia.org/w/index.php?title=نفخ&oldid=722467’’ مستعادہ منجانب