آنندمئی ماں

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
شری آنندمئی ماں
Sri Anandamoyi Ma.jpg
آنندمئی ماں کی اسٹوڈیو فوٹو
ذاتی
پیدائش
نرملا سندری[1]

30 اپریل 1896(1896-04-30)
کھیورہ، برہمنباریا، بنگال، برطانوی ہندوستان (موجودہ بنگلہ دیش)
وفات27 اگست 1982(1982-80-27) (عمر  86 سال)
کشن پور، دیہرا دون اتراکھنڈ، بھارت
مذہبہندومت
فلسفہتنتر، آتما گیان

آنندمئی ماں (30 اپریل 1896ء – 27 اگست 1982ء) بنگال، ہندوستان کی روحانی رہنما تھیں۔ شیو آنند سرسوتی نے ان کو ”ہندوستانی مٹی کا کامل ترین پھول“ قرار دیا تھا۔[2] آنندمئی کے پیروکار ان کو پیش بین، جھاڑ پھونک کے ذریعے علاج کرنے والی اور معجزے کرنے والی سمجھتے تھے۔[3] پرم ہنس یوگانند نے سنسکرت خطاب ”آنندمئی“ کا ترجمہ انگریزی میں ”Joy-permeated“ کیا جس کی اردو ”خوشی سے سرشار“ ہے۔ 1920ء میں ان کے عقیدت مندوں نے یہ نام ان کی خدائی خوشی کی جاودانی حالت کو بیان کرنے کے لیے دیا۔[4]

ابتدائی زندگی[ترمیم]

آنندمئی کا پیدائشی نام ”نرملا سُندری دیوی“ (নির্মলা সুন্দরী؛ نرمولا شُندری، اردو: "معصوم حسین دیوی") تھا۔ نرملا کی پیدائش 30 اپریل 1896ء کو برہمنباریا ضلع کے گاؤں کھیورہ (موجودہ بنگلہ دیش) کے کٹر ویشنوی براہمن جوڑے ”بیپِن بھٹاچاریہ“ اور ”موکشدا سندی دیوی“ کے ہاں ہوئی تھی۔[1][4] ان کے والد کا درحقیقت تریپورہ کے ودیاکت سے تعلق تھا، وہ ایک ویشنوی نغمہ پرداز تھے اور بھگوان وشنو سے گہری عقیدت رکھنے کی وجہ سے مشہور تھے۔ ماں باپ دونوں کا تعلق نامی گرامی خاندانوں سے تھا مگر اس کے باوجود وہ غربت کی حالت میں تھے۔ نرملا لگ بھگ دو سال تک گاؤں کے اسکول گئیں۔[5] ان کے اساتذہ ان کی صلاحیت سے خوش تھے، ان کی والدہ اپنی بیٹی کی دماغی بڑھتی ہوئی قوت کی وجہ سے پریشان تھیں کیونکہ ان کا برتاؤ بے پروا اور شاد تھا۔ جب نرملا کی والدہ ایک دفعہ شدید بیمار ہوگئیں تو قریبی رشتے داروں بھی بچی کی بے پروائی دیکھ کر حیران ہوئے۔

1908ء میں دیہی رسوم کے تحت 13 سال کی عمر میں ان کی شادی وکرم پور کے رامنی موہن چکرورتی سے ہوئی، بعد میں آنندمئی نے شوہر کو ”بھولا ناتھ“ کا نام دیا تھا۔[5][6] شادی کے بعد وہ جیٹھ کے گھر میں پانچ سالوں تک رہیں، وہ گھریلو کام نہیں کرتی تھیں اور زیادہ تر وقت دھیان (مراقبہ) کی حالت میں ہوتی تھیں۔ ان کے ایک دیندار پڑوسی ہرکمار (جو ایک مجنون اور دیوانہ تھا) نے انھیں ”روحانی فوقیت“ والی کہا، انھیں ”ماں“ کہنا شروع کر دیا اور صبح سے پہلے و شام میں ان کی انکسار وعاجزی سے تعظیم کرنا شروع کر دی۔[7]

جب نرملا 17 سال کی ہوئیں تو وہ اپنے شوہر کے ساتھ رہنے کے لیے گئیں۔ ان کا شوہر اشٹ گرام میں کام کرتے تھے۔ 1918ء میں وہ دونوں باجت پور چلے گئے اور وہاں 1924ء تک رہے۔ ان دونوں کے بیچ کوئی جنسی رشتہ نہیں تھا جب بھی ان کا شوہر رامنی جنسی رشتہ قائم کرنا چاہتا تو نرملا کے جسم میں موت کی خصوصیات نمودار ہونا شروع ہو جاتی تھیں۔[8]

ڈھاکہ[ترمیم]

Anandamayi Ma -- painting.jpg

1924ء میں وہ اپنے شوہر کے ہمراہ شاہ باغ چلی گئیں جہاں ان کے شوہر کو ڈھاکہ کے نواب کے باغات کے محافظ کی نوکری ملی۔[6] اس عرصے کے دوران میں نرملا کیرتنوں میں جایا کرتی تھیں۔[5]

جیوتش چندر رائے المعروف ”بھائی جی“ ان کے پہلے اور قریبی مرید تھے، وہ پہلے شخص تھے جنہوں نے نرملا کو ”آنندمئی ماں“ یعنی ”خوشی سے سرشار ماں“ کہا۔ جیوتش چندر رائے کا 1929ء میں آنندمئی ماں کے لیے رمنا کے کالی مندر کی حدود میں آشرم تعمیر کرنے میں انتہائی اہم کردار تھا۔[9]

