ابو وائل بن سلمہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ابو وائل بن سلمہ
معلومات شخصیت
عملی زندگی
پیشہ محدث  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ابووائل بن سلمہؒ تابعین میں سے ہیں۔

نام ونسب[ترمیم]

شفیق نام،ابووائل کنیت، والد کا نام سلمہ تھا،نسبابیلہ اسد بن خزیمہ سے تھے شفیق اپنے نام سے زیادہ کنیت سے مشہور ہیں۔

عہد رسالت[ترمیم]

ابو وائل عہد رسالت میں موجود تھے،لیکن کم سن تھے عمر بن مروان کا بیان ہے کہ میں نے ایک مرتبہ ابو وائل سے پوچھا کہ آپ نے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا زمانہ پایا تھا، انہوں نے کہا ہاں آپ کو دیکھا تھا، لیکن اس وقت میں نوخیز لڑکا تھا[1] لیکن بروایتِ صحیح وہ تابعی ہیں۔

اسلام[ترمیم]

ایک روایت سے معلوم ہوتا ہے کہ اسی زمانہ میں وہ مشرف باسلام ہوئے،مغیرہ کا بیان ہے کہ ابو وائل کہتے تھے کہ ہمارے قبیلہ میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا تحصیلدار آیا،وہ ہم سے ہر بچاس اونٹنیوں پر ایک اونٹنی لیتا تھا، میرے پاس ایک مینڈھا تھا میں نے اس کو لاکر پیش کیا اورکہا اس کا صدقہ لو،اس نے کہا اس میں صدقہ نہیں ہے۔ [2]

عہد صدیقی[ترمیم]

عہد صدیقی میں ان کے قبیلہ نے بھی صدقہ دینے سے انکار کردیا تھا،ابو وائل بھی اس جماعت میں شامل تھے،سلیمان الاعمش کا بیان ہے کہ شفیق مجھ سے کہتے تھے،کاش تم ہم کو بزاخہ کے معرکہ میں خالد بن ولید کے مقابلہ میں بھاگتے ہوئے دیکھے ہوتے، اس دن میں اونٹ سے گرپڑا تھا اورمیری گردن ٹوٹتے ٹوٹتے بچی تھی، اگر میں اس دن ہلاک ہوگیا ہوتا تو میرے لیے دوزخ یقینی تھی (عہد صدیقی میں بنی اسد پر فوج کشی کا معرکہ) لیکن پھر ان کے قبیلہ نے زکوٰۃ ادا کرکے اطاعت قبول کرلی تھی۔

عہد فاروقی میں تلافی مافات[ترمیم]

عہد فاروقی میں انہوں نے اس لغزش کی پوری تلافی کردی عراق کی فوج کشی میں مجاہدانہ شریک ہوئے،قادسیہ کے مشہور معرکہ میں موجود تھے۔ [3] شام کی مہم میں بھی ان کی شرکت کا پتہ چلتا ہے،خود ان کی زبانی یہ روایت ہے کہ میں عمر بن الخطابؓ کے ساتھ شام کی فوج کشی میں شریک ہوا، غالباً اس سے مراد سفر شام میں حضرت عمرؓ کی مشایعت ہوگی۔

عمر فاروق کا برتاؤ[ترمیم]

ان کے خدمات کی بنا پر حضرت عمرؓ ان کا بڑا لحاظ کرتے تھے،ان کا بیان ہے کہ عمرؓ نے مجھ کو اپنے ہاتھ سے چار عطیے دیئے اورکہا ایک نعرۂ تکبیر دنیا ومافیہا سے بہتر ہے۔ [4]

جنگ صفین[ترمیم]

عہد مرتضوی میں حضرت علیؓ کی حمایت میں جنگ صفین میں نکلے ،لیکن بعد میں اس شرکت پر متاسف تھے ،اعمش کا بیان ہے کہ کسی نے ابو وائل سے پوچھا کہ آپ نے جنگ صفین میں شرکت کی تھی فرمایا ہاں شریک ہوا تھا؛لیکن دونوں صفیں نہایت بری تھیں۔

حجاج اورابو وائل[ترمیم]

