پاکستان کے عام انتخابات 2008ء

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
پاکستان کے عام انتخابات 2008ء
Flag of پاکستان
2002 ←
18 فروری 2008
→ 2013

ٹرن آؤٹ 44 %
  Syed Gillani - World Economic Forum on the Middle East 2008.jpg CHAUDHRY NISAR ALI KHAN.jpeg Armitage and Shujaat Hussein.jpg
سیاسی جماعت پاکستان پیپلز پارٹی پاکستان مسلم لیگ (ن) پاکستان مسلم لیگ (ق)
حاصل شدہ ووٹ 10,606,486 6,781,445 7,989,817
فیصد 30.6% 19.6% 23.0%

وزیر اعظم قبل از انتخابات

محمد میاں سومرو
پاکستان مسلم لیگ (ق)

وزیر اعظم-عہدہ

یوسف رضا گیلانی
پاکستان پیپلز پارٹی

پاکستان

مقالہ بسلسلہ مضامین:
پاکستان کی حکومت اور سیاست



پاکستان میں 9ویں عام انتخابات کا انعقاد 18 فروری 2008ء کو ہوا۔

3 نومبر 2007ء کو صدر اور رئیسِ عملۂ فوج پرویز مشرف نے ملک بھر میں ہنگامی حالت نافذ کر دی۔ مشرف نے ملک کا آئین بھی معطل کر دیا میڈیا پر بھی پابندی عائد کر دی۔ انتخابات ابتدائی طور پر غیر معینہ مدت تک ملتوی کر ديئے گئے؛[1] تاہم، بعد از اِنہیں مقررہ وقت پر ہی منعقد کرنے کا سوچا گیا۔[2] 8 نومبر 2007ء کو مشرف نے اعلان کیا کہ آئندہ انتخابات کی تاریخ 15 فروری 2008ء ہو گی۔[3] بعد از، انتخابات کی تاریخ کبھی 9 جنوری 2008ء،[4] تو کبھی بدل کر 8 جنوری 2008ء[5] کر دی گئی۔ بینظیر بھٹو کے قتل کے بعد، الیکشن کمیشن کے ایک اجلاس میں یہ طے پایا گیا کہ 8 جنوری 2008ء کو انتخابات ممکن نہیں اور یہ یقینی طور پر 18 فروری 2008ء کو ہی ہوں گے۔[6]

انتخابات کے بعد مشرف نے اِس بات کا اعتراف کیا کے انتخابی عمل آزادانہ اور منصفانہ تھا، جبکہ اِن کی پارٹی، پاکستان مسلم لیگ (ق)، کو شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ اِن انتخابات میں بڑے بڑے دعوے کرنے والے چودھریوں کو عام شکست ہوئی۔ مشرف نے مسلم لیگ (ق) کی شکست کو تسلیم کرتے ہوئے نئی پارلیمان کے ساتھ کام کرنے کا وعدہ کیا۔ انتخابات کیلئے ووٹر ٹرن آؤٹ 35,170,435 (یعنی 44 فیصد) لوگوں کا تھا۔ 28 نشستوں (23 صوبائی اور 5 قومی نشستوں) کیلئے ضمنی انتخابات متعدد بار تاخیر کا شکار ہوتے رہے مگر بلآخر 26 جون 2008ء کو منعقد ہوئے۔

نتائج[ترمیم]

جماعتیں قومی اسمبلی پنجاب اسمبلی سندھ اسمبلی بلوچستان اسمبلی سرحد اسمبلی
پیپلز پارٹی 87 78 68 7 17
مسلم لیگ ن 67 103 0 0 5
مسلم لیگ ق 38 66 9 18 6
متحدہ قومی موومنٹ 20 0 38 0 0
عوامی نیشنل پارٹی 10 0 2 1 31
متحدہ مجلس عمل 3 2 0 6 9
پاکستان مسلم لیگ ف 4 3 7 0 0
بلوچستان نیشنل پارٹی عوامی 1 0 0 5 0
پیپلز پارٹی شیر پاؤ 1 0 0 0 5
نیشنل پیپلز پارٹی 2 0 3 0 0
آزاد 27 35 1 10 18
کل نشستیں 260 287 128 47 91

حکومتی تشکیل اور تنازعات[ترمیم]

دسمبر 2010ء میں متحدہ قومی موومنٹ کے 2 وزراء، وزیر برائے بندرگاہ و جہاز رانی بابر غوری اور وزیر برائے بیرون ملک مقیم پاکستانی فاروق ستار نے حکومتی اتحاد سے دستبرداری کا اعلان کر دیا۔ اِس دستبرداری کی وجوہات بدعنوانی، امن و امان کی بگڑتی صورتحال اور بڑھتی ہوئی مہنگائی تھیں۔ ساتھ میں ایم کیو ایم کے وزراء نے اپنی پارٹی کے خلاف ذولفقار مرزا کے اُس وقت کے بیانات پر بھی شدید خدشات اور نارازگی کا اظہار کیا۔[7]

مزید[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]