اسرائیل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
ریاست اسرائیل
Centered blue star within a horizontal triband
Centered menorah surrounded by two olive branches
پرچم ایمبلم
ترانہ: "Hatikvah" (سانچہ:Langnf)

Location of Israel (in green)
Location of Israel
دار الحکومت یروشلم بین الاقوامی سطح پر متنازع
سب سے بڑا شہر دار الحکومت
دفتری زبانیں
نسلی گروہ (2016[1])
نام آبادی اسرائیلی
حکومت وحدانی پارلیمانی جمہوریہ
• صدر
رووین رولین
بنیامین نیتنیاہو
مقننہ اسرائیلی پارلیمنٹ
آزاد
14 مئی 1948
11 مئی 1949
رقبہ
• کل
20,770–22,072 kمیٹر2 (8,019–8,522 مربع میل)[a] (149واں)
• آبی
440 kمیٹر2 (170 مربع میل)
• آبی (%)
2.12%
آبادی
• 2016 تخمینہ
8,541,000[2] (98واں)
• 2008 مردم شماری
7,412,200[3] (99واں)
• کثافت
387.63 /کلومیٹر2 (1,004.0 /میل مربع) (34واں)
خام ملکی پیداوار (مساوی قوت خرید) 2016[4] تخمینہ
• کل
$297.046 بلین (55واں)
• فی کس
$34,833 (33rd)
خام ملکی پیداوار (برائے نام) 2016[4] تخمینہ
• کل
$311.739 بلین (35th)
• فی کس
$36,556 (23واں)
جینی (2012) 42.8[5]
متوسط · 106واں
انسانی ترقیاتی اشاریہ (2014) Increase2.svg 0.894[6]
انتہائی اعلی · 18واں
کرنسی New shekel (‎) (ILS)
منطقۂ وقت IST (متناسق عالمی وقت+2)
IDT (متناسق عالمی وقت+3)
تاریخ ہیئت
  • אא-בב-גגגג (AM)
  • dd-mm-yyyy (CE)
ڈرائیونگ سمت right
کالنگ کوڈ +972
انٹرنیٹ ڈومین ۔il
۔ישראל
  1. ^ 20,770 is Israel within the Green Line۔ 22,072 includes the annexed Golan Heights اور East Jerusalem۔

اسرائیل (عبرانی: יִשְׂרָאֵל) مغربی ایشیا کا ایک ملک ہے جو بحیرہ روم کے جنوب مشرقی ساحل پر واقع ہے۔ اس کے شمال میں لبنان، شمال مشرق میں شام، مشرق میں اردن، مشرق اور جنوب مشرق میں فلسطین اور جنوب میں مصر، خلیج عقبہ اور بحیرہ احمر واقع ہیں۔ اسرائیل خود کو یہودی جمہوریہ کہلاتا ہے اور دنیا میں واحد یہود اکثریتی ملک ہے۔

29 نومبر، 1947ء کو اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے فلسطین کی تقسیم کا منصوبہ منظور کیا۔ 14 مئی، 1948ء کو ڈیوڈ بن گوریان نے اسرائیل کے ملک کے قیام کا اعلان کیا۔ 15 مئی، 1948ء کو یعنی اعلان آزادی کے اگلے روز کئی ہمسائیہ ممالک نے اسرائیل پر حملہ کر دیا۔ بعد کے برسوں میں بھی کئی بار اسرائیل کے ہمسائیہ ممالک اس پر حملہ کر چکے ہیں۔

اسرائیل کا معاشی مرکز تل ابیب ہے جبکہ سب سے زیادہ آبادی اور صدر مقام یروشلم کو کہا جاتا ہے۔ تاہم بین الاقوامی طور پر یروشلم کو اسرائیل کا حصہ نہیں مانا جاتا۔

نسلی اعتبار سے اسرائیل میںاشکنازی یہودی، مزراہی یہودی، فلسطینی، سفاردی یہودی، یمنی یہودی، ایتھوپیائی یہودی، بحرینی یہودی، بدو، دروز اور دیگر بے شمار گروہ موجود ہیں۔ 2014ء میں اسرائیل کی کل آبادی 8146300 تھی۔ ان میں سے 6110600 افراد یہودی ہیں۔ اسرائیل کا دوسرا بڑا نسلی گروہ عرب ہیں جن کی آبادی 1686000 افراد پر مشتمل ہے۔ اس کے علاوہ عیسائی اور افریقی ممالک سے آنے والے پناہ گزین اور دیگر مذاہب کے افراد بھی یہاں رہتے ہیں۔

اسرائیل میں نمائندہ جمہوریت ہے اور پارلیمانی نظام چلتا ہے۔ حق رائے دہی سب کو حاصل ہے۔ وزیر اعظم حکومت کا سربراہ ہوتا ہے اور یک ایوانی پارلیمان ہے۔ اسرائیل ایک ترقی یافتہ ملک ہے اور دنیا کی 43ویں بڑی معیشت ہے۔ مشرق وسطیٰ میں معیار زندگی کے اعتبار سے اسرائیل سب سے آگے ہے اور ایشیا میں تیسرے نمبر پر ہے۔ دنیا میں اوسط زیادہ سے زیادہ عمر کے حوالے سے اسرائیل دنیا کے چند بہترین گنے چنے ممالک میں شامل ہے۔

تاریخ

دور قدیم

سرزمین اسرائیل کی اصطلاح قدیم زمانے سے ہی یہودی لوگوں کے لئے مقدس اور اہم رہی ہے۔ توریت کے مطابق خدا نے یہودی لوگوں کے تین قبائل کو اس سرزمین کا وعدہ کیا تھا۔

قرون وسطیٰ

635ء میں یروشلم سمیت یہ سارا علاقہ عربوں نے فتح کر لیا۔ اگلے 1300 سال تک یہ علاقہ مسلمانوں کے زیر انتظام رہا اورپہلے چھ سو سال تک اموی، عباسی اور صلیبی جنگجو اس پر باری باری قابض ہوتے رہے۔ 1260ء میں مملوک خاندان نے یہاں قبضہ کر لیا۔

1516ء میں عثمانی سلطان نے یہاں قبضہ کر لیا اور یہ علاقہ پہلی جنگ عظیم تک ترکی کے زیرانتظام رہا۔ جنگ کے اختتام پر ترکی کی شکست کے ساتھ ہی یہاں برطانیہ نے قبضہ کر لیا۔ 1920ء میں اس علاقے کو تقسیم کیا۔

آزادی اور ابتدائی سال

دوسری جنگ عظیم کے بعد برطانیہ کو یہودی لوگوں سے مسائل شروع ہو گئے جنہوں نے برطانوی راج کے خلاف احتجاج شروع کر دیا تھا۔ اسی وقت مرگ انبوہ سے بچنے والے لاکھوں افراد اور ان کے خاندان والوں نے یورپ میں اپنے تباہ شدہ گھروں سے دور اپنا وطن تلاش کرنا شروع کر دیا تاہم برطانوی حکومت انہیں زبردستی دوسری جگہوں کے کیمپوں میں بھیج دیتی تھی۔ 1947ء میں برطانیہ نے اعلان کیا کہ وہ کوئی ایسا حل تلاش کرنے میں ناکام رہی ہے کہ جس پر عرب اور یہودی دونوں متفق ہو سکیں، اس لئے وہ اس علاقے سے انخلاء کے بارے سوچ رہا ہے۔

