ابن الدیبع

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ابن الدیبع
معلومات شخصیت
پیدائش 9 اکتوبر 1461  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
زبید  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات دسمبر 1537 (75–76 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
زبید  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
استاذ شمس الدین سخاوی  ویکی ڈیٹا پر (P1066) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ مؤرخ،  محدث،  ادیب،  فقیہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ابن الدیبع – ابو عبد اللہ عبدالرحمن بن علی بن محمد بن عمر الشیبانی الشافعی (پیدائش: 9 اکتوبر1461ء – وفات: دسمبر 1537ء) جنوبی عرب میں فقہ شافعی سے تعلق رکھنے والے فقیہ، عالم، مؤرخ اور محدث تھے۔

سوانح[ترمیم]

پیدائش اور خاندان[ترمیم]

ابن الدیبع کا اصل نام عبدالرحمن بن علی بن محمد بن عمر ہے جبکہ کنیت ابوعبداللہ ہے۔ اپنے مورثِ اعلیٰ علی بن یوسف الدیبع کی نسبت سے ابن الدیبع کہلائے۔ المحبی کی خلاصۃ الآثار اور تاج العروس کی رُو سے دَیبَع کے معنی نوبیہ کی صحرائی زبان میں معنی ’’سفید‘‘ کے ہیں۔[1] [2]

نسب و پیدائش[ترمیم]

نسب یوں ہے: ابو عبد اللہ عبدالرحمن بن علی بن محمد بن عمر ـــ بن علی بن یوسف، جبکہ القاب میں وَجیہ الدین الشیبانی الزَبِیدی ہیں۔ محمد بن عمر کے بعد نسب میں کچھ افراد پردۂ اخفا میں ہیں اور علی بن یوسف تک ہی نسب کا پتا چلتا ہے۔ ابن الدیبع 4 محرم الحرام 866ھ مطابق 9 اکتوبر 1461ء کو یمن کے شہر زبید میں پیدا ہوئے۔ اِن کے والد بچپن میں ہی گھر چھوڑ کر چلے گئے تھے اور ہندوستان میں اُن کی وفات ہوئی۔

تعلیم و تربیت[ترمیم]

جب ابن الدیبع دس سال کے ہوئے تو اِنہیں اِن کے چچا جمال الدین محمد بن اسماعیل نے اپنی آغوشِ تربیت میں لے لیا جو یمن کے شہر زبید کے مفتی تھے۔ چچا کی نگرانی میں جانے کے بعد اُنہوں نے قرآن کریم ناظرہ پڑھا اور مختلف علوم و فنون، بالخصوص ریاضی اور فقہ کی تعلیم شروع کی۔ پھر دوسرے اساتذہ سے اِکتسابِ علم کے بعد 884ھ اور 885ھ میں دو بار سفرِ حج کیا اور بعد ازاں زین الدین احمد بن عبداللطیف الشَّرْجِی (متوفی: 893ھ) کے حلقہ تلامذہ میں شامل ہو گئے اور علم تاریخ کی طرف خاص توجہ کی۔ بعد میں بیت الفقیہ گئے اور وہاں ابن جَعْمان کے صاحبِ علم و فضل خاندان کے دو اَفراد سے بالخصوص علم حدیث حاصل کیا۔ 896ھ میں تیسری بار حج اداء کیا۔ اور اِس موقع پر کچھ عرصہ تک مکہ مکرمہ میں ٹھہر گئے اور اِس غرض سے قیام کیا کہ امام شمس الدین سخاوی (متوفی: 902ھ) سے حدیث پڑھ سکیں۔ اِس کے بعد ادب کی جانب متوجہ ہوئے اور بحیثیتِ مؤرخ جو کام کیا، اُس کی بنا پر سلطان الملک الظاہر الثانی صلاح الدین بن عامر (عہدِ حکومت: 1489ء تا 1517ء) کے دربار میں بڑی قدر افزائی ہوئی اور سلطان نے اِنہیں خلعت و جاگیر دے کر جامعہ زبید میں اُستاد مقرر کر دیا۔ جہاں ابن الدیبع آخری سالوں تک وابستہ رہے۔[3]

وفات[ترمیم]

ابن الدیبع نے رجب 944ھ مطابق دسمبر 1537ء میں زبید شہر میں وفات پائی۔ زبید شہر میں ہی تدفین کی گئی۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. المحبی: خلاصۃ الآثار، جلد 3، صفحہ 192۔
  2. تاج العروس: جلد 5، صفحہ 325
  3. اردو دائرہ معارف اسلامیہ: جلد 1، صفحہ 316۔ مطبوعہ لاہور، 2017ء