ارنب گوسوامی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ارنب گوسوامی
অৰ্ণৱ গোস্বামী
ارنب گوسوامی ویکی اجلاس، 2011ء کے موقع پر
ارنب گوسوامی ویکی اجلاس، 2011ء کے موقع پر

معلومات شخصیت
پیدائش اکتوبر 1973 (عمر 46 سال)
گوہاٹی[1]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
قومیت بھارتی
نسل آسامی[2][3][4]
جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں سیاسی جماعت کی رکنیت (P102) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
تعليم ہندو کالج، دہلی یونیورسٹی
سینٹ انتونی کالج، اوکسفرڈ[5]
مادر علمی ہندو کالج، دہلی[6]
سینٹ اینتھونی کالج، اوکسفرڈ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ اخباری میزبان
دور فعالیت 1995ء تا حال
کارہائے نمایاں دی نیوز آور،
فرینکلی اسپیکنگ ود ارنب

ارنب گوسوامی ایک بھارتی صحافی ہیں جو ٹائمز ناؤ نامی نیوز چینل کے میزبان اور مدیر اعلیٰ رہ چکے ہیں۔[7][8][9] ٹائمز ناؤ پر وہ دی نیوز آور نامی مباحثہ کی میزبانی کرتے رہے ہیں جو اتوار اور ہفتہ کو چھوڑ کر ہر روز رات 9 بجے نشر ہوتا ہے۔[10][11][12] نیز انہوں نے خصوصی ٹی وی پروگرام "فرینکلی اسپیکنگ ود ارنب" کی میزبانی بھی کی ہے جس میں نامور لوگ شامل ہوتے ہیں۔[13][14] ارنب گوسوامی کو ان کی صحافتی خدمات پر بہت سے اعزاز ملے ہیں۔ اور اپنی صحافتی صلاحیتوں کو استعمال کرتے ہوئے انہوں نے بہت سی کتابیں بھی لکھی ہیں، مثلاً کمپیٹیبل ٹیررزم، دی لیگل چیلنج وغیرہ۔ 1 نومبر 2016ء کو ارنب نے ٹائمز ناؤ کی ادارت سے استعفا دے دیا۔[7]

نجی زندگی[ترمیم]

پیدائش اور خاندان[ترمیم]

ارنب گوسوامی کی پیدائش آسام کے دار الحکومت گوہاٹی میں 9 اکتوبر سنہ 1973ء میں ہوئی۔[15] ارنب کا تعلق آسام کے ایک نامور برہمن اور قانون دان خاندان سے ہے۔ ان کے دادا رجنی کانت گوسوامی وکیل، کانگریسی رہنما اور مجاہد آزادی تھے،[4] ان کے نانا گوری شنكر بھٹاچاریا ایک کالم نگار اور آسام میں عرصے تک حزب مخالف کے رہنما رہے۔[4] وہ ایک مجاہد آزادی اور مفکر تھے، انہیں آسام ساہتیہ سبھا اعزاز بھی دیا گیا تھا۔

تعلیم اور ازدواجی زندگی[ترمیم]

ارنب ایک فوجی افسر کے بیٹے ہیں اس لیے ان کی تعلیم مختلف مقامات پر ہوئی۔ انہوں نے دسویں جماعت کے بورڈ کا امتحان ماؤنٹ سینٹ میری اسکول سے دیا جو دہلی چھاؤنی میں واقع ہے اور بارہویں جماعت کا امتحان کیندریہ اسکول سے دیا جو جبل پور چھاؤنی میں واقع ہے۔ ارنب نے معاشریات کے موضوع پر اپنی گریجویشن کی تکمیل دہلی ہندو کالج سے کی۔ جبکہ سماجی بشریات کے موضوع پر اپنی ماسٹرز ڈگری اوکسفرڈ یونیورسٹی کے سینٹ انتونی کالج (1994ء) سے کی۔ وہ 2000ء میں کیمبرج یونیورسٹی کے سڈنی سسیکس کالج کے انٹرنیشنل اسٹڈیز ڈپارٹمنٹ میں رفیق کی حیثیت سے تھے جہاں وہ ڈی سی پیوٹ رفیق رہ چکے ہیں۔

ارنب گوسوامی کی بیوی کا نام پی پی گوسوامی ہے۔ ان کا ایک بیٹا بھی ہے۔ ان کا دہلی اور ممبئی دونوں جگہ آنا جانا لگا رہتا ہے۔ ان کے والدین اپنے آبائی وطن گوہاٹی میں مقیم ہیں۔

پیشہ ورانہ زندگی[ترمیم]

