آزادہ شفیق

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
آزادہ شفیق
Princess Azadeh Shafiq of Iran.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1951  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ایران  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 23 فروری 2011 (59–60 سال)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیرس  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات ابیضاض  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات طبعی موت  ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Iran.svg ایران  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والدہ اشرف پہلوی  ویکی ڈیٹا پر (P25) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
شہریار شفیق  ویکی ڈیٹا پر (P3373) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
خاندان شاہی ایرانی ریاست  ویکی ڈیٹا پر (P53) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دیگر معلومات
پیشہ سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

آزادہ شفیق (1951 – 23 فروری 2011ء) ایک ایرانی شاہی اور پہلوی خاندان کی رکن اور اشرف پہلوی کی بیٹی تھیں۔ ایرانی انقلاب کے بعد جس نے اپنے چچا محمد رضا پہلوی کا تختہ الٹ دیا، وہ پیرس میں جلاوطن ہوگئیں اور ایران میں اسلامی حکومت کی مخالف سرگرمیوں میں شامل ہوگئیں۔ پیرس میں ایک بادشاہت پسند گروپ فری ایران موومنٹ کی سربراہی کی۔ 1979ء میں انھوں نے ہفتہ وار میگزین ایران آزاد شائع کرنا شروع کیا جو 1980ء کی دہائی میں ختم ہو گیا تھا۔ پیرس میں لیوکیمیا کے باعث ان کا انتقال ہوا۔

ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

شفیق 1951ء میں پیدا ہوئیں وہ، شاہ محمد رضا کی جڑواں بہن، اشرف پہلوی اور ان کے دوسرے شوہر احمد شفیق، جو مصری تھے، ان کی بیٹی تھیں۔ [2] ان کا ایک بھائی شہریار تھا۔ [3] اگرچہ ان کے والدین کی 1960ء میں طلاق ہو گئی تھی، لیکن اس کے والد مصر واپس نہیں آئے اور اپنے بچوں کی پرورش کے لیے تہران میں رہے۔ [3]

ان کی تعلیم تہران اور فرانس میں جرمن اسکول میں ہوئی۔ [3]

ذاتی زندگی اور سرگرمیاں[ترمیم]

شفیق نے دو شادیاں کیں۔ ان کی شادی فرشاد واحد سے 1972ء میں ہوئی اور ان کا ایک بیٹا کامران (پیدائش 1973ء) تھا۔ 1975ء میں انھوں نے واحد سے طلاق لے لی۔ بعد میں انھوں نے ایک سابق ایرانی فوجی افسر سے شادی کی۔

وہ ایرانی انقلاب کے بعد پیرس میں رہنے لگی تھیں۔ بعد میں ان کا بھائی ان کے ساتھ شامل ہوا اور انہوں نے اشرف پہلوی کی رہائش گاہ رے پرگولسے کے قریب بانٹ لی۔ [3] ان دونوں نے پہلوی خاندان کے پرنسپل ترجمان کے طور پر کام کیا۔ [4] وہ اسلامی حکومت کے خلاف مظاہروں اور مخالفانہ سرگرمیوں میں حصہ لیتی تھیں۔ انھوں نے ایران میں بادشاہت کی بحالی کی کوششوں کی حمایت کی [5] اور پیرس میں ایک بادشاہت پسند گروپ فری ایران موومنٹ کی سربراہی کی۔ 1979ء میں انھوں نے ہفتہ وار میگزین ایران آزاد شائع کرنا شروع کیا جو 1980ء کی دہائی میں ختم ہو گیا تھا۔ [6] انھوں نے 1984ء سے 1991ء تک ترکی میں ایرانی کمیونٹی کے ساتھ سماجی اور انسان دوست کارکن کے طور پر خدمات انجام دیں

موت[ترمیم]

شفیق کا انتقال 23 فروری 2011ء [2] پیرس میں لیوکیمیا کے باعث ہوا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Old regime death: — صفحہ: 25 — شمارہ: 3 — شائع شدہ از: 2011
  2. ^ ا ب Darius Kadivar (26 فروری 2011). "Tribute to Princess Azadeh Shafigh Pahlavi (1951–2011)". Iranian. اخذ شدہ بتاریخ 4 اگست 2013. 
  3. ^ ا ب پ ت Cyrus Kadivar (31 اکتوبر 2003). "Villa Dupont". Iranian. اخذ شدہ بتاریخ 4 اگست 2013.  [مردہ ربط]
  4. "No Safe Haven: Iran's Global Assassination Campaign". Iran Human Rights. 2008. اخذ شدہ بتاریخ 4 اگست 2013. 
  5. Michael M. J. Fischer (15 جولائی 2003). Iran: From Religious Dispute to Revolution. Madison: Univ of Wisconsin Press. صفحہ 239. ISBN 978-0-299-18473-5.