احمد زیول

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
احمد زیول
Ahmed Zewail HD2009 Othmer Gold Medal portrait.JPG
 

معلومات شخصیت
پیدائشی نام (عربی میں: أحمد حسن زويل ویکی ڈیٹا پر (P1477) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیدائش 26 فروری 1946[1][2][3][4][5]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دمنہور[1]  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 2 اگست 2016 (70 سال)[6][7][8][9]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پاساڈینا، کیلیفورنیا[6]  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات طبعی موت  ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رہائش لاس اینجلس کاؤنٹی، کیلیفورنیا (1979–)
دسوق  ویکی ڈیٹا پر (P551) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Egypt.svg مصر  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مذہب اسلام
رکن رائل سوسائٹی،  رائل سویڈش اکیڈمی آف سائنسز،  قومی اکادمی برائے سائنس،  چائنیز اکیڈمی آف سائنسز،  فرانسیسی اکادمی برائے سائنس،  امریکی اکادمی برائے سائنس و فنون،  سائنس کی روسی اکادمی،  انڈین نیشنل سائنس اکیڈمی،  امریکن فلوسوفیکل سوسائٹی[10]  ویکی ڈیٹا پر (P463) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تعداد اولاد
عملی زندگی
مقام_تدریس
مقالات Optical and magnetic resonance spectra of triplet excitons and localized states in molecular crystals
مادر علمی جامعہ پنسلوانیا (1969–1974)
جامعہ اسکندریہ  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تخصص تعلیم کیمیا  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تعلیمی اسناد پی ایچ ڈی،بیچلر اور ایم اے  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ کیمیادان[11][12][13]،  استاد جامعہ،  موجد،  طبیعیات دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان انگریزی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل کیمیا  ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ملازمت کیلیفورنیا انسٹیٹیوٹ آف ٹیکنالوجی  ویکی ڈیٹا پر (P108) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
مینڈل میڈل (2012)
تمغا ڈیوی (2011)[14]
Orden Nila rib.gif آرڈر آف دی نیل (1999)[15]
نوبل انعام برائے کیمیا  (1999)[16][17]
تمغا بنجمن فرینکلن (1998)
شاہ فیصل بین الاقوامی انعام برائے سائنس  (1989)
جان سائمن گوگین ہیم میموریل فاؤنڈیشن فیلوشپ (1987)[18]  ویکی ڈیٹا پر (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ویب سائٹ
ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ  ویکی ڈیٹا پر (P856) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحات  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

احمد حسان زویل ((مصری عربی: أحمد حسن زويل)‏، بین الاقوامی اصواتی ابجدیہ: [ˈæħmæd ˈħæsæn zeˈwe:l]; 26 فروری 1946 – 2 اگست 2016ء[20]) امریکی شہریت یافتہ مصری کیمیادان تھے۔ انہیں 1999ء میں نوبل انعام برائے کیمیا دیا گیا جس کی وجہ کیمیاء کی شاخ فمٹو کیمسٹری سے جڑے ان کے کارنامے تھے انھیں فیمٹو کیمسٹری کا بانی بھی کہا جاتا ہے۔

وہ پہلے مصری اور اور مسلمان باشندے تھے جنھیں نوبل انعام برائے کیمیا ملا وہ آخری عمر کیلیفورننیا انسٹیٹیوٹ آف ٹیکنالوجی میں بطور پروفیسر کام کر رہے تھے۔ پروفیسر احمد زویل نے اپنی تمام زندگی امریکا میں صرف کی اور امریکی صدر براک اوباما کے مشیروں کی کونسل کے رکن بھی رہے۔

پیدائش[ترمیم]

احمد حسن زیویل 26 فروری 1946ء کو مصر کے شہر دامن حر میں پیدا ہوئے تعلیم ان کی پرورش دیسوک میں ہوئی۔جہاں 4 سال کی عمر میں والدین کے ساتھ گئے، وہیں ابتدائی تعلیم حاصل کی، انہوں نے اسکندریہ یونیورسٹی سے کیمسٹری میں بیچلر آف سائنس اور ماسٹر آف سائنس کی ڈگریاں حاصل کیں

کیریئر[ترمیم]

اپنی پی ایچ ڈی مکمل کرنے کے بعد، زیویل نے یونیورسٹی آف کیلیفورنیا، برکلے میں پوسٹ ڈاکیٹرل تحقیق کی، جس کی نگرانی چارلس بونر ہیرس نے کی۔ اس کے بعد، انہیں 1976ء میں کیلیفورنیا انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی میں فیکلٹی کی تقرری سے نوازا گیا ، اور انہوں نے کیمیکل فزکس میں پہلی لینس پالنگ چیئر بنائی۔ وہ 5 مارچ 1982 کو ریاستہائے متحدہ کے ایک شہری بن گئے۔

زیویل کو صدر براک اوباما کی سائنس اور ٹیکنالوجی کے مشیروں کی صدارتی کونسل (PCAST) میں نامزد کیا گیا تھا اور اس میں حصہ لیا تھا، جو کہ صدر اور نائب صدر کو مشورہ دینے اور سائنس، ٹیکنالوجی کے شعبوں میں پالیسی بنانے کے لیے ملک کے معروف سائنسدانوں اور انجینئروں کا ایک مشاورتی گروپ ہے۔

نوبل انعام[ترمیم]

احمد زویل نے کیمیائی تعاملات (کیمیکل ری ایکشنز) کی تصاویر اور سمجھنے کے عمل کے لیے انقلابی کام کیا تھا جس پر انہیں 1999ء میں کیمیا کا نوبل انعام دیا گیا۔ ڈاکٹر زویل نے برسوں کی محنت سے کیمیا کی ایک نئی شاخ ’ فیمٹوکیمسٹری‘ کی بنیاد رکھی۔

