اخلاقی نفسیات

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے

اخلاقی نفسیات (انگریزی: Moral psychology) ایک شعبۂ تعلیم ہے جس میں فلسفہ اور نفسیات دوںوں کا مساوی طور پر مطالعہ کیا جاتا ہے۔ تاریخی طور پر، "اخلاقی نفسیات" کا استعمال کافی حد تک اخلاقی ترقی کے مطالعے کو بیان کرنے کے لیے کیا جاتا رہا ہے۔[1] [2][3][4] تاہم زیادہ جدید طور پر اس اصطلاح کو اخلاقیات، نفسیات اور فلسفہ دماغ کے جڑنے والے بہت سے موضوعات کے مطالعے کو بیان کرنے کے لیے کیا جاتا رہا ہے۔ اس میدان کے سب اہم موضوعات اخلاقی طے شدگی، اخلاقی ترقی، اخلاقی تنوع، اخلاقی کردار (خصوصًا وہ جو ثواب اور گناہ سے متعلق ہو)، رفاہ عالم، نفسیاتی انانیت، اخلاقی خوش قسمتی، اخلاقی پیش قیاسی، اخلاقی جذبہ، مؤثر پیش قیاسی اور اخلاقی عدم رضا مندی شامل ہیں۔[5][6]

افادیت[ترمیم]

اخلاقی نفسیات عالمی سطح پر انسانی سماج کے مطالعات کاایک اہم حصہ ہے۔ اس پر کئی سیمیناروں اور سیمپوزیموں کا انعقاد عمل میں آ چکا ہے۔ لاہور سائیکولو جسٹ فورم (لاہور کے ماہرین نفسیات کے فورم) کے سربراہ اور لاہور گیریثرن یونیورسٹی کے شعبہ اخلاقی نفسیات کے پروفیسر ڈاکٹر بلال صوفی نے 2017ء میں اپنے ایک بیان میں اس تعلق سے کہا تھا کہ ذہنی دباؤ بڑھتا جا رہا ہے اور موجودہ نفسانفسی کے دور میں تو یہ دباؤ اور بھی شدت اختیار کر چکا ہے اس موضوع پر وائس چانسلر لاہور گیر یثرن یونیورسٹی کی خصوصی ہدایت پر یونیورسٹی میں ایک خصوصی سمینار کروانے کا فیصلہ کیا گیا تھا۔[7]

اس تعلق سے ٹورانٹو یونیورسٹی میں مطالعہ پر بھی کافی زور پایا گیا ہے۔ یہ تاثر پایا گیاہے کہ وہاں کے لوگ اخلاقی نفسیات کی بنیادی سائنس کو سمجھنا چاہتے ہیں۔ یہ وہی حصہ ہے جو زبان اور ادراک کے نمونوں کی تفصیل سے متعلق ہے اور ان متنوع اخلاقی اقدار کے حامل لوگوں سے ان کا کیا تعلق ہے۔[8]

2001ء میں ایک کار گر نیا تحقیقی مقالے نے تجویز کیا کہ دو طرفہ نفسیاتی عمل سے دو طرفہ رد عمل سامنے آئے: پہلے منظر میں اخلاقی استدلال، زندگی کی تنوع پر مبنی اخلاقی استدلال، پیڈبرج کے منظر میں خود کار طریقے سے "گٹ رد عمل" سے الگ ہے۔ اخلاقیات کے "دوہرے عمل" کا نظریہ یہ ہے کہ لوگ زیادہ تر اخلاقی فیصلے کرنے کے لیے جذباتی، خود کار طریقے سے رد عمل پر اعتماد کرتے ہیں اور وہ صرف بعض اوقات اخلاقی استدلال کا استعمال کرتے ہیں۔ اس نظریہ نے اخلاقی نفسیات اور فلسفہ کے شعبوں کو تبدیل کر دیا ہے اور اسے "ٹرالیولوجی" کہا جاتا ہے۔ اس نے بھی مقبول مقبولیت حاصل کی ہے، کچھ محققین کے ساتھ موجودہ ثقافتی اور سیاسی تقسیم بانٹنے کرنے کی بجائے خود مختار، خود کار طریقے سے لوگوں کی زندگیوں پر اثر انداز ہوتی ہے۔[9]


مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. See, for example, Lapsley، Daniel K. (1996). Moral Psychology. Developmental psychology series. Boulder, Colorado: Westview Press. ISBN 978-0-8133-3032-7. 
  2. Doris، John؛ Stich، Stephen (2008)، مدیر۔: Zalta، Edward N.، "Moral Psychology: Empirical Approaches"، The Stanford Encyclopedia of Philosophy، Metaphysics Research Lab, Stanford University 
  3. Wallace، R. Jay (November 29, 2007). "Moral Psychology". In Jackson، Frank؛ Smith، Michael. The Oxford Handbook of Contemporary Philosophy. OUP Oxford. صفحات 86–113. ISBN 978-0-19-923476-9. Moral psychology is the study of morality in its psychological dimensions 
  4. Ellemers، Naomi؛ van der Toorn، Jojanneke؛ Paunov، Yavor؛ van Leeuwen، Thed (18 January 2019). "The Psychology of Morality: A Review and Analysis of Empirical Studies Published From 1940 Through 2017". Personality and Social Psychology Review (بزبان انگریزی): 108886831881175. ISSN 1088-8683. PMID 30658545. doi:10.1177/1088868318811759. 
  5. Doris & Stich 2008, §1.
  6. Teper، R.؛ Inzlicht، M.؛ Page-Gould، E. (2011). "Are we more moral than we think?: Exploring the role of affect in moral behavior and moral forecasting". Psychological Science. 22 (4): 553–558. CiteSeerX 10.1.1.1033.5192Freely accessible. PMID 21415242. doi:10.1177/0956797611402513. 
  7. [https://www.urdupoint.com/daily/livenews/2017-01-23/news-890653.html ذہنی دباؤ اور موجودہ نفسانفسی کے دور پرسمینارمارچ میں ہو گا۔ ڈاکٹر بلال صوفی]
  8. "صحتمند بچوں سے لے کر گرین انرجی اسٹوریج تک: U کے T محققین $ 9 ملین کی نئی فنڈنگ ​​میں حصہ لیتے ہیں۔". 16 نومبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 16 نومبر 2019. 
  9. ترقیاتی ماہر نفسیات کا کہنا ہے کہ اخلاقی تصادم کے ساتھ اخلاقی فیصلہ سازی کا شکار رہتا ہے[مردہ ربط]