آتیشی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
آتیشی
تفصیل=

Advisor to Deputy Chief Minister of Delhi on Education
مدت منصب
جولائی 2015 – 17 اپریل 2018
معلومات شخصیت
پیدائش 8 جون 1981 (38 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
دہلی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
رہائش دہلی
شہریت Flag of India.svg بھارت[1]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
جماعت عام آدمی پارٹی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں سیاسی جماعت کی رکنیت (P102) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
مادر علمی میگڈالن کالج[1]
سینٹ اسٹیفنز کالج، دہلی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ سیاست دان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر

آتیشی مارلینا سنگھ (انگریزی: Atishi Marlena Singh)[4] بھارت کی سیاست دان اور معلمہ ہیں اور سیاست میں فعالیت پسندی کے لیے معروف ہیں۔ وہ عام آدمی پارٹی کی بہت فعال رکن ہیں۔[2][5] انہوں نے نائب وزیر اعلیٰ منیش سیسودیا کی خصوصی مشیرہ کے طور پر جولائی 2015ء تا 17 اپریل 2018ء کام کیا۔ ان کا مرکزی رجحان تعلیم کی طرف تھا۔ 17 اپریل کو وزارت داخلہ نے انہیں اس عہدہ سے برطرف کردیا۔[6] منیش سیسودیا نے انہیں دہلی کی تعلیمی ترقی کا معمار کہا ہے۔[7]

ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

ان کی ولادت 8 جولائی 1981ء کو دہلی یونیورسٹی کے پروفیسر وجے سنگھ اور ترپتا واہی کے گھر ہوئی۔[8] ان کے والدین نے کارل مارکس اور ولادیمیر لینن کے نام پر ان کا نام آتیشی مارلینا رکھا۔ انہوں نے اپنے نام سے مارلینا کو ہٹا دیا کیونکہ وہ چاہتی تھیں کہ لوگ انہیں ان کے کام سے یاد کریں نہ کہ نام سے۔ref name=":name"/>[9] ان کی پرورش اور اسکول کی تعلیم دہلی میں مکمل ہوئی۔ 2001ء میں انہوں نے سینٹ اسٹیفن کالج، دہلی سے تاریخ میں بی اے کی ڈگری حاصل کی۔ اس سال وہ دہلی یونیورسٹی کی فائق طالبہ رہی تھیں۔ اس کے بعد اوکسفرڈ یونیورسٹی چلی گئیں اور 2003ء میں تاریخ میں ایم اے کی ڈگری لی۔ 2005ء میں ان کا داخلہ میگڈالن کالج، اوکسفرڈ میں ہوگیا۔[10] ۔[11][12]

پیشہ ورانہ زندگی[ترمیم]

انہوں نے چند دنوں آندھرا پردیش میں تاریخ پڑھایا۔ 2006ء میں مدھیہ پردیش کے بھوپال کے قریب ایک گاؤں میں چلی گئیں۔ وہاں وہ مختلف رفاہی کاموں میں مصروف رہیں اور وہیں ان کی ملاقات عام آدمی پارٹی کے کارکنان سے ہوئی۔ یہیں سے ان کے سیاسی سفر کا آغاز ہوتا ہے۔[13]

سیاسی سفر[ترمیم]

آتییشی کو ہمیشہ سماجی خدمات مین دلچسپی رہی ہے۔ 2013ء میں عام آدمی پارٹی کی تشکیم میں حصہ لیا۔ اس پارٹی کی محرک 2011 بدعنوانی مخالف تحریک بنی۔[11] پارٹی کے اندر انہیں کئی عہدے ملے۔ 2013ء میں انہیں پارٹی کا ترجمان بنایا گیا۔

بھارت کے عام انتخابات، 2019ء[ترمیم]

2019ء کے انتخابات کے لیے انہیں جنوب مغربی دہلی کا نگراں بنایا گیا۔ خود انہوں نے مشرقی دہلی لوک سبھا حلقہ سے عام آدمی پارٹی کے ٹکٹ پر چناؤ لڑنے کا فیصلہ کیا لیکن وہ بھارتیہ جنتا پارٹی کے اسٹار امیدوار گوتم گمبھیر سے ہار گئیں۔

حکومت[ترمیم]

دہلی کے وزیر تعلیم منیش سیسودیا کی مشیر خاص بنائے جانے کے بعد انہوں نے دہلی میں تعلیم کو ایک نئی راہ دی۔ آتیشی نے ایک روپیہ ماہانہ تنخواہ پر وزارت تعلیم میں کام کیا مگر اپریل 2018ء کو انہیں برطرف کر دیا گیا۔ حکومت دہلی کی موہلہ سبھائیں آتیشی کی نگرانی میں منعقد ہوا کرتی تھیں۔ اس سبھا کا مقصد حکومت میں شہریوں کی شمولیت کو یقینی بنانا اور ان سے ان کی ضروریات جان کر انہیں پورا کرنا تھا۔[14] 2016ء میں دہلی کے گورنر نے اس پروجیکٹ کو مسترد کردیا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب https://www.rhodeshouse.ox.ac.uk/community/list-of-rhodes-scholars/ — اخذ شدہ بتاریخ: 3 فروری 2018
  2. ^ ا ب "Atishi Marlena, Delhi's 'education reformer'، is AAP Lok Sabha candidate from East Delhi"۔ Financial Times۔ 28 اگست 2018۔
  3. "Meet the young leaders hoping to infuse vitality into our democracy"۔ Hindustan Times۔ 20 جون 2015۔
  4. "Atishi drops her name Marlena"۔ Hindustan Times۔ 28 اگست 2018۔
  5. "Political Affairs Committee"۔ اخذ شدہ بتاریخ 2016-09-27۔
  6. "Support Grows For Atishi Marlena, Fired By Centre As Delhi Adviser"۔ NDTV.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 2018-06-10۔
  7. "'What Kind of Patriotism is This': Manish Sisodia Pens Angry Letter to PM Modi"۔ News18۔ اخذ شدہ بتاریخ 2018-06-10۔
  8. Anuradha Raman۔ "Delhi University professors face intense questioning"۔ The Hindu۔ اخذ شدہ بتاریخ ستمبر 2, 2016۔
  9. Akash Banerjee۔ "Six lessons in 'affordable politics': AAP victory shows how elections can be fought on a shoestring"۔ Scroll.In۔ اخذ شدہ بتاریخ فروری 10, 2015۔
  10. "AAP's Atishi Marlena drops second name after being announced as party's 1st candidate for 2019 Lok Sabha polls"۔ Times Now۔ 2018-08-28۔ اخذ شدہ بتاریخ 2019-02-11۔
  11. ^ ا ب "The Aam Aadmi of AAP: 5 personal stories of sacrifice, triumph and validation"۔ The Economic Times۔ اخذ شدہ بتاریخ 2016-09-04۔
  12. "Rhodes Scholars: complete list, 1903–2015"۔ The Rhodes Trust۔ مورخہ 2013-11-06 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2016-09-04۔
  13. "FACE TO FACE: Atishi Marlena, Aam Aadmi Party | Hard News"۔ hardnewsmedia.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 2015-02-14۔
  14. "Giving people's money back to them to spend on their own"۔ Governance Now۔ 2016-05-06۔ اخذ شدہ بتاریخ 2016-12-14۔