اتکل یونیورسٹی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
اتکل یونیورسٹی
UU LOGO.png
شعارSatyam param dhīmahi
اردو میں شعار
اعلیٰ ترین سچائی کی تلاش کریں۔
قسمعوامی
قیامنومبر 1943، 27؛ 78 سال قبل (27-11-1943)
تعلیمی الحاق
چانسلرحکومت اڈیشا
وائس چانسلرسبیتا آچاریہ[1]
تدریسی عملہ
187[2]
طلبہ4,334[2]
انڈر گریجویٹ249[2]
پوسٹ گریجویٹ3,840[2]
ڈاکٹریٹ کے طلبہ
245[2]
پتہوانی وِہار، بھوبنیشور، ، ، بھارت
کیمپسشہری
399.9 acre (161.8 ha)
زبانانگریزی، اڑیا
ویب سائٹutkaluniversity.ac.in

اتکل یونیورسٹی (یو یو) بھونیشور، کھوردا، اڈیشا میں واقع ایک پبلک یونیورسٹی ہے۔ یہ ریاست کی سب سے قدیم یونیورسٹی اور بھارت کی 17ویں قدیم ترین یونیورسٹی ہے۔[3] یہ ایک تدریسی و منسلک یونیورسٹی ہے۔ وانی وہار کا موجودہ کیمپس بھوبنیشور کے قلب میں 399.9 ایکڑ کے وسیع رقبے پر واقع ہے۔

اس وقت یونیورسٹی میں ستائیس پوسٹ گریجویٹ تدریسی اور تحقیقی شعبے ہیں جو کیمپس میں واقع ہیں۔ یونیورسٹی شہر کے وسط میں واقع ہے۔ یہ ہوائی اڈے سے 5 کلومیٹر، ریلوے اسٹیشن سے 3 کلومیٹر دور ہے۔ سینک اسکول اس کے شمال میں ہے۔ مانچیشور صنعتی علاقہ اس کے مشرق میں ہے۔

2016ء میں، اتکل یونیورسٹی نے اپنے بانی اراکین میں سے ایک گودا وریش مشرا کی نظم "ٹنگا سکھر چولا" (پہلے 3 بند) سے اپنا تھیم سانگ اپنایا۔[4]

تاریخ[ترمیم]

اتکل یونیورسٹی کی 75 ویں سالگرہ کے موقع پر 2018ء کا ڈاک ٹکٹ
اتکل یونیورسٹی کا صدر دروازہ

اڈیشا کی بہار سے علیحدگی اور اپریل 1936ء میں اڈیشا کے نئے صوبے کے قیام کے بعد، صوبے کے رہنماؤں میں ایک الگ ریاست کے قیام کی شدید خواہش تھی۔ 1936ء تک تمام کالج یا تو پٹنہ یونیورسٹی یا آندھرا یونیورسٹی کے دائرہ اختیار میں تھے۔ اس کے بعد، اڈیشا کی حکومت نے، شری بسوناتھ دش کو بطور وزیر اعظم، 2 مارچ 1938ء کو ایک کمیٹی مقرر کی، جس کے چیئرمین پنڈت نیلکنٹھ داس تھے تاکہ اس کے امکان کا جائزہ لے سکیں۔ مہاراجہ کرشن چندر گجپتی کی وزارت عظمیٰ کے دوران، جنہوں نے یونیورسٹی کے قیام میں اہم کردار ادا کیا، اس کمیٹی کی سفارشات دستیاب کرائی گئیں۔ پنڈت گودا وریش مشرا، اُس وقت کی حکومت اڈیشا کے وزیر تعلیم نے اتکل یونیورسٹی بل پیش کیا جسے 30 جون 1943ء کو اڈیشا قانون ساز اسمبلی نے منظور کیا تھا۔ بعد میں 2 اگست 1943ء کو گورنر کی منظوری ملنے پر، اتکل یونیورسٹی ایکٹ 1943ء نافذ ہوا، جس نے 27 نومبر 1943ء کو یونیورسٹی کی بنیاد رکھنے کا راستہ صاف کیا۔

1966ء میں اس ایکٹ کو منسوخ کر دیا گیا اور ایک نیا اتکل یونیورسٹی ایکٹ منظور کیا گیا جو یکم جنوری 1967ء سے نافذ ہوا۔ ابتدائی طور پر، اتکل یونیورسٹی راونشا کالج سے کام کر رہی تھی، اس سے پہلے کہ یہ بھوبنیشور میں اپنے کیمپس میں آئے، جسے وانی وہار کہا جاتا ہے۔ راونشا کالج 1936ء میں بہار سے اڈیشا کی علیحدگی کے بعد بھی پٹنہ یونیورسٹی سے منسلک رہا۔ الحاق آخر کار 1943ء میں نئی ​​تخلیق شدہ اتکل یونیورسٹی کو منتقل کر دیا گیا۔ درحقیقت، یہ راونشا کالج ہی تھا جس نے نئی یونیورسٹی کو جنم دیا، اسے پالا اور برقرار رکھا۔ یہ راونشا کالج کے موجودہ شعبۂ حیوانیات کی عمارت کے احاطے سے کام کرتا تھا۔ یونیورسٹی میں پوسٹ گریجویٹ تدریس کے لیے بشریات سے حیوانیات تک بہت سے شعبے ہیں۔ موجودہ کیمپس کا سنگ بنیاد پہلے صدر بھارت ڈاکٹر راجندر پرساد نے 1 جنوری 1958ء کو نے رکھا تھا، اور کیمپس کا افتتاح ڈاکٹر سروپلی رادھا کرشنن نے کیا تھا۔

جائے وقوع[ترمیم]

کیمپس بھوبنیشور شہر کے مرکز میں ہے اور دائیں جانب ونی وہار این ایچ 16 (قدیم نمبر این ایچ 5) پر ہے۔ یہ ماسٹر کینٹین کے مرکزی ریلوے اسٹیشن اور بارامونڈا کے بس اسٹینڈ دونوں سے تقریباً 5 کلومیٹر کے فاصلے پر ہے۔ تمام پوسٹ گریجویٹ شعبہ جات اور لاء کالج کیمپس کے اندر ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Six state-run varsities get new VCs in Odisha, Utkal University gets first woman VC". The New Indian Express. 24 November 2020. اخذ شدہ بتاریخ 01 دسمبر 2020. 
  2. ^ ا ب پ ت ٹ "Utkal University Data for NIRF'2022'" (PDF). NIRF. 
  3. Panda, Binita and Routray, Padmalita (2018). "Effectiveness of Training Programs Conducted by the UGC-Human Resource Development Centre: A Case Study of Utkal University". Siddhant: A Journal of Decision Making. 18 (1): 49–57. doi:10.5958/2231-0657.2018.00006.X. 
  4. "Utkal University gets a theme song". Odisha Television Ltd. (بزبان انگریزی). 2016-02-16. اخذ شدہ بتاریخ 11 جون 2020.