آئین پاکستان میں چوتھی ترمیم

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

آئین پاکستان میں چوتھی ترمیم 21 نومبر 1975ء کو نافذ ہو گئیں جن کی رو سے پارلیمان میں اقلیتوں کے لیے مختص نشستوں کا از سر نو جائزہ لیا گیا اور اس کے علاوہ کسی بھی شخص کی ضمانت قبل از گرفتاری کے حوالے سے کسی بھی ذیلی عدالت کے اختیارات میں کمی کر دی گئی، یعنی کہ کسی بھی سنگین جرم میں ملوث مبینہ ملزم کو ضمانت دینے کے عدالتی اختیارات کو ختم کر دیا گیا۔