این ڈی ٹی وی میں آنے سے قبل ارنب گوسوامی نے اپنی پیشہ ورانہ زندگی کے سفر کا آغاز دی ٹیلیگراف (کلکتہ) سے کیا جہاں وہ ایک سال اخبار کے مدیر رہے۔ پھر 1995ء میں انہوں نے این دی ٹی وی میں کام کرنا شروع کیا جہاں وہ خبرنامہ کے میزبان تھے اور وہ نیوز ٹو نائٹ نامی ایک پروگرام کی رپورٹنگ کرتے تھے۔ جلد ہی ارنب این ڈی ٹی وی کا اہم حصہ (1998ء) بن گئے۔ انہوں نے نیوز آور نامی پروگرام کی میزبانی کی (1998ء-2003ء)، نیوز آور اخباری تجزیہ پر مبنی نشریات پر مشتمل سب سے طویل چینل رہا ہے، اتنا طویل اخباری تجزیہ کسی دوسرے چینل پر نہیں دکھایا جاتا تھا۔ این ڈی ٹی وی 24x7 کے سینئر ایڈیٹر ہونے کی وجہ سے وہ پورے چینل کے ذمہ دار تھے۔ وہ اس چینل کے بلند پایہ اخباری تجزیہ پروگرام نیوز نائٹ کے میزبان بھی رہ چکے ہیں، جس کی بنا پر ان کو 2004ء میں سب سے بہتر اخباری میزبان کا انعام بھی ملا تھا۔ انہوں نے تقریبا 10 سال کام کیا، پھر انہوں نے ٹائمز ناؤ نامی نیوز چینل شروع کیا۔ جس میں وہ نیوز آور نامی پروگرام کے میزبان تھے۔ اس پروگرام میں انتہائی معروف شخصیات آچکی ہیں مثلاً پرویز مشرف، راہل بجاج وغیرہ۔ 11 جولائی 2006ء میں ممبئی ٹرین بم دھماکے کے وقت 26 گھنٹے کی میزبانی کی تھی جس میں انہوں نے 200 سے زائد رہنماؤں کے انٹرویو لیے تھے۔ 65 گھنٹے سے زیادہ عرصہ تک انہوں نے 26/11 ممبئی دہشت گردانہ حملوں کی رپورٹنگ کی تھی۔ اسی دوران میں انہوں نے ایک اور شو "فرینکلی اسپیکنگ ود ارنب" کی میزبانی کی، جس میں کچھ معروف شخصیات بھی آئیں، مثلاً بھارت کے وزیر اعظم نریندر مودی، بے نظیر بھٹو، سابق برطانوی وزیر اعظم گورڈن براؤن، افغانستان کے صدر حامد کرزئی، جلاوطن دلائی لاما، سونیا گاندھی اور راہل گاندھی وغیرہ۔ انہوں نے بہت سی کتابیں بھی لکھی ہیں، مثلاً کمپیٹیبل ٹیررزم، دی لیگل چیلنج وغیرہ۔ 1 نومبر 2016ء کو ارنب نے ٹائمز ناؤ کی ادارت سے استعفا دے دیا۔

اعزازات[ترمیم]

ارنب گوسوامی کو ان کی صحافتی خدمات پر بہت سے اعزاز ملے ہیں :

  • 2003ء- ایشین ٹیلی ویژن اعزاز برائے بہترین میزبان
  • 2007ء- سوسائٹی ینگ اچیورز اعزاز برائے امتیاز در میڈیا
  • 2008ء- انڈین نیوز بروڈكاسٹگ ایوارڈ برائے تخلیقی مدیر اعلی
  • 2010ء- نیوز لائیو کی جانب سے سال کی آسامی شخصیت کا اعزاز
  • 2010ء- انڈین ایکپریس گروپ کی جانب سے رام ناتھ گوئنکا اعزاز برائے صحافتی امتیاز
  • 2012ء- ای این بی اے اعزاز برائے سال کا اخباری مدیر اعلی

حوالہ جات[ترمیم]

  1. https://web.archive.org/web/20120401104420/http://www.assamtribune.com/scripts/details.asp?id=jan1810%2FCity3 — اخذ شدہ بتاریخ: 20 جولا‎ئی 2018
  2. "Interview in News time Assam"۔ NEWS TIME ASSAM۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  3. "He is the best known Assamese face in the world"۔ www.mxmindia.com۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  4. ^ ا ب پ "The Soil Beckons"۔ outlookindia.com۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 4 اگست 2011۔
  5. "Arnab Goswami – Times Now"۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 دسمبر 2015۔
  6. http://hinducollege.ac.in/dis-alumni.aspx — اخذ شدہ بتاریخ: 28 فروری 2018
  7. ^ ا ب Arnab Goswami resigns as Editor-in Chief of Times Now | The Indian Express
  8. Arundhati Roy۔ "Arundhati Roy: Mumbai was not India's 9/11 | World news"۔ theguardian.com۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جنوری 2014۔
  9. "Television news will dominate 50% of the revenues: Arnab Goswami"۔ Exchange4media.com۔ 22 جنوری 2014۔ مورخہ 3 فروری 2014 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جنوری 2014۔
  10. Anuradha Raman۔ "Wrecking News"۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  11. Hartosh Singh Bal۔ "The Arnab Cast of Characters"۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  12. Shahjahan Madampat۔ "The Nation Will Skewer You Now"۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  13. "Rahul Gandhi's first interview: Full text – ٹائمز آف انڈیا"۔ Timesofindia.indiatimes.com۔ 27 جنوری 2014۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جنوری 2014۔
  14. "The Gandhi-Goswami Smackdown – India Real Time – WSJ"۔ Blogs.wsj.com۔ 27 جنوری 2014۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جنوری 2014۔
  15. "Award to Arnab Goswami"۔ The Assam Tribune۔ Guwahati۔ 18 جنوری 2010۔ مورخہ 1 اپریل 2012 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 جولا‎ئی 2011۔

بیرونی روابط[ترمیم]