اثیر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

طبّی نظریہ کے مطابق اثیر ایسے مادّہ کو کہتے ہیں جو دانتوں کی جڑوں میں ڈالا جائے یا وہ دواء جو حلق یا خلائے دہن میں پھونکی جائے ، اِس کا تعلق وجورات سے ہے، وجور حلق میں ڈالی جانے والی دوا کو کہتے ہیں ۔

[[طبیب|اطِبّاء نے اثیر کی یہ تعریف کی ہے کہ یہ ایک بے رنگ خوشبو دار سیال ہے جو بطور محلل و مخدر مستعمل ہے۔

اثیر کا استعمال سب سے پہلے دانتوں کی جڑوں اور خلاؤں (cavities) میں ڈالنے کے لیے ہی کیا گیا تھا۔ یہ Oral Route سے استعمال ہونے والی قدیم ترین دواء ہے۔[1]

اثیر کی اقسام[ترمیم]

اثیر کی تین اقسام ہیں. (1). اثیر صغیر (2). اثیر الملوک وجہ تسمیہ: چونکہ اِس کو بادشاہوں کے استعمال کے لیے تیار کیا گیا لہذا اِس کا نام اثیر الملوک رکھا گیا۔یا اثیر کے مختلف نسخوں میں یہ سب سے افضل ہے، اِس لیے اِس کو اثیر الملوک کہا گیا۔

(3). اثیر الاحمر وجہ تسمیہ: شنگرف کی شمولیت کی وجہ سے اِس کا رنگ سُرخ ہوتا ہے ، اِس لیے اِس کا نام الاحمر مشہور ہوا۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

[2][3][4][5][6]

بیرونی روابط[ترمیم]