ابوالخیر خان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
قازقستان کا ڈاک ٹکٹ ابوالخیر خان کے اعزاز میں، 2001 (میشل 316)

مرزا ابوالخیر محمد خان بن قاضی عبد اللہ سلطان ( (قازق: Мырза Әбілқайыр Мұхаммед хан бин Қажы Абдұллаh Сұлтан)‏ ، ميرزا أبو الخير محمد خان بن حاجي عبد الله سلطان, رومنائزڈ : میرزا ابلقیر محمد حان بن قاضی عبد اللہ سلطان ) جو عام طور پر اپنے مختصر نام ابو الخیر خان (1693–1748) سے جانے جاتے ہیں موجودہ مغربی اور وسطی قازقستان میں قازق چھوٹے جز کے رہنما تھے۔ اس دور میں، چھوٹے جز نے بنیادی طور پر قازق بڑے جز کے علاقوں پر زنگر کے حملے کا بدلہ لینے کے لیے قازق-زونگر جنگوں میں حصہ لیا ۔ ابو الخیر کی مضبوط قیادت میں مسلم قازق غازیوں نے سنہ 1726ء میں دریائے بلانٹی پر اور 1729ء میں انرکائی کی جنگ میں زنگر افواج کو شکست دی۔

ابوالخیر خان حاجی (قاضی) عبد اللہ سلطان کے دوسرے بڑے بیٹے تھے، جو ایک قازق مرزا تھے جو مکہ میں حج مکمل کرنے کے فورا بعد شاہی صفوں میں شامل ہوئے تھے۔ اپنے والد کی طرح ابوالخیر نے بھی تخت پر بیٹھنے سے پہلے مرزا کی حیثیت سے شروعات کی۔ اس نے انھیں قازق خانیت کے چند ایسے دستاویزی خانوں میں سے ایک بنا دیا جو نہ جانی بیک خان سے تھے نہ ہی کیری خان سے تھے۔ بہر حال، شاہی خاندان سے ان کے والد قاضی عبد اللہ کے روابط کی وجہ سے ابوالخیر خان خود حکمران بن گئے۔

ابوالخیر خان نے سنہ 1718ء میں قازقوں کے نئے خان کے طور پر تخت سنبھالا۔ زنگروں کے خلاف روسی مدد حاصل کرنے کے لیے، ابوالخیر خان نے سنہ 1731ء میں تاج روس سے وفاداری کا حلف اٹھایا۔ اپنی سلطنت کو متحد کرنے کی کوشش میں اور کسی کو بھی انحراف کرنے اور زنگروں کی مدد کرنے سے روکنے کی کوشش میں، ابو الخیر خان نے سنی مسلم قازقوں میں ایک مضبوط مذہبی شناخت کو بھی فروغ دیا۔ اس کے بعد اس نے قازق چھوٹے جز پر بھی روسی اثر و رسوخ کو محدود کرنے کی کوشش کی کیونکہ وہ اب بھی چاہتے تھے کہ ان کی سلطنت ایک آزاد اسلامی ریاست کے طور پر کام کرے۔ 2019 کی ایک تحقیق کے مطابق، "نہ تو قازق اور نہ ہی روسی حکام نے اپنے تعلقات کو الحاق کے طور پر دیکھا تھا، بلکہ یہ محض ایک اتحاد تھا۔" [1]

قازق عوام کو دوبارہ متحد کرنے اور زنگاروں کو شکست دینے میں ان کی شراکت کے نتیجے میں، ابو الخیر کو " شاہِ توران " ( فارسی میں " توران کے بادشاہ") کے خطاب سے نوازا گیا۔