15 مئی 1947ء کو اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے فلسطین کے لئے ایک نئی کمیٹی بنائی۔ 3 ستمبر 1947ء کو اس کمیٹی نے رپورٹ پیش کی کہ برطانوی انخلاء کے بعد اس جگہ ایک یہودی اور ایک عرب ریاست کے ساتھ ساتھ یروشلم کے شہر کو الگ الگ کر دیا جائے۔ یروشلم کو بین الاقوامی نگرانی میں رکھا جائے گا۔ 29 نومبر 1947ء کو جنرل اسمبلی نے اس بارے قرار دار منظور کی ۔

یہودیوں کی نمائندہ تنظیم جیوش ایجنسی نے اس منصوبے کو قبول کر لیا لیکن عرب لیگ اور فلسطین کی عرب ہائیر کمیٹی نے اسے مسترد کر دیا۔ یکم دسمبر 1947 کو عرب ہائی کمیٹی نے تین روزہ ہڑتال کا اعلان کیا اور عربوں نے یہودیوں پر حملے شروع کر دیے۔ ابتداء میں خانہ جنگی کی وجہ سے یہودیوں نے مدافعت کی لیکن پھر وہ بھی حملہ آور ہو گئے اور فلسطینی عرب معیشت تباہ ہو گئی اور اڑھائی لاکھ فلسطینی عرب یا تو ملک چھوڑ کر گئے یا پھر انہیں نکال دیا گیا۔

14 مئی 1948ء کو برطانوی اقتدار کے ختم ہونے سے ایک دن قبل جیوش ایجنسی کے سربراہ ڈیوڈ بن گوریان نے مملکت اسرائیل کے قیام کا اعلان کیا۔

اگلے دن چار عرب ملکوں، مصر، شام، اردن اور عراق کی افواج فلسطین میں داخل ہو گئیں اور 1948 کی عرب اسرائیل جنگ شروع ہوئی۔ سعودی عرب نے مصری سربراہی میں فوجی بھیجے اور یمن نے اعلان جنگ تو کیا لیکن براہ راست شریک نہ ہوا۔ عرب ممالک نے جنگ شروع کرنے کی وجہ یہ بتائی کہ خون خرابا بند ہو اور یہ ان کے ممالک تک نہ پھیل جائے۔ ایک سال کی جنگ کے بعد جنگ بندی ہوئی اور موجود ویسٹ بینک اور جنوبی یروشلم پر اردن نے قبضہ کر لیا تھاجبکہ مصر کے قبضے میں غزہ کی پٹی آئی۔ اقوام متحدہ کے اندازے کے مطابق اسرائیل سے 7 لاکھ فلسطینی یا تو نکل گئے یا انہیں نکال دیا گیا۔

11 مئی 1949ء کو اقوام متحدہ میں اکثریتی رائے سے اسرائیل کو رکن منتخب کر لیا گیا۔ ابتدائی برسوں میں وزیر اعظم ڈیوڈ بن گوریان سیاسی طور پر سب سے نمایاں رہے۔ اسی دوران مرگ انبوہ سے بچنے والے افراد اور دیگر مسلمان اور عرب ممالک سے نکالے گئے یہودیوں نے بھی اسرائیل کا رخ کیا اور محض دس برسوں میں اسرائیل کی آبادی آٹھ لاکھ سے بڑھ کر بیس لاکھ ہو گئی۔ اس لئے اس عرصے میں خوراک، ملبوسات اور فرنیچر کی راشن بندی ہوئی تھی۔

اسرائیل کو آنے والے بعض افراد اس نیت سے آئے تھے کہ انہیں یہاں بہتر زندگی ملے گی، کچھ لوگوں کو ان کے آبائی ممالک میں نشانہ بنایا جاتا تھا اور کئی لوگ صیہونی فلسفے پر یقین رکھتے تھے۔ ان پناہ گزین افراد کو ان کے آبائی وطن کے حوالے سے الگ الگ سلوک کا سامنا تھا۔ یورپ سے آنے والے یہودیوں کو معاشی اور معاشرتی اعتبار سے اہمیت دی جاتی تھی اس لئے انہیں پہلے آنے کا حق دیا جاتا تھا اور عربوں کے چھوڑے مکانات بھی انہیں پہلے دیے جاتے تھے۔ مشرق وسطیٰ اور شمالی افریقہ سے آنے والے یہودیوں کے بارے عام رائے یہ تھی کہ وہ سست، غریب اور مذہبی اور ثقافتی اعتبار سے پسماندہ ہوتے ہیں اس لئے انہیں مہاجر کیمپوں میں زیادہ عرصہ انتظار کرنا پڑتا تھا کہ انہیں اجتماعی زندگی کے لئے مناسب نہیں سمجھا جاتا تھا۔ یہ مسائل اس حد تک بڑھے کہ اس پر تصادم شروع ہو گئے جو آئندہ برسوں میں بڑھتے چلے گئے۔

1950 کی دہائی میں اسرائیل پر فلسطینی فدائیوں کے حملے عام بات تھے جن کی اکثریت مصری زیر انتظام غزہ کی پٹی سے آتی تھی۔ 1956 میں مصر نے نہر سوئیز کو قومیا کر اسرائیلی جہازوں کے لئے بند کر دی۔ برطانیہ سے خفیہ معاہدے کے بعد اسرائیل نے جزیرہ نما سینائے پر حملہ کیا لیکن بین الاقوامی دباؤ پر اسرائیل نے اپنی فوجیں واپس بلا لیں اور یہ معاہدہ طے پایا کہ اسرائیل کی تجارتی آمد و رفت بحر احمر اور نہر سوئیز سے جاری رہے گی۔

1960 کی دہائی کے اوائل میں اسرائیل نے مرگ انبوہ کا ایک اہم مجرم اڈولف ایچمین ارجنٹائن سے پکڑا اور پھر اسے اسرائیل لا کر اس پر مقدمہ چلایا گیا۔ اسرائیل کی عدالت سے سزائے موت پانے والا یہ واحد شخص ہے۔

جنگیں اور امن معاہدے

1964 سے عرب ممالک اس خدشے کے پیش نظر کہ اسرائیل دریائے اردن کا رخ موڑ کر انہیں پانی سے محروم کر دے گا، خود اس دریا کا رخ موڑنے پر کام کر رہے ہیں جس کی وجہ سے اسرائیل، شام اور لبنان کے درمیان مسائل بڑھ رہے ہیں۔

اقوام متحدہ کے مطابق 1967 میں اسرائیل نے جب غزہ کی پٹی پر قبضہ کیا تو فلسطین کے پانی کے حقوق پر تنازعہ کھڑا ہو گیا ہے۔

عرب قوم پرستوں نے جمال عبدالناصر کی قیادت میں اسرائیل کو تسلیم کرنے سے انکار کرتے ہوئے اس کو تباہ کرنے کا اعلان کیا۔ 1967 میں مسائل اتنے بڑھ گئے کہ عرب ممالک نے اپنی فوجوں کو متحرک کرنا شروع کر دیا تو اسرائیل نے پہل کرتے ہوئے چھ روزہ جنگ شروع کی۔ جنگ میں اسرائیلی فضائیہ نے عرب مخالفین مصر، اردن، شام اور عراق پر اپنی برتری ثابت کر دی۔ اس جنگ میں اسرائیل نے غزہ کی پٹی، ویسٹ بینک، جزیرہ نما سینائی اور گولان کی پہاڑیوں پر قبضہ کر لیا۔ یروشلم کی حدود کو بڑھا دیا گیا اور مشرقی یروشلم بھی اسرائیل کے قبضے میں آ گیا۔