اموی عہد میں ابو وائل کی بڑی عزت ووقعت تھی،حجاج خصوصیت کے ساتھ بہت مہربان تھا،اس نے آپ کے سامنے بعض بڑے عہدے پیش کیے لیکن آپ نے قبول کرنے سے انکار کیا،خود آ پ کا بیان ہے کہ حجاج جب (کوفہ) آیا تو مجھے بلا بھیجا میں اس کی طلبی پر گیا،اس نے مجھ سے پوچھا آپ کا نام کیا ہے،میں نے کہا نام تم کو معلوم ہی ہوگاورنہ مجھے بلاتے کیسے،پوچھا اس شہر میں کب آئے ہیں میں نے کہا اس زمانے ممیں جب اس شہر کے تمام باشندے آئے،پوچھا آپ کو کتنا قرآن یاد ہے، میں نے کہا اتنا کہ اگر میں اس کی پابندی کروں تو وہ میرے لیے کافی ہو،ان سوالات کے بعد اس نے کہا میں نے آپ کو اس لیے بلایا ہے کہ آپ کو بعض عہدے دینا چاہتا ہوں میں نے پوچھا کون سا عہدہ، اس نے کہا سلسلہ (سزا دینے کا ایک عہدہ) (بیڑی)میں نے کہا یہ عہدہ ان لوگوں کے لیے موزوں ہے جو ذمہ داری کے ساتھ اس کام کو انجام دے سکیں، اگر آپ مجھ سے مدد لینا چاہتے ہیں تو ایسے عقل خوردہ سے مدد لیں گے جس کا بُرے مدد گاروں سے سابقہ ہوگا، اس لیے اگر آپ مجھے اس عہدہ سے معاف رکھیں تو میرے لیے زیادہ بہتر ہوگا اوراگر آپ کو اصرار ہے تو میں اس پر خطر عہدہ کو قبول کرنے کے لیے تیار ہوں مگر یہ بھی عرض کردوں کہ ایسی حالت میں جبکہ میں آپ کا عہدہ دار نہیں ہوں جب راتوں کو آپ کو یاد کرتا ہوں تو نیند اڑجاتی ہے تو جب عہدہ دار ہوں گا تو کیا حال ہوگا، لوگ آپ سے اس قدر خائف ہیں کہ اس سے پیشتر کسی امیر سے اتنا خائف نہ ہوئے ہوں گے، میری ان باتوں کو اس نے پسند کیا اور کہا اس کی وجہ یہ ہے کہ کوئی شخص خوں ریزی میں مجھ سے زیادہ جری اوربے باک بھی نہیں ہے،میں ایسے ایسے اہم کام کر گزرا جس کے پاس جاتے ہوئے لوگ ڈرتے تھے میری اس سختی کی وجہ سے میری مشکلات آسان ہوگئیں،خدا آپ پر رحم کرے اب آپ جائیے،اگر آپ کے علاوہ کوئی دوسرا موزوں شخص مل گیا تو آپ کو زحمت نہ دوں گا،ورنہ پھر آپ کو اس میں ڈالنا پڑے گا، غرض کسی طرح چھٹکارا حاصل کرنے کے بعد ابو وائل واپس آئے اورپھر کبھی حجاج کے پاس نہ گئے۔ [5]

تحصیل زکوٰۃ کا عہدہ[ترمیم]

بعض روایتوں سے معلوم ہوتا ہے کہ اموی دور میں وہ تحصیل زکوۃ کے عہدہ پر تھے،مہاجر ابوالحسن کا بیان ہے کہ ایک مرتبہ میں ابوبردہ اورشقیق کے پاس جو بیت المال میں تھے زکوٰۃ لے کر گیا،انہوں نے اس کو داخل کرلیا، اسی روایت کے ایک راوی سعید کہتے ہیں کہ میں دوبارہ زکوٰۃ لے کر گیا تو تنہا ابووائل تھے،انہوں نے کہا اس کو واپس لے جاؤ، اوراس کے مصارف میں اس کو صرف کردو،میں نے کہا مولفۃ القلوب کا حصہ کیا کروں،انہوں نے کہا اسے دوسرے لوگوں کو دے دو [6]

فضل وکمال[ترمیم]

علمی اعتبار سے ابووائل کوفہ کے ممتاز علماء میں تھے،حافظ ذہبی ان کو کوفہ کا شیخ اورعالم لکھتے ہیں [7]علامہ نووی لکھتے ہیں کہ ان کی توثیق اورجلالت پر سب کا اتفاق ہے۔ [8]

قرآن[ترمیم]

قرآن کے حافظ تھے،ذہین اورذکی ایسے تھے کہ دو مہینہ میں پورے قرآن کی تعلیم حاصل کرلی تھی (تہذیب الاسماء،جلد اول،ق اول،ص۲۴۷)لیکن تفسیر بیان کرنے میں بڑے محتاط تھے۔ [9]

حدیث[ترمیم]

حفظ حدیث میں علامہ ابن سعدان کو ثقہ اورکثیر الحدیث لکھتے ہیں۔ [10] صحابہ میں انہوں نے حضرت ابوبکرؓ،عمرؓ،عثمانؓ،علیؓ،معاذ بن جبلؓ،سعد بن ابی وقاصؓ،عبداللہ بن مسعودؓ،حذیفہ بن یمانؓ،جناب بن ارتؓ،کعب بن عجرہ،ابو مسعود انصاریؓ،ابو موسیٰؓ اشعری اورابو ہریرہؓ وغیرہ جیسے اکابر حفاظ سے روایتیں کی ہیں۔ [11] حضرت عبداللہ بن مسعودؓ کی احادیث خصوصیت کے ساتھ ان کے حافظہ میں زیادہ محفوظ تھیں،کوفہ میں ان کی احادیث کا ان سے بڑا کوئی حافظ نہ تھا۔ [12]

تلامذہ[ترمیم]

