ابراهيم بو ہندی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
إبراهيم بوهندی
شحصیت
پیدایشی نام ابراہیم عبدالله سيف بوھندی
پیدائش سنة 1948 (عمر 71–72 )  تعديل قيمة خاصية (P569) في ويكي بيانات
محرق   تعديل قيمة خاصية (P19) في ويكي بيانات
مذہب اسلام
شہریت Flag of Bahrain (1820–1932).svg بحرين اور اس کی نو آبادیاں[لغات أخرى] (1948–1971)
Flag of Bahrain.svg بحرين (1971–)  تعديل قيمة خاصية (P27) في ويكي بيانات
رکن تنظیم بحرینی ادبا   تعديل قيمة خاصية (P463) في ويكي بيانات
عملی زندگی
تخلص ابراہیم بوهندی
پیشہ شاعر ،  ڈرامہ نویس ، صحافی  تعديل قيمة خاصية (P106) في ويكي بيانات
زبان عربی (بحرینی لہجہ)   تعديل قيمة خاصية (P1412) في ويكي بيانات
ملازمت بحرین کا قومی بنک   تعديل قيمة خاصية (P108) في ويكي بيانات
متاثر شیکسپیئر، ایلیا ابوماضی، سوفوکلیز، معروف الرصافی

ابراہیم عبد اللہ بوہندی (1948) ، بحرینی شاعر اور ڈراما نگار، محرق میں پیدا ہوئے۔ مدرسہ بحرینیہ سے تجارت میں ڈپلوما حاصل کیا۔ انہوں نے 1968 سے مختلف بینکوں میں ملازمت کی۔ بحرین اور کویت کے نیشنل بینک میں مالیات اور سرمایہ کاری کے اسسٹنٹ جنرل منیجر کے طور پر خدمات انجام دیں. وہ بحرینی ادیبوں کی تنظیم اور پہلے بحرینی تھیٹر کے رکن ہے۔ انہوں نے بہت سی نثری اور شعری کتب لکھیں۔[1][2]

حالات زندگی[ترمیم]

ابراہیم عبد اللہ بو ہندی 1367 ھ / 1948 ء میں محرق (اسے فريج الفاضل بھی کہا جاتا ہے) کے مقام پر پیدا ہوئے۔ اس نے محرق کے اسکولوں میں تعلیم حاصل کی یہاں تک کہ اس نے ثانوی تعلیم شعبہ تجارت میں مکمل کرلی اور تجارتی ڈپلوما حاصل کیا۔ [2] انہوں نے 1968 سے مختلف بینکوں میں ملازمت کی ، بحرین اور کویت کے نیشنل بینک میں مالیات اور سرمایہ کاری کے اسسٹنٹ ڈائریکٹر کی حیثیت سے کام کیا۔

تنظیم بحرینی ادبا (عربی:أسرة الأدباء والكتاب في البحرين) کے رکن ہیں اور 30 اپریل 2018 کو بحرین کے پہلے تھیٹر کے رکن بنے۔ انہوں نے بحرین کی نئی ادبی تحریک بحرینی ادیبوں کی تنظیم کے قیام کے آغاز کے ساتھ ہی اپنی نظمیں شائع کرنا شروع کر دیں۔ انہوں نے فصیح و بلیغ اشعار لکھے ، خلیجی اخبارات نے ان کی بہت سی شاعری شائع کی ، انہوں نے ادبی سیمینار میں بھی شرکت لیا۔ انوں نے مقامی بول چال کے اشعار پر خصوصی توجہ دی۔

خاندان[ترمیم]

ان کے چار بیٹے ہیں، جھینا ، مھند ، منذر اور محمد۔ [3]

اعزازات[ترمیم]

  • 1978: وزارت اطلاعات کی طرف سے کرائے جانے والے مقابلے میں ان کے شاعرانہ ڈرامے "کیا دل سوکھتا ہے؟"(عربی:هل يجف القلب) نے دوسرا انعام جیتا ، ۔ [2]

ادبی کام[ترمیم]

ان کے شعری مجموعوں یہ ہیں:

  • غیر رسمی بحرینی لہجے میں "دھندلے ہوتے ستارے کے خواب"(عربی:أحلام نجمة الغبشة)،1975
  • "میں گواہی دیتا ہوں کہ مجھے پیار ہے"(عربی:أشهد أنّني أحب)، 1978
  • "الوطیسہ" ، 1994
  • "غزل کھیل"(عربی: غزل الطريدة) ، 1994
  • "آقا کا دوبارہ زندہ ہونا"(عربی: قيام السيد الذبيح) ، 2018

اور ان کے شاعرانہ ڈرامے یہ ہیں:

  • "اگر وقت آپ کی اطاعت کرے تو"(عربی:إذا ما طاعك الزمان) ، 1973
  • "سرور" ، 1974
  • "کیا دل سوکھ جائے گا"(عربی:هل يجف القلب) ، 1987

ان کی تحریر کردہ سوانح حیات :

  • سہولیات: ایک سرخیل اور ذکاوتی سوانح حیات(سرگزشت) (عربی:التَّسهيلات: سيرة ريادة وتألق)، 2017

بیرونی روابط[ترمیم]

ماقبل 
فہد حسین
سیکرٹری جنرل "تنظیم بحرینی ادبا"
30 اپريل 2018
مابعد 
  1. معجم الشعراء منذ بدء عصر النهضة. المجلد الأول. بيروت: دار صادر. 2004. 
  2. ^ ا ب پ معجم الشعراء من العصر الجاهلي حتى سنة 2002. بيروت، لبنان: دار الكتب العلمية. 2003. 
  3. أعلام وأقزام في ميزان الإسلام، سيد حسين العفاني صفحة 157.