جنگ کے بعد اسرائیل کو فلسطینیوں کی طرف سے مزاحمت اور سینائی میں مصر کی جانب سے جھڑپوں کا سامنا کرنا پڑا۔ دیگر گروہوں کی نسبت 1964 میں بننے والی پی ایل او نے ابتداء میں خود کو "مادر وطن کی آزادی کے لئے مسلح جدوجہد" کے لئے وقف کر دیا تھا۔ 1960 کی دہائی کے اواخر اور 1970 کی دہائی کے اوائل میں فلسطینی گروہوں نے اسرائیل اور دنیا بھر میں یہودی مقامات اور افراد کو نشانہ بنائے رکھا جس میں 1972 کے میونخ اولمپکس میں اسرائیلی کھلاڑیوں کا قتل عام بھی شامل ہے۔ جواب میں اسرائیل نے اس قتل عام کے منصوبہ بندوں کے خلاف قتل کی مہم شروع کی اور لبنان میں پی ایل او کے صدر دفتر پر بھی بمباری کی۔

6 اکتوبر 1973 کو یہودی یوم کپور کا تہوار منا رہے تھے کہ مصر اور شام کی افواج نے جزیرہ نما سینائی اور گولان کی پہاڑیوں پر حملہ کر دیا۔ یہ جنگ 26 اکتوبر کو اسرائیل کی فتح پر ختم ہوئی لیکن اسے کافی سخت نقصانات اٹھانے پڑے۔ اگرچہ اندرونی تحقیقات سے حکومت کی کوئی کمی یا کوتاہی نہیں نکلی لیکن عوامی دباؤ پر وزیر اعظم گولڈا میئر نے استعفیٰ دے دیا۔

جولائی 1976 میں اسرائیلی کمانڈوز نے یوگنڈا کے ائیرپورٹ پر محبوس 102 افراد کو بحفاظت بازیاب کرایا جسے پی ایل او کے گوریلوں نے یرغمال بنایا ہوا تھا۔

1977 کے انتخابات میں لیکوئڈ پارٹی نے لیبر پارٹی کی جگہ حکمرانی سنبھال لی۔ بعد میں اسی سال مصری صدر انور السادات نے اسرائیل کا سرکاری دورہ کیا اور اسرائیلی قومی اسمبلی سے بھی خطاب کیا۔ کسی بھی عرب سربراہ مملکت کی طرف سے اسرائیل کو تسلیم کرنے کا یہ پہلا واقعہ تھا۔

11 مارچ 1978 کو پی ایل او کے گوریلوں نے لبنان سے حملہ کر کے 38 اسرائیلی شہریوں کو قتل کیا۔ اسرائیل نے جواب میں جنوبی لبنان پر حملہ کر کے پی ایل او کے مراکز تباہ کر دیے۔ پی ایل او کے گوریلے پسپا ہو گئے لیکن اسرائیل نے لبنان کی فوج اور اقوام متحدہ کی امن فوج کے آنے تک انتظام سنبھالے رکھا۔ جلد ہی پی ایل او کے گوریلوں نے اسرائیل پر جنوبی جانب سے حملے کرنا شروع کر دیے جس کے جواب میں اسرائیل نے بھی مسلسل زمینی اور فضائی جوابی کاروائیاں جاری رکھیں۔

اسی دوران بیگن کی حکومت نے یہودیوں کو مقبوضہ غربی کنارے پر آباد ہونے کے لئے سہولیات دینا شروع کیں تو عربوں اور اسرائیلیوں کے مابین کشمکش اور تیز ہو گئی۔ 1980 میں منظور ہونے والے بنیادی قانون کے تحت یروشلم کو اسرائیل کا دارلحکومت قرار دیا گیا جو بین الاقوامی قوانین کے تحت غیر قانونی فیصلہ ہے اور غربی کنارے پر یہودیوں کی آبادکاری کو بھی بین الاقوامی برادری کی جانب سے سخت مخالفت کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ 1981 میں اسرائیل نے گولان کی پہاڑیوں کو اسرائیل کا حصہ قرار دے دیا اگرچہ بین الاقوامی طور پر اس فیصلے کی کوئی قانونی حیثیت نہیں۔

7 جون 1981 کو اسرائیلی فضائیہ نے عراق کے ایٹمی ری ایکٹر کو تباہ کیا جو بغداد کے پاس ہی واقع تھا۔ 1982 میں پی ایل او کے مسلسل حملوں کے جواب میں اسرائیل نے لبنان میں پی ایل او کے مراکز کو تباہ کر دیا۔ جنگ کے ابتدائی چھ دنوں میں اسرائیل نے پی ایل او کے مراکز کو اردن میں تباہ کر دیا اور شامیوں کو شکست دی۔ اسرائیلی حکومتی تحقیقاتی کمیشن جسے کاہان کمیشن کے نام جانا جاتا ہے، نے بیگن، شیرون اور دیگر کئی اعلٰی حکومتی عہدیداروں کو صابرہ اور شتیلہ کے قتلِ عام کا ذمہ دار قرار دیا۔ 1985 میں قبرص میں ہونے والے فلسطینی دہشت گرد حملے کے جواب میں تیونس میں پی ایل او کے صدر دفتر کو تباہ کر دیا۔ اسرائیل اگرچہ 1986 میں لبنان کے زیادہ تر حصے سے نکل آیا تھا لیکن اس نے جنوبی لبنان میں حفاظتی بفر زون 2000 تک قائم رکھے۔

فلسطینیوں کی طرف سے اسرائیل کے خلاف ہونے والا پہلا انتفادہ 1987 میں شروع ہوا اور غربی کنارے اور غزہ میں مظاہرے اور تشدد پھوٹ پڑا۔ اگلے چھ سال تک انتفادہ زیادہ مربوط ہوتا گیا اور اس کا نشانہ اسرائیلی معیشت اور ثقافت تھیں۔ اس دوران ہزار سے زیادہ افراد ہلاک ہوئے جن کی اکثریت فلسطینی نوجوان تھے جو اسرائیلی فوج پر پتھر پھینکتے تھے۔ شمالی اسرائیل پر پی ایل او کے مسلسل حملوں کے جواب میں اسرائیل نے 1988 میں جنوبی لبنان میں کارروائی کی۔ کویت کے بحران کے دوران اسرائیلی محافظین نے مسجد اقصٰی میں احتجاجی جلوس پر فائرنگ کی جس سے 20 افراد جاں بحق اور 150 زخمی ہوئے۔ 1991 کی خلیج کی جنگ کے دوران فلسطینیوں کی ہمدردیاں عراق کے ساتھ تھیں اور عراق نے کئی بار اسرائیل پر سکڈ میزائل سے حملے بھی کئے۔ عوامی اشتعال کے باوجود امریکہ کے کہنے پر اسرائیل نے کوئی جوابی کارروائی نہیں کی۔

1992 میں یتزاک رابن وزیر اعظم منتخب ہوئے۔ ان کی انتخابی مہم کا اہم پہلو اسرائیل کے ہمسائیہ ممالک سے تعلقات کی بہتری تھی۔ اگلے سال اسرائیل کی جانب سے شمعون پیریز اور پی ایل او کی طرف سے محمود عباس نے معاہدہ اوسلو پر دستخط کئے جس کے مطابق فلسطینی نیشنل اتھارٹی کو مغربی کنارے اور غزہ کی پیٹی کے انتظامی اختیارات دیے گئے۔ پی ایل او نے اسرائیل کے وجود کو تسلیم کیا اور دہشت گردی کے خاتمے پر اتفاق کیا۔ 1994 میں اسرائیل اور اردن کے درمیان امن معاہدہ ہوا جس سے اردن اسرائیل سے سفارتی تعلقات قائم کرنے والا دوسرا ملک بن گیا۔ تاہم اسرائیل کی جانب سے آباد کاری کا جاری رہنا، چیک پوائنٹس قائم رہنا اور معاشی حالات کا ابتر ہونے کی وجہ سے عرب عوام میں اسرائیل مخالف جذبات ابھرے۔اسرائیلی عوام میں اس معاہدے کے خلاف جذبات بھڑکے جب فلسطینیوں نے خود کش حملے شروع کر دیے۔ آخر کار نومبر 1995 میں ایک امن ریلی کے اختتام پر یتزاک رابن کو ایک انتہائی دائیں بازو کے خیالات رکھنے والے یہودی نے قتل کر دیا۔

