ابراہیم اشک

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ابراہیم اشک
ابراہیم اشک

معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش 20 جولائی 1951ء (عمر 68 سال)
شہریت Flag of India.svg بھارت  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
دیگر نام ابراہیم خان غوری
عملی زندگی
پیشہ شاعر، صحافی، اداکار،نغمہ نگار

ابراہیم خان غوری بھارت سے تعلق رکھنے والے اردو کے شاعر، صحافی، اداکار اور فلمی نغمہ نگار ہیں۔ ان کی پیدائش 20 جولائی 1951 کو ہوئی تھی۔ ان کا قلمی نام اشک ہے۔

تعلیم[ترمیم]

اشک کی ابتدائی تعلیم بڑنگر، اجین، مدھیہ پردیش میں ہوئی۔ 1973 میں انہوں نے اندور یونیورسٹی سے بی اے مکمل کیا۔ جبکہ بعد میں انہوں نے یہیں سے ایم اے ہندی ادب میں کیا تھا۔

صحیفہ نگاری[ترمیم]

اشک حسب ذیل کی اشاعت سے جڑے رہے :

  • روزنامہ اندور سماچار (چارسال)
  • شمع اور شُشما رسالے (چھ سال)
  • سریتا (ہندی ماہنامہ، دوسال)

ادبی تخلیقات[ترمیم]

  • الہام 1991
  • آگاہی (مجموعہ کلام) 1996
  • کربلا (مراثی) 1998
  • انداز بیاں کچھ اور (غالب کا تنقیدی جائزہ) 2001
  • تنقیدی شعور (بے دل، حافظ، اقبال اور فراق گورکھپوری پر کام) 2004

فلمی نغمے[ترمیم]

اشک نے کہو نہ پیار ہے، کوئی مل گیا، جانشین، اعتبار، آپ مجھے اچھے لگنے لگے، کوئی میرے دل سے پوچھے اور دھند کے نغمے لکھے۔

کیسیٹ[ترمیم]

اشک کے قریب ایک ہزار نغموں کو مختلف فنکاروں نے گایا ہے اور یہ کیسیٹ بازار میں دستیاب ہیں۔

اعزازات[ترمیم]

اشک کو اترپردیش اردو اکادمی، اسٹارڈسٹ اور کئی نامی گرامی انعامات سے نوازا گیا تھا۔

حوالہ جات[ترمیم]