ہیر رانجھا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
ہیر رانجھا کا مزار
رانجھا کا قبر

ہیر رانجھا ایک مشہور پنجابی لوک کہانی ہے۔ متعدد مصنفین و شعراء نے یہ کہانی لکھی, لیکن ان میں سے سب سے مشہور وارث شاہ کی لکھی ہوئی ہیر وارث شاہ ہے۔ جو 1776ء میں پنجاب میں لکھی گئ۔ اس طرح کی مزید کہانیوں میں سسی پنوں، سوہنی ماہیوال وغیرہ شامل ہیں۔

ثقافت[ترمیم]

ہیر رانجھا کی کہانی پر مبنی بھارت اور پاکستانمیں متعدد بار “ہیر رانجھا“ نام کی ایک فلمیں بن چکی ہیں۔[1] پنجاب میں تین صدیوں تک اس کو شادی بیاہ، میلوں، اور دیگر مواقع پر گایا اور سنا جاتا رہا ہے۔ اس کو پاک و ہند کے متعدد گلوکاروں نے گایا ہے۔ آج بھی پنجاب کے دیہاتوں میں بزرگ شخصیات اس سے لطف اندوز ہوتے ہیں۔

ہیر رانجھا گانے والے گلوکار[ترمیم]

اس کو پاک و ہند کے متعدد گلوکاروں نے گایا ہے.جن میں سے چند اہم نام یہ ہیں۔

  • عالم لوہار
  • طفیل نیازی
  • لیاقت عنایت
  • عنایت حسین بھٹی
  • اقبال باہو
  • مستری عبداللہ
  • عابدہ پروین
  • برکت سدھو
  • شوکت علی
  • ہما صفدر
  • سنیل سنگھ ڈوگرا
  • مدن گوپال سنگھ
  • گرداس مان
  • غلام علی
  • نور جہاں
  • ہنس راج ہنس
  • تیمور افغانی
  • موہنی حمید
  • حنا نصراللہ
  • چوہدری افضال[2]

ہیر رانجھا پر بننے والی فلمیں[ترمیم]

نمونہ کلام[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]