1990 کی دہائی کے آخر پر اسرائیل بنجامن نیتن یاہو کی زیر قیادت ہیبرون سے نکل گیا اور ایک معاہدے کے تحت فلسطینی نیشنل اتھارٹی کو زیادہ اختیارات دیے۔ 1999 میں ایہود باراک کو وزیرِ اعظم چنا گیا اور نئے ملینیا کے آغاز پر اسرائیلی افواج جنوبی لبنان سے نکل گئیں اور فلسطینی اتھارٹی کے چیئرمین یاسر عرفات اور ایہود باراک کے درمیان امریکی صدر بل کلنٹن کے کیمپ ڈیوڈ میں باہمی مذاکرات ہوئے۔ ان مذاکرات میں ایہود باراک نے فلسطینی ریاست کے قیام کی پیشکش کی جسے یاسر عرفات نے ٹھکرا دیا۔ مذاکرات کے ناکام ہونے پر اور لیکوڈ پارٹی کے ایریل شیرون کی جانب سے الحرم الشریف کے متنازع دورے کے بعد یاسر عرفات نے دوسرے انتفادہ کا آغاز کر دیا۔ 2001 کے خصوصی انتخابات کے بعد شیرون وزیر اعظم بنے اور انہوں نے غزہ کی پٹی سے یک طرفہ انخلاء مکمل کیا اور اسرائیلی مغربی کنارے کی رکاوٹوں کی تعمیر جاری رکھی اور دوسرے انتفادہ کو بے کار کر دیا۔

جولائی 2006 میں حزب اللہ نے شمالی اسرائیل پر بمباری کی اور سرحد عبور کر کے دو اسرائیلی فوجی اغوا کر لئے۔ نتیجتاً ایک ماہ لمبی دوسری لبنان کی جنگ شروع ہوئی۔ 6 ستمبر 2007 کو اسرائیلی فضائیہ نے شام کے نیوکلئیر ری ایکٹر کو تباہ کر دیا۔ 2008 میں اسرائیل نے تصدیق کی کہ وہ ترکی کے ذریعے ایک سال سے شام سے امن کی بات چیت کر رہا ہے۔ تاہم اسرائیل اور حماس کے مابین جنگ بندی کا معاہدہ ختم ہوتے ہی ایک اور لڑائی شروع ہو گئی۔ غزہ کی جنگ تین ہفتے جاری رہی اور پھر اسرائیل کی جانب سے یک طرفہ جنگ بندی ہوگئی۔ حماس نے اپنی جانب سے جنگ بندی کا اعلان کیا اور شرائط میں مکمل فوجی انخلاء اور سرحد کو کھولنا رکھا۔ راکٹ حملوں اور اسرائیلی فوجی کاروائیوں کے باوجود جنگ بندی کا معاہدہ چل رہا ہے۔ فلسطینیوں کی طرف سے 100 سے زیادہ راکٹ حملوں کے بعد اسرائیل نے 14 نومبر 2012 کو غزہ پر فوجی کارروائی کی جو آٹھ روز جاری رہی۔

جغرافیہ اور موسم

اسرائیل بحیرہ روم کے مشرقی سرے پر واقع ہے۔ اس کے شمال میں لبنان، شمال مشرق میں شام، مشرق میں اردن اور مغربی کنارہ جبکہ جنوب مشرق میں مصر اور غزہ کی پٹی واقع ہیں۔

اسرائیل کی خودمختار ریاست ماسوائے 1967 کی چھ روزہ جنگ میں فتح کیے گئے علاقوں کے، تقریباً 20770 مربع کلومیٹر پر محیط ہے۔ اس کے کل رقبے کا دو فیصد پانی ہے۔ اسرائیل کے پتلے اور لمبائی کے رخ ہونے کی وجہ سے اس کے ایکسلوسیو اکنامک زون بحیرہ روم میں اس کے زمینی رقبے کا دو گنا ہے۔ مشرقی یروشلم اور گولان کی پہاڑیوں سمیت اسرائیلی قوانین کل 22072 مربع کلومیٹر پر لاگو ہیں۔ اسرائیلی قبضے میں موجود علاقہ بشمول جزوی خودمختار فلسطینی ریاست مغربی کنارہ ملا کر 27799 مربع کلومیٹر بنتا ہے۔ اتنے چھوٹے رقبے کے باوجود اسرائیل میں جغرافیائی تنوع بہت زیادہ پایا جاتا ہے۔ یہاں ایک طرف نیگیو صحرا ہے تو دوسری جانب جزریل کی زرخیز وادی ہے، گلیلی کے پہاڑ ہوں یا کارمل اور گولان کے پہاڑ بھی یہاں ہیں۔ بحیرہ روم کے کنارے والا ساحل ملک کی 57 فیصد آبادی کی رہائش گاہ ہے۔ وسط میں مشرقی جانب اردن کی وادئ شق موجود ہے جو عظیم وادئ شق کا حصہ ہے۔

دریائے اردن ہرمون پہاڑ سے نکل کر بحیرہ مردار کو جاتا ہے۔ یہ جگہ دنیا کا سب سے نشیبی مقام ہے۔ اس کے علاوہ سرزمین اسرائیل پر مختیشم پائے جاتے ہیں جو دنیا بھر میں کسی اور جگہ نہیں ملتے۔ مختشیم سے مراد ایسی وادی جو چاروں طرف اونچی عمودی دیوار نما چٹانوں سے گھری ہو۔ بحیرہ روم کے بیسن پر موجود ممالک میں فی کس پودوں کی انواع کی مقدار کے حوالے سے اسرائیل سب سے آگے ہے۔

اسرائیل میں درجہ حرارت بہت فرق رہتا ہے۔ یہ فرق سردیوں میں مزید بڑھ جاتا ہے۔ پہاڑی علاقے زیادہ سرد اور ہواؤں کا شکار رہتے ہیں اور بعض اوقات برف بھی پڑ سکتی ہے۔ یروشلم میں ہر سال کم از کم ایک بار ضرور برفباری ہوتی ہے۔ تل ابیب اور حیفہ جیسے ساحلی شہروں کا موسم معتدل رہتا ہے اور سردیاں ٹھنڈی اور بارش عام ہوتی ہے جبکہ گرمیاں گرم تر اور طویل ہوتی ہیں۔ بئر شعبہ اور شمالی نیگیو کے علاقے نیم بنجر ہیں اور کم بارشیں ہوتی ہیں۔ جنوبی نیگیو اور اراوا کا علاقہ صحرائی ہے اور طویل گرمیوں کے بعد نسبتاۢ معتدل سردیاں اور کم بارشیں ہوتی ہیں۔ براعظم ایشیا کا گرم ترین درجہ حرارت 53.7 اسرائیل میں دریائے اردن کی وادی میں 1942 میں ریکارڈ کیا گیا۔

اسرائیل میں مئی تا ستمبر بارشیں نہ ہونے کے برابر ہوتی ہیں۔ محدود آبی وسائل کی وجہ سے اسرائیل میں پانی کو محفوظ کرنے کے لئے نت نئی ٹیکنالوجیاں استعمال ہوتی ہیں۔ سورج سے زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھانے کے لئے شمسی توانائی پیدا کی جاتی ہے۔ فی کس شمسی توانائی سے بجلی کی پیداوار میں اسرائیل سب سے آگے ہے اور تقریباً تمام ہی گھروں میں پانی شمسی توانائی سے گرم کیا جاتا ہے۔

