ہندوستانی پتھروں پر فارسی کتبے

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

"ہندوستانی پتھروں پر فارسی کتبے" ہندوستانی پتھروں پر فارسی کتبے ڈاکٹر علی اصغر حکمت شیرازی کی قیمتی کتابوں میں سے ایک ہے جو سال 1956 اور 1958 میں شائع ہوئی تھی .

مہنگی پتھر پر فارسی تحریری[ترمیم]

اس کتاب میں 80 سے زیادہ شاندار فارسی کتبے شامل ہے جو ہندوستان کے تاریخی یادگاروں میں پائے جاتے ہیں . ان میں سے کئی یادگار آج قومی ورثہ میں شامل کئے گئے ہیں اور ان کو یونیسکو کی طرف سے عالمی ورثہ کے طور پر رجسٹرڈ کیا گیا ہے . اس کتاب کو آدھی صدی سے زیادہ کے بعد دوبارہ شائع کیا گیا ہے . نئے ورژن میں ان شلالےكھو میں سے کئی کی تصاویر اور ایک نیا باب ( ساتواں باب ) شامل ہیںس باب کے پانچ حصے ہیں

Persian inscriptions on Indian monuments
Persian inscriptions on Indian monuments
Persian inscriptions on Indian monuments
بیبی کا مقبرہ۔

پہلا حصہ[ترمیم]

حیدرآباد کے کچھ بہترین شلالی دوسرا حصہ : فارسی بنگالی پتھروں پر تیسرا حصہ : گوركھاني فن تعمیر - مغل فن تعمیر یا ہندوستان کی ایرانی فن تعمیر چوتھا حصہ : فارسی زبان کی اہمیت اور ہندی اور اردو جیسی دیگر زبانوں پر اس کا اثر پاچوا حصہ : شاہی حکم کے کچھ نمونے - سرکاری ہدایات ، حیدرآباد اور دہلی کے عجائب گھروں میں پائے جانے والے فارسی تصاویر کی بہترین نقل.

اس نئے ورژن کو ڈاکٹر محمدعجم کی کوششوں سے پرنٹ کیا گیا ہے نئے ورژن کو ہندوستان میں " پوری دنیا کی وراثت پر فارسی اثرات " کے عنوان کے تحت پرنٹ کیا گیا ہے . یہ عنوان زیادہ مناسب اور صحیح ہے کیونکہ کچھ کتبے آج صرف پتھر نہیں ہیں بلکہ اصل میں انسانی کی عالمی اور روحانی ورثے کا ریکارڈ ہیں . نئے ورژن میں 120 تصاویر شامل ہیں .

The Nizamuddin Dargah, with Khusrow's tomb on the left

کتاب کے پبلیشر کا کہنا ہے : يه کتاب ان کی کوششوں کا نتیجہ ہے جو ہندوستان میں فارسی زبان کے ثقافتی اقدار کو خراج تحسین پیش کرنے کے جذبے سے انجام دئے گئے ہیں . آج فارسی زبان ہندوستان میں اپنی نقل و حرکت کو کھو چکی ہے اور صرف تاریخ اور عجائب گھروں تک ہی محدود ہو کر رہ گئی ہے . اگر حکمت نے اس کے علاوہ کوئی اور کتاب نہ لکھی ہوتی تو یہی کتاب ان کا نام امر دکھانے کا کافی تھی اور اگر كتابكھانے ابن سینا تابان اور اشاعت نے اس کتاب کو شائع نہ کیا ہوتا تو شاید یہ کتاب بھی بھلا دی گئی کتابوں میں سے ایک ہوتی .


اجمیر شریف میں خواجہ معین الدین چشتی غریب نواز کا مزار

اس کتاب کو تیسری بار شائع کرنے سے ہمارا مقصد یہ ہے کہ اس بہترین کتاب کو لائبریریوں کی سمتل سے باہر نکال کر سماج کے درمیان لایا جائے . وقت اور وسائل کی کمی کی وجہ سے اس کتاب میں شامل تصاویر کو عام کیمرے اور موبائل سے لیا گیا ہے . ایک ماہر ہی پتھروں کے شلالےكھو کی تصاویر اچھی طرح لے سکتا ہے اور یہ کام ایک محقق کی صلاحیت سے اوپر ہے . اس کام کے لئے سرکاری یا نجی شعبوں کی طرف سے مالی مدد کی بھی ضرورت ہے . افسوس کی بات ہے کہ نج کمپنیاں اور امیر طبقے ہر جگہ پیسہ خرچ کرتے ہوئے دیکھے جا سکتے ہیں ، لیکن یہ لوگ کتاب کی اشاعت میں اپنا پیسہ نہیں لگاتے .

Amir Khusrau's poems.

اس کتاب کی اشاعت کا مقصد ثقافتی حکام اور پروپكاريو کو اس جانب متوجہ کرنا ہے کہ وہ اس لوگ کتاب کی اشاعت کی جانب توجہ دے تاکہ مستقبل میں اس کتاب کو بہترین طریقے سے اور پیشہ ورانہ تصاویر کے ساتھ شائع کیا جا سکے. تعلیمی حلقوں میں اس کتاب کی کمی کو شدت کے ساتھ محسوس کیا جا رہا تھا . خاص طور پر فارسی زبان اور ادب کے طالب علموں نے اس کتاب کی بہت کمی محسوس کی . یہ ضرورت بھی محسوس کی گئی کہ ایک سچتر اور زیادہ مستند کتاب دوبارہ لکھی جائے جس میں ڈاکٹر حکمت کی طرف سے استعمال کئے گئے عربی الفاظ کو تبدیل کر دیا جائے کیونکہ آج کے فارسی بولنے والے لوگ ان الفاظ کو سمجھ نہیں پاتے . اس لئے ان الفاظ کو بدلا گیا اور کچھ چیزیں بڑھائی بھی گئی ہیں . لیکن ڈاکٹر حکمت کی کتاب کی اصل زبان ایمانداری کے ساتھ محفوظ رکھی گئی ہے .

شعر فارسی Taj Mahal, Mumtaz Mahal

یہ صرف پہلا قدم ہے . ڈاکٹر حکمت کی خواہش تھی کہ مستقبل میں آنے والے لوگ اس بارے میں مزید قدم اٹھائیں گے . نئے ورژن کی ایک کاپی انٹرنیٹ پر بھی اپ لوڈ کی گئی ہے جس کو مفت استعمال کیا جا سکتا ہے . لیکن اس پیج تعداد کتاب کی پیج تعداد سے مختلف ہے . اس کتاب میں شامل شلالےكھو کو مثال اس طرح ہیں .

منبع[ترمیم]

  • اندیشکده دریای پارس[1]

Iran India relations span centuries marked by meaningful interactions by Dr.Ajam.

  • [2]
  • Iranian Influence On Medieval Indian Architecture.by S.A.Rezvi.

[3]

[ترمیم]

مزید دیکھئے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]


Gallery[ترمیم]