احمد صفا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
احمد صفا
Ahmed Sofa.jpg
صفا 1995ء میں
مقامی نام আহমদ ছফা
پیدائش 30 جون 1943(1943-06-30)
چٹاگانگ، بنگال پریزیڈنسی، برطانوی راج
وفات 28 جولائی 2001(2001-70-28) (عمر  58 سال)
ڈھاکہ، بنگلہ دیش
آخری آرام گاہ شہید دانشور قبرستان
پیشہ مصنف، شاعر، دانشور
قومیت بنگلہ دیشی
مادر علمی ڈھاکہ یونیورسٹی
دور 1967–2001
اصناف افسانوی، غیر افسانوی، مختصر افسانہ، شاعری

احمد صفا (بنگالی: আহমদ ছফা؛ 30 جون 1943ء – 28 جولائی 2001ء) ایک بنگلہ دیشی مصنف، مفکر، ناول نگار، شاعر اور دانشور تھے۔[1] صفا کو پروفیسر عبد الرزاق اور سلیم اللہ خان سے لے کے کئی لوگ میر مشرف حسین اور قاضی نظر الاسلام کے بعد سب سے اہم بنگالی مسلمان مصنف مانتے ہیں۔[1][2][3][4][5] صفا نے 18 غیر افسانوی کتابیں، 8 ناول، 4 شاعری کے مجموعے، 1 مختصر افسانوں کا مجموعہ اور مختلف انواع کے کئی کتابیں لکھیں۔

صفا کا مضمون بنگالی مسلمانیر من (بنگالی مسلمانوں کے ذہن) (1981ء) بنگالی مسلمانوں کی پہچان کی تعمیر، ان کی نارضامندی کی وجہ، ایک برادری کے طور پہ ان کی تصنیف اور ان کی عقلی ترقی کا ایک انتہائی سراہی مبصرانہ جائزہ ہے۔[6][7][8]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب Salimullah Khan (2013) [The chapter was first published in 2009]۔ "Name Ase Name Jay" নামে আসে নামে যায় [Name Matters]۔ Ahmed Sofa Sonjiboni (Bengali زبان میں)۔ Dhaka: Agamee Prakashani۔ صفحہ 21۔ آئی ایس بی این 978-984-04-1585-4۔
  2. Nurul Anwar (2010)۔ "Bhumika" ভূমিকা [Introduction]۔ Sofamrita (Bengali زبان میں)۔ Dhaka: Khan Brothers and Company۔ صفحہ 1۔ آئی ایس بی این 978-984-408-171-0۔
  3. Dr. Mohammad Amin (17 مارچ 2017)۔ "Ahmed Sofa:Bangla Sahityer Anabadya Rupakar"۔ The Daily Sangram (Bengali زبان میں)۔ Dhaka: Bangladesh Publications Ltd.۔ مورخہ 3 اپریل 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 اپریل 2018۔ বাংলা সাহিত্যে এ পর্যন্ত যত প্রাবন্ধিক, লেখক এবং সাহিত্যিক জন্মগ্রহণ করেছেন তন্মধ্যে আহমদ ছফাই সবচেয়ে সাহসী, বুদ্ধিমান, স্বতঃস্ফূর্ত, নির্লোভ, ঋদ্ধ, কুশলী, বহুমুখী, সাধারণ এবং তেজময়। [So far among all writers and intellectuals born in Bengali, Sofa is the most brilliant, brave, spontaneous, selfless, multidimensional, extraordinary and energetic..]... তাঁর প্রবন্ধে গবেষণার ঐকান্তিকতা, ইতিহাসের নিবিড়তা, কাব্যের প্রাণবন্ততা, উপন্যাসের বিমূর্ততা আর নাটকের পরিণতি ত্রিকালদর্শীর মতো চিরন্তন, সতত বর্তমান এবং সংগতকারণে সর্বজনীন।
  4. Mahfuz Anam, ویکی نویس. (28 جولا‎ئی 2015)۔ "The voice of the deprived"۔ The Daily Star (English زبان میں)۔ Dhaka: Transcom Group۔ مورخہ 1 اپریل 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 اپریل 2018۔ Among the contemporary fiction writers in Bangladesh, Sofa ranked first for his thought-provoking and contemplative writings.
  5. Salimullah Khan (28 جولا‎ئی 2012)۔ "Ahmed Sofa Bishaye Salimullah Khan, Sathrang"۔ ATN Bangla (Bengali زبان میں)۔ Dhaka: Asian Television Network۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 اپریل 2018۔ Ahmed Sofa, I think, is the greatest thinker of our country. [at 2:33] Ahmed Sofa is the greatest Bengali Muslim writer after Mir Mosharraf Hossain and Kazi Nazrul Islam. [at 4:00] -[Salimullah Khan]
  6. Ahmad Kabir (2012)۔ "Sofa, Ahmed"۔ بہ Sirajul Islam۔ Banglapedia: National Encyclopedia of Bangladesh (اشاعت 2nd۔)۔ Dhaka: Asiatic Society of Bangladesh۔
  7. Alamgir Khan (16 دسمبر 2014)۔ "Sofa's critique of Bangali Mussalmans"۔ The Daily Observer (English زبان میں)۔ Dhaka: The Observer Ltd.۔ مورخہ 3 اپریل 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 3 اپریل 2018۔
  8. Ahmad Ibrahim (29 اپریل 2017)۔ "Ahmed Sofa In Posterity - Muslim Anxiety In A 'Muslim World'"۔ The Daily Star (English زبان میں)۔ Dhaka: Transcom Group۔ مورخہ 4 اپریل 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 4 اپریل 2018۔