اسرائیل میں چار مختلف نباتاتی جغرافیائی علاقے ہیں۔ یہاں نباتات کی کل 2867 اقسام پائی جاتی ہیں جن میں 253 غیر مقامی ہیں۔ اسرائیل میں کل 380 نیچر ریزرو ہیں۔

سیاست

Emblem of Israel.svg
مضامین بسلسلہ
سیاست و حکومت
اسرائیل

اسرائیل میں جمہوری ریبلک کی طرز کا پارلیمانی نظام ہے اور حق رائے دہی سب کے لئے ہے۔ جس رکن پارلیمان کے حق میں دیگر پارلیمانی اراکین کی اکثریت ہو، اسے وزیرِاعظم چنا جاتا ہے۔ عموماً یہ عہدہ اکثریتی بڑی پارٹی کو ملتا ہے۔ وزیرِاعظم حکومتی سربراہ ہوتا ہے اور کابینہ کا سربراہ بھی۔ اسرائیل کی پارلیمان میں کل 120 اراکین ہوتے ہیں۔

ہر چار سال بعد پارلیمانی انتخابات ہوتے ہیں لیکن سیاسی عدم استحکام یا عدم اعتماد کی تحریک کی وجہ سے حکومت چار سال سے قبل بھی ختم ہو سکتی ہے۔ اسرائیل کے بنیادی قوانین آئین کی حیثیت رکھتے ہیں۔ اسرائیل کے صدر کا عہدہ ریاست کے سربراہ کا ہوتا ہے اور زیادہ تر نمائشی اختیارات رکھتا ہے۔

میڈیا

2014 میں رپورٹرز ود آؤٹ بارڈرز کے مطابق اسرائیل میں صحافتی آزادی کا درجہ 180 میں سے 96 تھا جو کویت سے ایک درجہ نیچے ہے۔

قانونی نظام

اسرائیل کا عدالتی نظام تین سطحوں پر مشتمل ہے۔ زیریں سطح پر میجسٹریٹ کی عدالتیں ہوتی ہیں جو ملک بھر کے اکثر شہروں میں قائم ہیں۔ ان کے اوپر ضلعی عدالتیں آتی ہیں جو میجسٹریٹ عدالتوں کی اپیل بھی سنتی ہیں اور براہ راست بھی مقدمات دائر کئے جا سکتے ہیں۔ یہ عدالتیں ملک کے چھ میں سے پانچ اضلاع میں قائم ہیں۔ سب سے اوپر سپریم کورٹ ہے جو یروشلم میں قائم ہے اور یہاں بھی براہ راست مقدمات دائر کئے جا سکتے ہیں اور ہائی کورٹ کا کام بھی کرتی ہے۔ حکومتی اقدامات کے خلاف کوئی بھی مقدمہ دائر کرنے کے لئے شہری یا غیر ملکی اسی عدالت سے رجوع کرتے ہیں۔ اسرائیل بین الاقوامی عدالت انصاف کے مقاصد کو تو مانتا ہے لیکن اس کی غیر جانبداری پر شک ظاہر کرتا ہے۔

اسرائیل کا قانون انگلش کامن لا، سول لا اور یہودی قوانین کا مجموعہ ہے۔ عدالتی نظام میں جیوری کی بجائے جج فیصلہ کرتے ہیں۔ شادی اور طلاق کے مقدمات کا فیصلہ یہودی، مسلمان، دروز اور عیسائی قوانین کے مطابق متعلقہ مذہبی عدالتیں کرتی ہیں۔ اسرائیل کا عدالتی نظام مکمل طور پر کاغذات سے آزاد ہے اور تمام تر ریکارڈ برقی طور پر محفوظ ہوتا ہے۔

انتظامی تقسیم

اسرائیل کی ریاست چھ انتظامی اضلاع میں تقسیم ہے جنہیں مہوزت کہتے ہیں۔ ان کے نام سینٹر، حیفہ، یروشلم، شمالی، جنوبی اور تل ابیب کے علاقے اور جوڈیا اور سماریا کے علاقے بھی ہیں جو مغربی کنارے پر ہیں۔ بین الاقوامی سطح پر جوڈیا اور سماریا کے علاقے اسرائیل کا حصہ نہیں مانے جاتے۔ اضلاع کو مزید 15 سب ڈسٹرکٹ میں تقسیم کیا گیا ہے جنہیں نفوط کہتے ہیں۔ انہیں آگے مزید 50 حصوں میں بانٹا گیا ہے۔

اسرائیل کے زیر انتظام علاقے

 
درجہ اضلاع آبادی
یروشلم
یروشلم
تل ابیب
تل ابیب
1 یروشلم یروشلم 815,300* حیفا
حیفا
ریشون لضیون
ریشون لضیون
2 تل ابیب تل ابیب 414,600
3 حیفا حیفا 272,200
4 ریشون لضیون مرکزی 235,100
5 اشدود جنوبی 214,900
6 فتح تکو مرکزی 213,900
7 بئر السبع جنوبی 197,300
8 نتانیا مرکزی 192,200
9 حولون تل ابیب 185,300
10 بنی براک تل ابیب 168,800

* یہ تعداد بشمول مشرقی یروشلم اور مغربی کنارے کے علاقوں کی ہے۔ اسرائیلی زیادہ خودمختار مشرقی یروشلم ہے internationally disputed. 1967 میں چھ روزہ جنگ کے اختتام پر اسرائیل نے فلسطین کے مغربی کنارے اور مشرقی یروشلم، غزہ پٹی اور گولان کی پہاڑیوں پر بھی قبضہ کر لیا تھا۔ اس کے علاوہ اسرائیل نے جزیرہ نما سینائی پر بھی قبضہ کر لیا تھا لیکن 1979 کو مصر کے ساتھ ہونے والے امن معاہدے کے تحت مصر کے حوالے کر دیا۔ 1982 سے 2000 تک اسرائیل نے جنوبی لبنان کا کچھ حصہ اپنے قبضے میں لے لیا ہے جسے پہلے سکیورٹی زون کہا جاتا تھا۔

اسرائیل کی طرف سے ان علاقوں پر قبضے کے بعد تاحال ان علاقوں پر یہودی آباد کاری اور فوجی تنصیبات موجود ہیں۔ اسرائیل نے اپنے قوانین کو گولان کی پہاڑیوں اور مشرقی یروشلم پر بھی نافذ کیا ہوا ہے اور اسے اپنا حصہ بنایا ہوا ہے اور یہاں رہنے والے افراد کو اسرائیل میں مستقل رہائش کا حق حاصل ہے اور اگر وہ چاہیں تو اسرائیل کی شہریت بھی حاصل کر سکتے ہیں۔ تاہم مغربی کنارہ ابھی تک فوجی انتظام میں آتا ہے اور یہاں کے رہائشی فلسطینی، اسرائیلی شہری نہیں بن سکتے۔ غزہ کی پٹی البتہ اسرائیل کے انتظام سے باہر ہے اور یہاں کسی قسم کی اسرائیلی فوجی یا سویلین موجودگی نہیں، تاہم اسرائیل اس علاقے کے فضائی اور آبی راستوں کی نگرانی کرتا ہے۔ اقوام متحدہ کی سکیورٹی کونسل گولان کی پہاڑیوں اور مشرقی یروشلم پر اسرائیلی دعوے کو مسترد کرتی ہے اور انہیں اسرائیلی مقبوضہ علاقے شمار کرتی ہے۔ اسی طرح بین القوامی عدالت انصاف کے مطابق بھی چھ روزہ جنگ کے دوران اسرائیل نے جو علاقے حاصل کئے تھے وہ آج بھی مقبوضہ علاقے شمار ہوتے ہیں اور اس عدالت نے اسرائیلی مغربی کنارے کی رکاوٹوں کی قانونی حیثیت کے بارے بھی اپنی رائے دی ہے۔