بڑے بڑے تابعی ان کے خرمنِ کمال کے خوشہ چین تھے،اکابر تابعین میں شعبی عاصم اور اعمش اورعام محدثین میں منصور،زبید الیمامی ،جیب بن ابی ثابت،عاصم بن بھدلہ، عبدہ بن ابن لبابہ اور عمرو بن مرہ وغیرہ نے ان سے فیض پایا تھا۔ [13]

علماء میں ابو وائل کا درجہ[ترمیم]

اس عہد کے اکابران کو خیار تابعین میں شمار کرتے ہیں،اعمش کا بیان ہے کہ ابراہیم نے مجھ سے ہدایت کی تھی کہ تم شقیق سے استفادہ کیا کرو،عبداللہ بن مسعودؓ کے اصحاب اس زمانہ میں جب کہ ان کی بڑی تعداد موجود تھی سب کے سب انہیں اپنی جماعت کے خیار میں شمار کرتے تھے۔ [14]

خشیت الہی[ترمیم]

ان کے دل پر خشیتِ الہیٰ کا اس قدر غلبہ تھا کہ جب اُن کے سامنے تذکیر وتخویف ہوتی تو ان کی آنکھوں سے آنسو جاری ہوجاتے۔ [15]

زہد وعبادت[ترمیم]

بصرہ کے عابد تابعین میں شمار تھا،عبادت ان کا خاص مشغلہ تھا،ابن جان کابیان ہے کہ وہ ثقات میں تھے،کوفہ میں بود وباش اختیار کرلی تھی اوریہاں کے عابد وزاہد لوگوں میں تھے [16]آپ کی عبادت کا خاص وقت تاریکی شب تھا، سجدہ میں نہایت الحاح وزاری کے ساتھ دعا کرتے تھے،خدایا مجھے معاف کراورمیری مغفرت فرما،اگر تو مجھے معاف کردے گا تو مسلسل گناہوں کو معاف کردے گا اوراگر عذاب دے گا تو عذاب دینے میں تو ظالم نہ ہوگا۔ [17]

جہاد فی سبیل اللہ اوردنیا سے بے تعلقی[ترمیم]

دنیا سے محض برائے نام تعلق تھا، رہنے کے لیے ایک معمولی سا چھپر کا جھونپڑا تھا،جس میں وہ اوران کا رفیق جہاد گھوڑا رہتا تھا جب جہاد کے لیے جانے لگتے تو چھپرا کھاڑدیتے،جب واپس آتے تو پھر بنالیتے۔ [18]

کسب حلال[ترمیم]

کسبِ حلال کا بڑا خیال تھا،مفت کی دولت کے انبار کے مقابلہ میں حلال کے ایک درہم کو زیادہ پسند کرتے تھے؛چنانچہ فرماتے تھے کہ تجارت کا ایک درہم مجھے اپنے وظیفہ کے دس درہم سے زیادہ پسند ہے۔ [19]

ان کی ذات باعثِ برکت تھی[ترمیم]

ان کے ان اخلاقی اورروحانی کمالات کی وجہ لوگ ان کو اپنے لیے باعثِ رحمت وبرکت سمجھتے تھے، ابراہیم کہتے تھے کہ ہر مقام میں ایک ایسی ہستی ضرور ہوتی ہے،جس کے طفیل میں وہ آبادی بلاؤں سے محفوظ رہتی ہے مجھ کوامید ہے کہ شقیق بھی ایسے ہی لوگوں میں ہیں [20] صحابہ تک ان کے کمالاتِ اخلاقی کے معترف تھے،عبداللہ بن مسورؓ پر ان کا اتنا اثر تھا کہ جب انہیں دیکھتے تو فرماتے کہ یہ تائب ہیں۔ [21]

وفات[ترمیم]

۸۲ھ میں وفات پائی واقدی کے بیان کے مطابق عمربن عبدالعزیز کے زمانے میں انتقال ہوا،لیکن یہ صحیح نہیں معلوم ہوتا کیونکہ اس اعتبار سے ان کی عمر بہت بڑھ جاتی ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. (ابن سعد،ج۷،ق اول،ص۱۳۵)
  2. (ابن سعد ایضاً)
  3. (ابن سعد:۶/۶۴)
  4. (ایضاً:۶۴)
  5. (ابن سعد:۶/۶۶۶)
  6. (ابن سعد:۶/۶۵)
  7. (تذکرۃ الحفاظ:۱/۵۱)
  8. (تہذیب الاسماء،جلد اول ،ق اول،ص۲۴۷)
  9. (تذکرۃ الحفاظ:۱/۵۱)
  10. (ابن سعد:۶/۶۹)
  11. (تہذیب التہذیب:۴/۳۶۱)
  12. (تہذیب الاسماء،ج اول،ق اول،ص۲۴۷)
  13. (تہذیب التہذیب:۴/۳۶۲)
  14. (ابن سعد:۶/۶۷)
  15. (ایضاً:۶۸)
  16. (تہذیب التہذیب:۴/۳۶۳)
  17. (ابن سعد:۶/۶۷)
  18. (ایضاً:۶۸)
  19. (ایضاً:۶۸)
  20. (تہذیب التہذیب،جلد اول،ق اول،ص۲۴۷)
  21. (ابن سعد،جلد۶،ص۶۷)