1926ء میں آنندمئی نے سِدیشوری علاقے کے سابقہ متروکہ قدیم کالی مندر میں دوبار بحال کیا۔[6]

وفات[ترمیم]

آنندمئی ماں آشرم, ہردوار (کنکھل)

آنندمئی ماں نے 27 اگست 1982ء کو دیہرا دون میں وفات پائی اور بالآخر 29 اگست 1982ء[1] کو ان کی سمادھی (مزار) تعمیر کی گئی۔ ان کی سمادھی ہردوار، شمالی بھارت میں واقع ان کے کنکھل آشرم کے صحن میں ہے۔[6][10]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ Hawley، John Stratton (2006). "Anandamayi Ma: God came as a Women". The life of Hinduism. Univ. of California Press. صفحات 173–183. ISBN 0520249135. 
  2. Mother, as Seen by Her Devotees. Shree Shree Anandamayee Sangha. 1995. 
  3. Chaudhuri، Narayan (1986). That Compassionate Touch of Ma Anandamayee. Motilal Banarsidass Publ. ISBN 978-81-208-0204-9.  pp. 16-18; pp. 24-26; pp. 129-133
  4. ^ ا ب Dr. Lipski، Alexander (1993). "Life and Teaching of Sri Anandamayi Ma". Motillal Benarsidass Publishers. 24 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  5. ^ ا ب پ Introduction آرکائیو شدہ 4 مارچ 2016 بذریعہ وے بیک مشین, As the Flower Sheds Its Fragrance, Shree Shree Ma Anadamayee Sangha, Kankhal, Haridwar; Retrieved: 2007-12-08
  6. ^ ا ب پ ت Ghosh، Monoranjan (2012). "Anandamayi, Ma". In Islam، Sirajul؛ Jamal، Ahmed A. Banglapedia: National Encyclopedia of Bangladesh (ایڈیشن دوسری). Asiatic Society of Bangladesh. 
  7. Richard Lannoy; Ananadamayi: Her Life and Wisdom آرکائیو شدہ 30 نومبر 2016 بذریعہ وے بیک مشین; Element Books Ltd; 1996; آئی ایس بی این 1-85230-914-8
  8. McDaniel، June (1989). The Madness of the Saints: Ecstatic Religion in Bengal. University of Chicago Press. صفحہ 194. ISBN 978-0-226-55723-6. 
  9. Lipski, p. 66.
  10. Life History: Chronology of Mothers life آرکائیو شدہ 21 اپریل 2016 بذریعہ وے بیک مشین Anandamayi Ma Ashram Official website. "Prime Minister Smt. Indira Gandhi arrives at noon, Ma's divine body given Maha Samadhi at about 1.30 pm near the previous site of an ancient Pipal tree, under which she used to sit on many occasions and give darshan."

کتابیات[ترمیم]

  • Banerjee، Shyamananda (1973). A Mystic Sage: Ma Anandamayi: Ma Anandamayi. s.n. 
  • Bhaiji (1975). Sad Vani: A Collection of the Teaching of Sri Anandamayi Ma. translated by Swami Atmananda. Shree Shree Anandamayee Charitable Society. 
  • Bhaiji. Matri Vani — From the Wisdom of Sri Anandamayi Ma. translated by Swami Atmananda. 
  • Chaudhuri، Narayan (1986). That Compassionate Touch of Ma Anandamayee. Delhi: Motilal Banarsidass. ISBN 81-208-0204-7. 
  • Datta، Amulya Kumar. In Association with Sri Ma Anandamayi. 
  • Fitzgerald، Joseph؛ Alexander Lipski (2007). The Essential Sri Anandamayi Ma: Life and Teaching of a 20th Century Indian Saint. World Wisdom. ISBN 978-1-933316-41-3. 
  • Ganguli، Anil. Anandamayi Ma the Mother Bliss-incarnate. 
  • Ganguly، Adwaita P (1996). Yuga-Avatar Sri Sri Ma Anandamayee and Universal Religion. VRC Publications. ISBN 81-87530-00-6. 
  • Giri، Gurupriya Ananda. Sri Ma Anandamayi. 
  • Hallstrom، Lisa Lassell (1999). Mother of Bliss. Oxford University Press. ISBN 0-19-511647-X. 
  • Joshi، Hari Ram (1999). Ma Anandamayi Lila, Memoirs of Hari Ram Joshi. Kolkata: Shree Shree Anandamayee Charitable Society. 
  • Kaviraj، Gopinath (1967). Mother as Seen by Her Devotees. Varanasi: Shree Shree Anandamayee Sangha. 
  • Lipski، Alexander (1983). Life and Teachings of Sri Anandamayi ma. Orient Book Distributors. 
  • Maschmann، Melita (2002). Encountering Bliss: My Journey Through India with Anandamayi Ma. trans. S.B. Shrotri. Delhi: Motilal Banarsidass. ISBN 81-208-1541-6. 
  • Mukerji، Bithika (1998). A Bird on the Wing — Life and Teachings of Sri Ma Anandamayi. Sri Satguru Publications. ISBN 81-7030-577-2. 
  • Mukerji، Bithika (2002). My Days with Sri Ma Anandamayi. India: Indica Books. ISBN 81-86569-27-8. 
  • Mukerji، Bithika (1970). From the Life of Sri Anandamayi Ma. India: Sri Sri Anandamayi Sangha, Varanasi. 
  • Ramananda، Swami (2002). Bliss Now: My Journey with Sri Anandamayi Ma. India: Select Books. ISBN 978-1-59079-019-9. 
  • Ray، J. Mother As Revealed To Me, Bhaiji. 
  • Yogananda، Paramhansa (1946). Autobiography of a Yogi. New York: Philosophical Library.