وقت

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
گھڑی

وَقت یا سَاعَت (انگریزی: Time)، پیمائشی نظام کا ایک جزء جس سے دو واقعات کا درمیانی وقفہ معلوم کیا جاتا ہے۔ علم طبیعیات میں اس کی تعریف زمان و مکاں کے لحاظ سے یوں کی جاتی ہے: ‘‘وقت دراصل غیر فضائی (nonspatial) اور باالفاظ دیگر زمانی (temporal) واقعات کا ایک تسلسل ہے جو کہ ناقابل للعکس (irreversible) ہوتے ہیں اور ماضی سے حال اور پھر مستقبل کی جانب رواں رہتے ہیں۔

بین الاقوامی نظام اکائیات میں وقت کی اِکائی ثانیہ (second) ہے. گھنٹہ (hour)، دِن (day)، ہفتہ (week)، مہینہ (month) اور سال (year) اِس کی بڑی اِکائیاں ہیں.

لفظ ‘‘گھنٹہ’’ گو کہ قواعدی لحاظ سے وقت کی ایک اِکائی ہے تاہم اِس سے مُراد ایک وقت بتانے والے آلے کے بھی ہے (دیکھئے مقالہ: گھنٹا)[1]. لفظ ‘‘گھڑی’’ بھی وقت کیلئے استعمال کیا جاتا ہے جس سے عام مُراد وقت کا چھوٹا سا حصّہ ہوتا ہے، یہ لفظ ایک ایسے چھوٹے آلے کیلئے بھی استعمال کیا جاتا ہے جس سے وقت معلوم کیا جاسکتا ہے اور اسے ہاتھ یا کلائی پر باندھ کر کہیں بھی آسانی سے لے جایا جاسکتا ہے (دیکھئے مقالہ: گھڑی)[2].

* پوری کائنات کا بحیثیت مجموعی کوئی یوم آغاز اور کوئی یوم فنا نہیں ہے ۔ کیوں کہ کائنات مجموعی طور پر ایک ٹھوس چیز نہیں ہے ، جیسے میز ، کرسی ۔ نہ یہ ایک بند نظام ہے ۔ ٹھوس اشیائ کا آغاز و انجام ہوتا 

ہے اور ان کا اپنا وقت ’ اپنا ‘ ، زمان ‘ ہوتا ہے ۔ ایک عنصری جزو کا اپنا وقت ہوتا ہے ۔ مثلاً نیوٹران کی زندگی سترہ منٹ ہے ۔ لیکن مختلف میسان اور ہائپران Mesons and Hyperons عموماً ایک سیکنڈ کا دس کروڑاں حصہ زندہ ہی رہتے ہیں ۔ ان کے ’ نظام ذندگی ‘ یا ’ زمانی ترتیب زندگی ‘ کے بارے میں ہم کچھ نہیں جانتے ہیں ۔ کیوںکہ یہ سارا عمل اتنے مختصر وقفے میں ہوتا ہے کہ ہم اس کو سمجھنے سے قاصر ہیں ۔ تاہم یہ اس کا اپنا وقت ہوتا ہے ، جس کا آغاز و انجام ہے ۔ اسی طرح انسان کا وقت اس کی اپنی زندگی کے پیمانے سے ہوتا ہے ۔ نظام شمسی کا اپنا وقت ہوتا ہے اور سب اوقات محدود اور متعین ہوتے ہیں ۔ چنانچہ کائنات وقت متعین ان ہی اندر ہی اپنا وجود رکھتا ہے ۔ ان سے باہر یا ان سے ماورا نہیں ۔ ایسا سوچنا خام خیالی ہے ۔ ایسا وقت جو متعین اوقات سے آزادنہ اپنا وجود رکھتا ہو محض ایک ذہنی تجرید ہے ۔ وقت من حثیت الوقت ، مادی الائشوںسے پاک صرف ایک تصور ہے ، جیسے میز ، کرسی ، مکان اور گھوڑے کا تصور مادی مثال کے بغیر ۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ سب تصورات ہمارے ذہن میں موجود تجریدیں ہیں ، معروضی حقیقتیں نہیں ۔ مابعد الطبیعات مفکرین ہمیشہ وقت کو ایک مربوط دریا کے طور پر پیش کرتے ہیں ۔ وہ کہتے ہیں وقت ایک بہتا ہوا دریا ہے ۔ اردو ادب میں اس کے لےے لمحہ سیال کی ترکیب بڑے ذوق و شوق سے پیش کی جاتی ہے ۔ ان کے خیال میں لمحہ سیال ازلی اور وقت ہے ہے ۔ سیکنڈ ، منٹ ، گھنٹہ دن ، مہینہ سال کی تقسیم سے ماورا ہے ۔ ان کے خیال میں وقت نظام شمسی کی ، زمین کی محوری اور مداری حرکتوں سے ناقابل تقسیم اکائی ہے جو قائم بالذات ہے ۔

