آرامی زبان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(آرامی زبانیں سے رجوع مکرر)
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
آرامی
ܐܪܡܝܐ‎, ארמית
Arāmît
تلفظ arɑmiθ, arɑmit,
ɑrɑmɑjɑ, ɔrɔmɔjɔ
مقامی 

ایران ، عراق ، اسرائیل ، سریا ، ترکی ، اردن ، فلسطین

مقامی متکلمین
500,000 (1994–1996)
آرامی خط ، سریانی خط ، عبرانی خط ، مندائی خط ، عربی خط (vernacular) with a handful of inscriptions found in Demotic[1] and Chinese[2]
زبان رموز
آیزو 639-3 مختلف:
arc – Imperial Aramaic (700–300 BC)
oar – Old Aramaic (before 700 BC)
aii – آشوری جدید آرامی
aij – Lishanid Noshan
amw – Western Neo-Aramaic
bhn – Bohtan Neo-Aramaic
bjf – Barzani Jewish Neo-Aramaic
cld – Chaldean Neo-Aramaic
hrt – Hértevin
huy – Hulaulá
jpa – Jewish Palestinian Aramaic
kqd – Koy Sanjaq Surat
lhs – Mlahsô
lsd – Lishana Deni
mid – Modern Mandaic
myz – Classical Mandaic
sam – Samaritan Aramaic
syc – Syriac (classical)
syn – Senaya
tmr – Jewish Babylonian Aramaic
trg – Lishán Didán
tru – Turoyo
xrm – Armazic (0–200 AD)
arc Imperial Aramaic (700–300 BC)
  oar Old Aramaic (before 700 BC)
  myz Classical Mandaic
  xrm Armazic (0–200 AD)
  jpa Jewish Palestinian Aramaic (200– AD)
کرہ لسانی 12-AAA
اس مضمون میں بین الاقوامی اصواتی ابجدیہ اصواتی علامات شامل ہیں۔ بغیر موزوں معاونتکے بغیر آپ کو یونیکوڈ کی بجائے حروف کے بجائے سوالیہ نشان، خانے یا دیگر نشانات نظر آسکتے ہیں۔ بین الاقوامی اصواتی ابجدیہ علامات پر ایک تعارفی ہدایت کے لیے دیکھیے معاونت:با ابجدیہ۔

عراق ، شام ، کنعان ، فلسطین، فونیشیا اور جزیرہ نمائے عرب میں جو عرب اقوام ہیں، وہ تمام سامی الاصل ہیں۔ کہا جاتا ہے کہ یہ تمام قومیں سام بن نوح کی اولاد ہیں۔ اس لیے سامی کہلاتی ہیں۔ان ملکوں کی مختلف زبانوں (موجودہ قدیم دونوں) کو سامی زبانیں کہتے ہیں۔ اس کے علاوہ ملک سیریا یا شام کی زرخیزی اوراس کے درالحکومت (دمشق کی دلفریبی کے باعث اس ملک کو ارم یا باغ ارم بھی کہتے ہیں۔ اس لیے سامی یا سریانی کا تیسرا نام آرامی ہے۔ کہا جاتا ہے کہ حضرت نوح کے بیٹے سام کا مسکن شام ہی تھا اس لیے تمام سامی قوموں کی مختلف بولیوں کا اجتماعی نام سامی، سریانی اور آرامی ہے۔ زبانوں کے سامی گروہ میں فونیقی، اسیری ، کلدی، عبرانی، بابلی،حطیطی، زبانیں شامل ہیں۔ حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے وقت فلسطین، کنعان میں آرامی زبان ہی بولی جاتی تھی۔ جو عبرانی زبان کی ایک شاخ ہے۔ موجودہ عربی قدیم آرامی ہی کی ایک ترمیم شدہ صورت ہے۔ البتہ رسم الخط میں تبدیلی ہوگئی ہے۔ لیکن یہ تبدیلی اسلام سے بہت پہلے رونما ہوئی تھی۔

حضور پاک صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں مکہ مکرّمہ اور اس کے گرد دوسرے قصبوں میں مقیم عیسائی آرامی بولتے تھے۔ لہذا قرآن کریم کے آیات میں کئی آرامی نژاد الفاظ موجود ہیں۔ اس کی کئی وجوھات ہو سکتی ہیں—ایک تو یہ کہ چونکہ قرآن شریف کئی مواقع پر اہلِ کتاب سے مخاطب ہے اس لیے ان ہی کی زبان کے کلمات موجود ہیں تاکہ وہ ان آیات کو اپنی کتب میں موجود ان موضوعات کی روشنی میں بہتر سمجھ سکیں۔ دوسرا اس لیے کہ مکہ میں ابھرتی ہوئی مسلم امّت عرب کافروں کی نصبت اہلِ کتاب سے شناختی لحاظ سے زیادہ منسلک تھی اور قرآن میں موجود یہ لفظ اس بات کی تائیید کرتے ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. The Aramaic Text in Demotic Script: The Liturgy of a New Year's Festival Imported from Bethel to Syene by Exiles from Rash – On JSTOR
  2. Manichaean Aramaic in the Chinese Hymnscroll