مشرقی یروشلم امن مذاکرات میں ہمیشہ ایک مشکل مرحلہ ہوتا ہے کیونکہ اسرائیل اسے اپنا اٹوٹ انگ اور دارلحکومت کا حصہ شمار کرتا ہے۔ زیادہ تر امن مذاکرات اقوام متحدہ کی سکیورٹی کونسل کی قرارداد نمبر 242 کی بنیاد پر ہوتی ہیں جس کے مطابق جنگ کے دوران جیتی گئی سرزمین کو فاتح کا حصہ نہیں شمار کیا جاتا، اس لئے اسرائیل کو عرب ممالک سے تعلقات بحال کرنے کے لئے ان علاقوں سے فوجی انخلاء کرنا ہوگا۔ اس اصول کو "زمین برائے امن" کہا جاتا ہے۔

1950 میں عرب ممالک نے اقوام متحدہ کے فلسطین کو دو ریاستوں میں تقسیم کا فیصلہ مسترد کیا تو اردن نے مغربی کنارے پر قبضہ کر لیا۔ اس قبضے کو صرف برطانیہ نے تسلیم کیا اور بعد ازاں اردن نے اس علاقے کے حقوق پی ایل او کے حوالے کر دیے۔ چھ روزہ جنگ کے دوران 1967 میں اسرائیل نے اس پر قبضہ کر لیا تھا۔ 1967 سے 1993 تک یہاں کے شہری اسرائیلی فوجی قوانین کے تحت رہ رہے تھے۔ اسرائیل اور پی ایل او کے مابین امن معاہدے کے بعد فلسطینی آبادی اور شہر فلسطینی اتھارٹی کے زیر انتظام رہ رہے ہیں لیکن اسرائیلی فوجی انتظام کسی نہ کسی شکل میں باقی رہا ہے اور بدامنی کے دوران اسرائیل نے یہاں فوجی تنصیبات اور فوجیوں کی تعداد کئی بار عارضی طور پر بڑھائی ہے۔ انتفادہ دوم کے دوران بڑھتے ہوئے فلسطینی حملوں کے جواب میں اسرائیل نے مغربی کنارے پر دیوار تعمیر شروع کر دی ہے۔ تعمیر مکمل ہونے پر اس دیوار کا محض 13 فیصد حصہ اسرائیل جبکہ 87 فیصد حصہ مغربی کنارے میں واقع ہوگا۔

غزہ کی پٹی پر مصر نے 1948 سے 1967 تک قبضہ جمائے رکھا اور 1967 کے بعد اسرائیل قابض ہو گیا۔ 2005 کے یک طرفہ منصوبے کے تحت اسرائیل نے تمام تر فوجی اور آباد کاروں کو مغربی کنارے سے واپس بلا لیا۔ اسرائیل اسے اب مقبوضہ سرزمین کی بجائے غیر ملکی سرزمین مانتا ہے۔ تاہم انسانی حقوق کی تنظیمیں اور اقوام متحدہ کے مختلف ذیلی دفاتر اسے تسلیم نہیں کرتے۔ جون 2007 میں حماس کی طرف سے حکومت سنبھالنے کے بعد اسرائیل نے غزہ کی پٹی کو آنے جانے والے بحری، بری اور فضائی راستوں کی نگرانی سخت کر دی ہے اور انسانی ہمدردی کی بنیاد پر چند افراد کو چھوڑ کر باقی ہر قسم کی آمد و رفت پر پابندی عائد کر دی ہے۔ غزہ کی سرحد مصر سے ملتی ہے لیکن اسرائیل، یورپی یونین اور فلسطینی اتھارٹی کے درمیان معاہدے کے تحت سرحدوں پر نقل و حرکت آزادانہ نہیں ہے۔ حسنی مبارک کے دور تک مصر نے اس معاہدے کی پاسداری کی ہے اور اپریل 2011 کو جا کر غزہ کے ساتھ مصر نے اپنی سرحد کھولی ہے۔

بیرونی تعلقات

اسرائیل کے سفارتی تعلقات 157 ممالک کے ساتھ ہیں اور 100 سے زیادہ سفارتی مشن بھی دنیا بھر میں موجود ہیں۔ عرب لیگ کے صرف تین اراکین یعنی مصر، اردن اور موریطانیہ کے تعلقات اسرائیل سے ہیں۔ اسرائیل اور مصر کے امن معاہدے کے باوجود مصر میں اسرائیل کو دشمن مانا جاتا ہے۔ اسرائیلی قانون کے مطابق لبنان، شام، سعودی عرب، عراق، ایران، سوڈان اور یمن کو دشمن ممالک شمار کیا جاتا ہے اور ان ممالک کو جانے والے اسرائیلی شہریوں کو وزارت داخلہ سے اجازت لینی پڑتی ہے۔

مملکت اسرائیل کو تسلیم کرنے والے پہلے دو ممالک سوویت یونین اور ریاستہائے متحدہ امریکا ہیں۔ امریکہ مشرق وسطیٰ میں اسرائیل کا اپنا اہم ترین حلیف مانتا ہے اور 1967 سے 2003 تک امریکہ نے اسرائیل کو 68 ارب ڈالر کی فوجی اور 32 ارب ڈالر امداد دی ہے۔ اسرائیل اور فلسطینیوں کے مابین مذاکرات کے لئے امریکہ ہمیشہ اہم کردار ادا کرتا ہے تاہم چند مسائل پر جیسا کہ گولان کی پہاڑیاں، یروشلم اور آبادکاری کے معاملے پر امریکہ اور اسرائیل کے درمیان اختلاف پایا جاتا ہے۔ انڈیا نے 1992 میں اسرائیل کے ساتھ مکمل سفاری تعلقات قائم کئے اور دونوں کے درمیان فوجی، ٹیکنالوجی اور ثقافتی تعلقات مضبوط ہو رہے ہیں۔ 2009 کے ایک سروے کے مطابق پوری دنیا میں انڈیا کے لوگ سب سے زیادہ اسرائیل نواز ہیں۔ انڈیا اسرائیل کا سب سے بڑا فوجی ساز و سامان کا خریدار ہے جبکہ انڈیا کے لئے سوویت یونین کے بعد اسرائیل دوسرا بڑا فوجی معاون ہے۔ تجارتی حوالے سے انڈیا اسرائیل کا تیسرا بڑا ایشیائی معاون ہے۔ انڈیا اور اسرائیل کے درمیان فوجی اور خلائی تعاون جاری رہتا ہے۔ 2010 میں ایشیا بھر میں سب سے زیادہ یعنی 41000 سیاح اسرائیل آئے۔

جرمنی اور اسرائیل کے درمیان تعاون زیادہ تر سائنسی اور تعلیمی شعبوں میں ہے اور دونوں ممالک معاشی اور فوجی اعتبار سے ایک دوسرے سے جڑے ہوئے ہیں۔ 2007 کے معاہدے کے تحت جرمنی نے اسرائیل کو مرگ انبوہ سے بچنے والوں کے لئے 25 ارب یورو کا معاوضہ دیا۔ اسرائیل کے قیام سے ہی برطانیہ نے اسرائیل سے مکمل سفارتی تعلقات قائم رکھے ہیں۔ پہلوی بادشاہت کے وقت اسرائیل اور ایران کے سفارتی تعلقات تھے لیکن بعد میں اسلامی انقلاب کے بعد ایران نے اسرائیل کو تسلیم کرنے سے انکار کیا ہے۔