  • مابعد الطبیعاتی مفکر یقین رکھتے ہیں کہ وقت مادی سلسلہ ہائے عمل کے اندر یا ان کے حوالے سے وجود نہیں رکھتا ہے ۔ بلکہ ہر قسم کے مادی اعمال سے باہر آزادنہ وجود رکھتا ہے ۔ یہ ہے ان کا ’ مطلق وقت کا تصور ۔ یہ تصور سراسر غلط ہے ۔ واقعی اگر ایسا کوئی ہمہ گیر وقت کا دریا مادی سلسلہ سے ہائے عمل سے باہر کوئی موجود ہے تو وہ یقناً وہ مادے سے ماورا ہے اور پھر یہ ماننا پڑے گا کہ اس قسم کا مادے سے بھی ورائ الورائ وقت خدا کا ہی دوسرا نام ہے ۔
  • زمان کو اگر دریا کہنا تو پھر اس کی سچی تصویر اس طرح ہوگی کہ یہ دریا بہتا ہوا لمحہ ہزاروں لاکھوں منبعوں سے نکل کر لاکھوں کروڑوں وادیوں ، میدانوں سے بہتا ہوا گزرے گا ۔ کائنات کا ’ دریائے وقت ‘ انہی سارے مادی تعینات کے اندر بہے سکتا ہے ، ان سے باہر نہیں ۔ تمام مطلق چیزیں اضافی چیزوں کے اندر وجود رکھ سکتی ہیں ، ان سے ماورا نہیں ۔۔ وقت کی لامتناہیت ، متعین وقت کے اندر وجود رکھتی ہے ۔ لاتعداد متعین اوقات کا ’ مجموعہ ‘ یا ’ کل ‘ مطلق وقت ہے ۔ وقت کی لامتناہیت اوور متناہیت کی یہی جدلیات ہے ۔
  • کوئی واحد کائناتی وقت جو مادی علائق سے آزاد ہو اپنا وجود نہیں رکھتا ہے ، سوائے ذہن انسانی میں بطور تجرید کے ، جیسے درخت ، میز کرسی کا تجریدی ، ذہنی تصور ۔ تو پھر اس کائنات کا کوئی آغاز و انجام بھی

ہے ؟ دوسرے الفاظ میں وقت کا کوئی آغاز و انجام ہے ؟ جدولیاتی سائندانوں کا جواب یہ ہے کہ آغاز بھی ہے اور آغاز نہیں بھی ہے ۔ اس طرح انجام بھی ہے اور انجام نہیں بھی ہے ۔ وقت ہمیشہ کسی ٹھوس ( یعنی مادی چیز ) کا ہوتا ہے ۔ وقت ٹھوس چیز ہے ۔ ( یعنی متعین اور لامتناہی ) اس قسم کے وقت کا آغاز بھی ہے اور انجام بھی ہے ۔ ایک انسان ابتدا بھی ہے اور انتہا بھی ہے ۔ نسل انسانی کی ابتدا بھی ہے اور انتہا بھی ہے ۔ نظام شمسی کی ابتدا بھی ہے اور انتہا بھی ہے ۔ اس قسم کا وقت جس کا تجربہ ہم دن ، مہینے اور سال کی شکل میں کرتے ہیں ، اس کی ابتدا بھی ہے اور انتہا بھی ۔ یہ وقت ہم نظام شمسی کے وجود سے وابستہ ہے ۔ لیکن اس قسم کے وقت سے پہلے کیا تھا ؟ یقناً کوئی اور وقت تھا ۔ جو دوسرے مادی سلسلہ ہائے عمل سے منسلک تھا ۔ اس کا اپنا نظام الاوقات تھا اور اپنی خصوصیات تھیں ، جو ہمارے نظام شمسی سے جداگانہ تھیں ۔ جس کا ہمیں ابھی تک کچھ علم نہیں ہے ۔ یہ جدید مغربی ماہرین فلکیات جو ’ مرگ حرارت ‘ کا نظریہ پیش کرتے ہیں وہ وقت کو حراری حرکیات کے توازن کی طرف پیش قدمی کے سلسلے سے منسلک کرتے ہیں ۔ چلئے ہم مان لیتے ہیں کہ حراری حراری حرکیات کا اپنا ایک وقت ہے ، تو جب حراری حرکیات کا توزان حاصل ہوجائے گا تو موجودہ حرارت اور حرکت ختم ہوجائے گی ۔ اگر موجودہ نظام شمسی ختم جائے گا تو اس کے ساتھ صرف اس مادی نظام سے منسلک وقت ختم ہوگا ۔ لیکن پھر بھی ایک وقت ہوگا ، جو نئے مادی سلسلہ ہائے سے منسلک ہوگا ۔ کیوں کہ یہ وقت کائنات کا واحد مطلق وقت نہیں ہے ، بلکہ ایک مادی نظام کا وقت ہے ۔ جس چیز کو مغربی ماہرین کائنات کہہ رہے ہیں وہ ایک مادی ، سلسلہ عمل کا نام ہے ۔ وقت کیا ہے ؟ ایک ٹھوس وقت مادی سلسلہ ہائے عمل کا نام ہے ۔ یہ ہمیشہ متناہی اور متعین ہوتا ہے اگر ایک عمل مرتا ہے تو دوسرا شروع ہوجاتا ہے ۔ صرف یہی نہیں ۔ یہ تبدیلی مقداری نہیں ہوتی ہے ۔ ایک مرحلے پر کیفیتی تبدیلی بھی رونما ہوتی ہے اور آئندہ بھی لامتناہی ایساہی ہوتا رہے گا ۔

  • ترتیب معین انصاری
  • ماخذ
  • یحیٰی امجد ۔ تاریخ پاکستان قدیم دور
  • نقاطی فہرست کی مَد



مزید دیکھئے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ اُردو روئے خط لُغت پر لفظ گھنٹا یا گھنٹہ کے مطالب
  2. ^ اُردو روئے خط لُغت پر لفظ گھڑی کے مفاہیم
‘‘http://ur.wikipedia.org/w/index.php?title=وقت&oldid=1248978’’ مستعادہ منجانب