آئرن ڈوم

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
آئرن ڈوم
Flickr - Israel Defense Forces - Iron Dome Battery Deployed Near Ashkelon.jpg
 

قسم راکٹ شکن نظام
اصل ملک Flag of Israel.svg اسرائیل  ویکی ڈیٹا پر (P495) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استعمال کی مدت آغاز:2005  ویکی ڈیٹا پر (P729) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جنگیں فلسطین اور اسرائیل تنازعہ،  2014 اسرائیل و غزہ تنازعہ  ویکی ڈیٹا پر (P607) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تعداد 2   ویکی ڈیٹا پر (P1092) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
المواصفات
وزن 90 کلوگرام
لمبائی 3 میٹر
قطر 160 ملی میٹر  ویکی ڈیٹا پر (P2386) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

آئرن ڈوم (عبرانی میں :כיפת ברזל ‎ kipat barzelانگریزی میں :Iron Dome) اسرائیل کا بنایا گیا تین سو کلومیٹر تک مارکرنے والا اینٹی میزائل سسٹم جسے حزب اللہ اور حماس کی جانب سے پھینکے جانے والے راکٹوں کو تباہ کرنے کے لیے استعمال کیا گیا اور اسے اسرائیلی کمپنی Rafael Advanced Defense Systems نے بنایا ہے۔ویسے آئرن ڈوم سسٹم دنیا کے 6 ملکوں میں ہے لیکن اسرائیل کا آئرن ڈوم سب سے زیادہ اسمارٹ ہے [1]

تفصیل[ترمیم]

آئرن ڈوم راکٹ شکن نظام ہے جو اپنے ہدف کو راڈار کی مدد سے تلاش کرتا ہے۔ وہ مخالف راکٹوں کو تلاش کرنے اور انہيں نشانہ بنانے ميں 20 سے لے کر 45 سيکنڈ تک صرف کرتا ہے۔ آئرن ڈوم کے عمودی رخ کيے ہوئے ڈھانچے سے داغا جانے والا کوئی بھی راکٹ تين ميٹر لمبا ہوتا ہے اور ہر بار يکے بعد ديگرے دو راکٹ پھينکے جاتے ہيں۔ غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کے مطابق فائر کیے گئے 75 راکٹ میں سے 72 راکٹ کو آئرن ڈوم فضا میں تباہ کرنے میں کامیاب رہا لیکن صرف 3 راکٹ ایسے تھے جو اسرائیل میں گرے۔ آئرن ڈوم نامی سسٹم کو ایک اسلحہ ساز کمپنی نے تیار کیا ہے جس پر تقریبا 210 ملین ڈالر کی لاگت ہے۔ اسرائیل لبنان جنگ کے بعد اسرائیلی وزیر دفاع عمير بيرتز نے حزب اللہ کی جانب سے راکٹ حملوں سے بچنے کے لیے فروری 2007 میں آئرن ڈوم کی تنصیب کا فیصلہ کیا تھا۔ آئرن ڈوم سسٹم شروع میں تو ناکام رہا لیکن 2011 اور پھر امریکی امداد کے بعد 2012 میں اسے کامیاب قراردیا گیا۔ کیونکہ اسرائیلی فضائیہ نے اسے ٹیک اوور کرتے ہوئے اپ گریڈ کیا تھا۔

استعمال کرنے والا ملک[ترمیم]

  1. "اسرائیل کا آئرن ڈوم سسٹم کیا ہے مکمل حقائق".