اردشیر کاؤسجی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
آردیشر کاؤس جی
معلومات شخصیت
پیدائش 13 اپریل 1926ء  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کراچی  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 24 نومبر 2012ء (86 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کراچی  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت پاکستان
برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مذہب پارسی
زوجہ نینسی ڈینسا
خاندان دو بچے
عملی زندگی
مادر علمی بی وی ایس پارسی ہائی سکول  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ صحافی،  اشرافیہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان گجراتی،  انگریزی،  اردو  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دور فعالیت 1988-2011 ستون نویسی

آردشیر کاؤس جی پاکستان سے تعلق رکھنے والے کراچی کے معروف کاروباری شخص اور روزنامہ ڈان کے کالم نگار تھے۔ مختلف سیاسی ادوار میں قومی اداروں کے سربراہ بھی مقرر ہوئے۔ آردشیر کاؤس جی 1926ء میں کراچی میں پیدا ہوئے اور 2012ء کو کراچی میں انتقال کیا۔[1][2][3]

پیدائش[ترمیم]

کاوس جی 13 اپریل 1926ء کو کراچی میں کاوسجی پارسی ( زرتشتی ) خاندان میں پیدا ہوئے۔ ان کے والد، رستم فخرجی کاواسجی، مرچنٹ شپنگ میں ایک کاروباری تھے اور خاندان گھر میں گجراتی بولتا تھا[4]

تعلیم[ترمیم]

اردشیر نے بائی ویر بائی جی سوپاری والا (BVS) پارسی ہائی اسکول میں تعلیم حاصل کی اور ڈی جے سائنس کالج کراچی سے گریجویشن کی ۔

کاروباری زندگی[ترمیم]

بعد میں، انھوں نے اپنے والد کے کاروبار، کاوسجی گروپ میں شمولیت اختیار کی ۔ 1953ء میں، انھوں نے نینسی ڈنشا سے شادی کی، جس سے ان کے دو بچے تھے - آوا (بیٹی) اور رستم (بیٹا)۔

کاواسجی ایک خاندانی شپنگ کمپنی کے مالک تھے، جو پاکستان کی آزادی کے وقت کراچی کی سب سے بڑی شپنگ کمپنی تھی۔ اس شپنگ کمپنی کو ذو الفقار علی بھٹو کے دور میں نیشنلائز کر دیا گیا تھا ۔ انھیں وزیر اعظم ذو الفقار علی بھٹو نے 1973ء میں پاکستان ٹورازم ڈویلپمنٹ کارپوریشن (PTDC) کے منیجنگ ڈائریکٹر کے طور پر مقرر کیا تھا۔ انھیں 1976ء میں ذو الفقار علی بھٹو نے 72 دن کے لیے جیل بھیج دیا تھا۔جس کی آج تک کوئی وضاحت نہیں دی گئی ہے۔ کہا جاتا ہے کہ وزیر اعظم بھٹو نے ایسا اس لیے کیا کیونکہ کاوسجی بھٹو کے آمرانہ طریقوں کے بارے میں تیزی سے آواز اٹھا رہے تھے۔

کالم نگاری[ترمیم]

کاوس جی نے بعد میں ڈان اخبار کے ایڈیٹر کو خط لکھنا شروع کیے جس کی وجہ سے وہ مستقل کالم نگار بن گئے۔ اس کے بعد سے، ڈان میں ان کے سخت اور تحقیقی کالم مسلسل مختلف مقامی، صوبائی اور قومی حکومتوں میں بدعنوانی ، اقربا پروری اور نااہلی کو بے نقاب کرتے رہے۔ ڈان کے لیے کاوسجی کا آخری مضمون 25 دسمبر 2011 کو شائع ہوا تھا۔

لاس اینجلس ٹائمز نے اس کی وضاحت اس طرح کی ہے: "اسلامی وطن کے طور پر تشکیل دی گئی اس قوم میں ان کی ایک ضدی غیر مسلم آواز ہے، جسے خاموش کرنے سے انکار کیا گیا ہے۔ اس کی جان کو خطرہ لاحق ہے،

سماجی خدمات[ترمیم]

کالم نویس کے علاوہ آردیشر کاؤس جی کو بزنس مین اور سماجی کارکن کی حیثیت سے بھی جانا جاتا ہے۔

انھوں نے کاؤس جی فاؤنڈیشن بھی قائم کی تھی جس کے ذریعے وہ مختلف تعلیمی اداروں کی مالی امداد کیا کرتے تھے اور ہونہار طالبعلموں کو مزید تعلیم حاصل کرنے کے لیے سکالر شپ بھی دیا کرتے تھے۔

تصانیف[ترمیم]

  • Vintage Cowasjee: A Selection Of Writings From DAWN 1984-2011
  • A Selection of Writings from Dawn, 1984-2011 with a Foreword by Amina Jilani

وفات[ترمیم]

کاوسجی کا انتقال 86 سال کی عمر میں 24 نومبر 2012ء کو ہوا۔ وہ سینے کی بیماری میں مبتلا تھے اور بارہ دن تک ہسپتال میں رہے،[5]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "کالم نگار آردیشر کاؤس جی نہیں رہے"۔ بی بی سی۔ 24 نومبر 2012ء۔ 24 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  2. "Veteran Pakistani columnist Cowasjee passes away at 86"۔ ڈان۔ 24 نومبر 2012ء۔ 24 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  3. "Mourning a man who mourned for Pakistan"۔ ڈان۔ 24 نومبر 2012ء۔ 24 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  4. https://www.bbc.com/urdu/pakistan/2012/11/121124_cowsjee_dead_ra
  5. https://www.bbc.com/urdu/pakistan/2012/11/121124_cowsjee_dead_ra