اگرچہ ترکی اور اسرائیل کے تعلقات 1991 سے پہلے جزوی تھے لیکن ترکی نے 1949 میں اسرائیل کو تسلیم کر کے اس سے تعلقات قائم کر لئے تھے۔ مسلمان اور عرب ممالک اکثر ترکی پر زور دیتے ہیں کہ وہ اسرائیل سے اپنے تعلقات پر نظر ثانی کرے۔ دونوں ممالک کے درمیان تعلقات اس وقت کشیدہ ہو گئے جب اسرائیل نے غزہ فلوٹیلا پر حملہ کیا۔ اسرائیل کے مطابق اس فلوٹیلا کا انتظام کرنے والی ترک تنظیم کے تعلقات حماس اور القاعدہ سے تھے۔

1995 سے اسرائیل اور ترکی کے تعلقات میں بتدریج کمی کے بعد سے اسرائیل اور یونان کے مابین تعلقات بہتر ہوتے جا رہے ہیں۔ دونوں ملکوں میں 2010 میں دفاعی معاہدہ ہوا۔ اس کے علاوہ تیل اور گیس کی تلاش کے شعبے میں بھی اسرائیل قبرص سے تعاون کر رہا ہے۔ مشرق وسطیٰ میں یونانی مصنوعات کی دوسری بڑی منڈی اسرائیل ہے۔ 2010 میں یونانی وزیر اعظم جارج پاپنڈرو نے اسرائیل کا دورہ کیا تاکہ دو طرفہ تعلقات کو فروغ دیا جا سکے۔

اسرائیل اور یونان کے درمیان توانائی، زراعت، فوجی اور سیاحتی شعبوں میں تعاون جاری ہے۔

آذربائیجان ان چند اکثریتی مسلم ممالک میں سے ایک ہے جس نے اسرائیل کے ساتھ وسیع تر تعلقات قائم کئے ہیں۔ ان تعلقات میں تجارتی اور دفاعی، ثقافتی اور تعلیمی شعبے اہم ہیں۔ آذربائیجان اسرائیل کو کافی مقدار میں تیل مہیا کرتا ہے۔ 2012 میں دونوں ملکوں نے 1.6 ارب ڈالر کے دفاعی ساز و سامان کا معاہدہ کیا تھا۔ 2005 میں آذربائیجان اسرائیل کا پانچواں بڑا تجارتی پارٹنر تھا۔

سیاسی، مذہبی اور دفاعی نکتہ نظر سے ایتھوپیا براعظم افریقہ میں اسرائیل کا سب سے بڑا حلیف ہے۔ ایتھوپیا میں پانی کی قلت اور ہزاروں ایتھوپیائی یہودیوں کی فلاح و بہبود کے لئے اسرائیل کا تعاون اہم ہے۔

2009 میں غزہ کی جنگ کی وجہ سے ماریطانیہ، قطر، بولوویا اور وینزویلا نے اسرائیل سے تجارتی اور معاشی تعلقات معطل کر دیے ہیں۔

اسرائیل کو یورپی یونین کے یورپی ہمسائیگی پالیسی میں شامل کیا گیا ہے جس کا مقصد یورپی یونین اور ہمسائیہ ریاستوں کو قریب لانا ہے۔

بین الاقوامی انسانی ہمدردی کی کوششیں

اسرائیل دنیا بھر میں قدرتی آفات سے نمٹنے کے لئے ہنگامی امداد دینے کی پالیسی پر کارآمد ہے۔ پچھلے 26 سالوں سے 15 ممالک کو اسرائیل کی طرف سے ہنگامی امداد دی گئی ہے تاکہ قدرتی آفات سے نمٹا جا سکے۔ 2010 میں ہیٹی میں زلزلے کے بعد اسرائیل نے سب سے پہلے وہاں فیلڈ ہسپتال قائم کیا تھا۔ اس کے علاوہ اسرائیل نے 200 سے زیادہ ڈاکٹر اور طبی عملے کے اراکین بھی بھیجے تھے۔ مشن کے اختتام تک اسرائیلی ڈاکٹروں نے کل 1110 مریضوں کا علاج کیا اور 319 کامیاب آپریشن کے علاوہ 16 زچگیوں اور 4 افراد کی جان بچانے کے لئے بھی کام کیا۔ تابکاری کے خطرے کے باوجود اسرائیل ان ممالک میں سے ایک ہے جنہوں نے جاپان کے زلزلے اور سونامی کے بعد سب سے پہلے طبی امدادی کارکن بھیجے۔ اسرائیل نے زلزلے اور سونامی سے متائثرہ شہر کوری ہارا میں ایک کلینک قائم کیا جس میں سرجری، اطفال، میٹرنٹی اور گائناکالوجیکل وارڈ قائم تھے۔ یہاں کل 2300 افراد کا علاج ہوا اور کم از کم 220 افراد یقنی موت سے بچ گئے۔

اسرائیل کی انسانی ہمدردی کی کوششیں 1958 میں سرکاری طور پر شروع ہوئیں جب ماشاو یعنی اسرائیلی وزارت خارجہ امور کی ایجنسی برائے ترقی بین القوامی تعلقات قائم ہوئی۔ اس کے تحت 140 سے زیادہ ممالک کی امداد کی جا چکی ہے جس میں قحط زدہ علاقوں میں خوراک کی تقسیم، عمارتوں کی تعمیر کی تربیت، طبی امدادی عمارت کی تعمیر اور طبی امداد کی فراہمی شامل ہیں۔ اس کے علاوہ اسرائیلی حکومت کے ساتھ مل کر کام کرنے والے دیگر اداروں میں اسرا ایڈ، دی فاسٹ اسرائیلی ریسکیو اینڈ سرچ ٹیم، اسرائیلی فلائنگ ایڈ، سیو اے چائلڈز ہارٹ اور لاٹیٹ شامل ہیں۔

فوجی

اسرائیل ترقی یافتہ ممالک میں اپنے بجٹ کے تناسب کے لحاظ سے فوج پر سب سے زیادہ خرچہ کرتا ہے۔ اسرائیلی دفاعی افواج کا سربراہ چیف آف جنرل سٹاف ہوتا ہے جو براہ راست کابینہ کو جوابدہ ہوتا ہے۔ اسرائیلی ڈیفنس فورسز میں بری، بحری اور فضائی افواج شامل ہیں۔ فوج کی ابتداء 1948 کی عرب اسرائیل جنگ سے ہوئی تھی جب پیراملٹری اداروں کو ضم کر کے نئی فوج بنائی گئی۔

18 سال کی عمر میں زیادہ تر اسرائیلی فوجی تربیت کے لئے فوج میں شامل ہوتے ہیں۔ مرد فوج میں تین سال جبکہ عورتیں دو سال خدمات سرانجام دیتی ہیں۔ لازمی تربیت کے بعد ہر سال کئی کئی ہفتے ریزرو فوجی تربیت کے لئے زیادہ تر افراد رضاکارانہ طور پر خدمات پیش کرتے ہیں اور یہ سلسلہ چالیس سال کی عمر تک چلتا رہتا ہے۔ زیادہ تر خواتین کو ریزرو تربیت سے چھوٹ ملی ہوتی ہے۔ اسرائیل کے عرب نژاد افراد ماسوائے دروز اور کل وقتی مذہبی تعلیم حاصل کرنے والے افراد کو اس لازمی فوجی تربیت سے استثناء حاصل ہے حالانکہ اسرائیلی معاشرے میں اس پر اکثر بحث ہوتی ہے۔ اگر کسی وجہ سے لازمی فوجی تربیت کا حصہ نہ بنا جا سکے تو ہسپتالوں، سکولوں اور دیگر سماجی خدمات کے شعبے میں خدمات سرانجام دینا پڑتی ہیں۔ نتیجتاۢ اسرائیلی فوج کو مستقل طور پر 176500 باقاعدہ فوجی اور 445000 ریزرو فوجی ہمہ وقت میسر ہوتے ہیں۔