عہدے[ترمیم]

وہ پیساڈینا، کیلیفورنیا میں واقع کیلیفورنیا انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی (کیلٹیک) میں فزیکل بائیالوجی مرکز کے سربراہ اور لینس پاؤلنگ پروفیسر برائے کیمیا تھے۔

تحقیق[ترمیم]

احمد زویل نے لیزر شعاعوں کے ذریعے کیمیائی تعاملات کے مطالعے کا ایک بالکل نیا طریقہ وضع کیا تھا جس سے حیاتیاتی اور کیمیائی تبدیلیوں کو سمجھنے میں بہت مدد ملی۔ اس کے علاوہ انہوں نے فور ڈائمیشنل مائیکروسکوپی کی بنیاد بھی رکھی۔

احمد زویل نے اپنی زندگی میں 16 کتابیں اور 600 تحقیقی مقالہ جات تحریر کئے،

اعزازات[ترمیم]

انھیں مصر کا سب سے بڑا ایوارڈ آرڈر آف دی گرانڈ کولر آف نائل اور فرانس سے لیجن ڈی آنر جیسا اہم ترین اعزاز بھی عطا کیا گیا تھا۔ احمد زویل 2009 میں امریکی صدر براک اوباما کی جانب سے مشرقِ وسطیٰ کے لیے سائنس کے سفیر بھی منتخب کئے گئے۔

مسلم سائنسدان نے اپنے نام سے مصر میں ’ شہرِ سائنس‘ قائم کرنے کا منصوبہ بھی شروع کیا تھا جو خاصی حد تک مکمل ہوچکا ہے۔

وفات[ترمیم]

زیویل کا انتقال 2 اگست 2016ء کی صبح 70 سال کی عمر میں ہوا۔ وہ کینسر سے صحت یاب ہو رہے تھے، تاہم ان کی موت کی اصل وجہ معلوم نہیں ہو سکی۔ زیوائل مصر واپس آ گئے، لیکن قاہرہ ہوائی اڈے پر صرف ان کی لاش کا استقبال کیا گیا۔ 7 اگست 2016ء کو مصر کے شہر قاہرہ میں المشیر طنطاوی مسجد میں زیوائل کا فوجی جنازہ ادا کیا گیا۔ شرکت کرنے والوں میں صدر عبدالفتاح السیسی ، وزیر اعظم شریف اسماعیل ، الازہر کے گرینڈ امام احمد الطیب ، وزیر دفاع سیدکی سوبی ، سابق صدر عدلی منصور ، سابق وزیر اعظم ابراہیم محلب اور دل کے سرجن شامل تھے۔مقدی یعقوب ۔ نماز جنازہ مصر کے سابق مفتی اعظم علی گوما نے پڑھائی ۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب این این ڈی بی شخصی آئی ڈی: https://www.nndb.com/people/830/000100530/ — بنام: Ahmed H. Zewail — اخذ شدہ بتاریخ: 28 مئی 2021
  2. دائرۃ المعارف بریطانیکا آن لائن آئی ڈی: https://www.britannica.com/biography/Ahmed-Zewail — بنام: Ahmed H. Zewail — اخذ شدہ بتاریخ: 28 مئی 2021 — عنوان : Encyclopædia Britannica
  3. بنام: Ahmed H. Zewail — ایس این اے سی آرک آئی ڈی: https://snaccooperative.org/ark:/99166/w6nd8j2d — اخذ شدہ بتاریخ: 28 مئی 2021
  4. بنام: Ahmed Hassan Zewail — Brockhaus Enzyklopädie online ID: https://brockhaus.de/ecs/enzy/article/zewail-ahmed-hassan — اخذ شدہ بتاریخ: 28 مئی 2021
  5. بنام: Ahmed Zewail — Munzinger person ID: https://www.munzinger.de/search/go/document.jsp?id=00000023143 — اخذ شدہ بتاریخ: 28 مئی 2021
  6. ^ ا ب Le prix Nobel égyptien Ahmed Zewail n'est plus — شائع شدہ از: 2 اگست 2016
  7. دائرۃ المعارف بریطانیکا آن لائن آئی ڈی: https://www.britannica.com/biography/Ahmed-Zewail — بنام: Ahmed H. Zewail — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017 — عنوان : Encyclopædia Britannica
  8. فائنڈ اے گریو میموریل شناخت کنندہ: https://www.findagrave.com/memorial/167704967 — بنام: Ahmed Hassan Zewail — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  9. Brockhaus Enzyklopädie online ID: https://brockhaus.de/ecs/enzy/article/zewail-ahmed-hassan — بنام: Ahmed Hassan Zewail — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  10. ربط : این این ڈی بی شخصی آئی ڈی 
  11. http://muse.jhu.edu/journals/anthropological_quarterly/v082/82.1.hamdy.pdf — ناشر: جامعہ جونز ہاپکنز
  12. Pontifical Academy of Sciences
  13. http://www.theage.com.au/opinion/politics/human-spirit-triumphs-as-egypt-takes-long-walk-to-freedom-20110213-1arz5.html
  14. Award winners : Davy Medal — اخذ شدہ بتاریخ: 30 دسمبر 2018
  15. Ahmed Zewail - Biographical — اخذ شدہ بتاریخ: 29 اپریل 2020 — ناشر: نوبل فاونڈیشن
  16. The Nobel Prize in Chemistry 1999 — ناشر: نوبل فاونڈیشن
  17. The Nobel Prize amounts — ناشر: نوبل فاونڈیشن
  18. John Simon Guggenheim Foundation — اخذ شدہ بتاریخ: 29 اپریل 2020
  19. "آرکائیو کاپی". 06 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 04 اگست 2016.