اسرائیلی قومی فوج کا زیادہ تر انحصار ہائی ٹیک ہتھیاروں پر ہوتا ہے جس کی اکثریت اسرائیل خود بناتا ہے اور اس کا کچھ حصہ بیرون ملک سے بھی خریدا جاتا ہے۔ امریکہ کی جانب سے اسرائیل کو سب سے زیادہ فوجی امداد دی جاتی ہے۔ 2013 سے 2018 تک امریکہ اسرائیل کو ہر سال 3.15 ارب ڈالر کی فوجی امداد دے گا۔ ایرو میزائل دنیا کے چند ہی فعال اینٹی بیلاسٹک میزائل سسٹم میں سے ایک ہے۔ اسرائیل کا آئرن ڈوم ایئر ڈیفنس نظام دنیا بھر میں مشہور ہے کیونکہ اس کی مدد سے اسرائیل غزہ کی پٹی سے چلائے جانے والے قسام، 122 ملی میٹر گراڈ اور فجر 5 راکٹوں کے حملوں کو روکنے میں کامیاب رہا ہے۔

یوم کپور کی جنگ کے بعد سے اسرائیل نے جاسوسی مصنوعی سیاروں کا ایک پورا نظام ترتیب دیا ہے۔ اس طرح کے مصنوعی سیارے چھوڑنے والے سات ممالک میں سے اسرائیل بھی ایک ہے۔ 1984 میں اسرائیل نے اپنے جی ڈی پی کا 24 فیصد دفاع پر خرچ کیا تاہم 2006 میں یہ شرح محض 7 فیصد سے کچھ زیادہ تھی۔ عام یقین کیا جاتا ہے کہ اسرائیل کے پاس نہ صرف ایٹمی بلکہ کیمیائی اور جراثیمی ہتھیار بھی موجود ہیں۔ اسرائیل نے این پی ٹی معاہدے پر دستخط نہیں کئے اور اپنے قومی ایٹمی پروگرام کے بارے خاموشی کی پالیسی اختیار کیے ہوئے ہے۔ 1991 کی خلیج کی جنگ میں عراقی سکڈ میزائلوں کے حملے کے بعد لازم ہے کہ ہر گھر میں ایک کمرہ ایسا ہو جہاں کیمیائی اور جراثیمی ہتھیاروں کا اثر نہ ہو سکے۔

2011 میں امن سروے کے مطابق 153 پرامن ممالک میں اسرائیل محض 145ویں نمبر پر تھا۔

جنوب مغربی ایشیا میں اسرائیل کو معاشی اور صنعتی ترقی یافتہ ممالک میں سے ایک شمار کیا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ اسرائیل نے 2010 میں انجمن اقتصادی تعاون و ترقی کی تنظیم میں شمولیت اختیار کی۔ عالمی بینک کے مطابق کاروبار میں آسانی کے حوالے سے اسرائیل خطے میں تیسرے جبکہ دنیا بھر میں 38ویں نمبر پر ہے۔ امریکہ کے بعد اسرائیل میں دوسرے نمبر پر سب سے زیادہ سٹارٹ اپ کمپنیاں ہیں۔ شمالی امریکہ سے باہر اسرائیل کی کمپنیاں سب سے زیادہ نیسڈیک میں رجسٹر ہیں۔

2010 میں معاشی طور پر سب سے آگے ممالک کی فہرست میں اسرائیل کا نمبر 17واں تھا۔ مشکلات کے وقت اسرائیلی معیشت کو سب سے مستحکم مانا گیا ہے۔ تحقیق اور ترقی کی شرح میں اسرائیل پہلے نمبر پر ہے۔

اسرائیل کے مرکزی بینک کو کارکردگی کے حوالے سے 2009 میں 8ویں سے پہلے نمبر پر جگہ ملی ہے۔ ہنریافتہ افراد کو بیرون ملک بھیجنے کے لئے اسرائیل سب سے آگے ہے۔ مرکزی بینک کے پاس 78 ارب ڈالر کے ذخائر موجود ہیں۔

محدود قدرتی وسائل کے باوجود اسرائیل نے زراعت اور صنعت کے شعبوں میں قابل قدر ترقی کی ہے۔ گذشتہ چند دہائیوں سے اسرائیل خوراک کے شعبے میں ماسوائے غلہ اور مویشی، خودکفیل ہو گیا ہے۔ 2012 میں اسرائیل کی درآمدات کا کل حجم 77.59 ارب ڈالر تھا جس میں خام مال، فوجی سامان، خام ہیرے، ایندھن، غلہ اور دیگر روز مرہ کی اشیاء شامل ہیں۔ اہم برآمدات میں الیکٹرونکس، سافٹ ویئر، کمپیوٹرائزڈ سسٹم، مواصلاتی ٹیکنالوجی، طبی آلات، ادویات، پھل، کیمیکل، فوجی ٹیکنالوجی اور ہیرے اہم ہیں۔ 2012 میں اسرائیل کی کل برآمدات 64.74 ارب ڈالر تھیں۔

شمسی توانائی میں ترقی کے حوالے سے اسرائیل پیش پیش ہے۔ پانی کی بچت اور جیو تھرمل توانائی کے حوالے سے اسرائیل دنیا میں پہلے نمبر پر ہے۔ اس کے علاوہ سافٹ ویئر، مواصلات اور لائف سائنسز میں ہونے والی ترقی سے اسرائیل اب سلیکان ویلی کا مقابلہ کرنے کے قابل ہو گیا ہے۔ ریسرچ اور ترقی پر ہونے والے اخراجات کے جی ڈی پی کے تناسب کے حوالے سے اسرائیل دنیا بھر میں پہلے نمبر پر ہے۔ انٹل اور مائیکروسافٹ نے امریکہ سے باہر پہلی بار ریسرچ اور ڈویلپمنٹ سینٹر اسرائیل میں قائم کئے تھے۔ اس کے علاوہ آئی بی ایم، گوگل، ایپل، ایچ پی، سسکو سسٹمز اور موٹرولا نے بھی اپنے ریسرچ اور ڈویلپمنٹ مراکز اسرائیل میں قائم کئے ہیں۔

1970 کی دہائی سے اسرائیل کو امریکہ کی جانب سے فوجی اور معاشی امداد کے علاوہ قرض بھی ملتا آ رہا ہے۔ اب اس کی مقدار اسرائیل کے کل بیرونی قرضہ جات کے نصف کے برابر ہو گئی ہے۔ ترقی یافتہ دنیا میں اسرائیل کے بیرونی قرضہ جات نسبتاۢ کم ترین ہیں۔ اسرائیل کے دیے ہوئے اور لئے ہوئے قرضہ جات میں لگ بھگ 60 ارب ڈالر کا مثبت فرق ہے۔

اسرائیل میں عام کاروباری ہفتہ 5 دن کا ہوتا ہے جو اتوار سے جمعرات تک ہے۔ اگر کسی جگہ ہفتے میں چھ دن کام ہوتا ہو تو پھر جمعہ بھی کام میں شمار کرتے ہیں۔ یوم سبت کے احترام میں اگر جمعہ کو کام ہو تو سردیوں میں دو بجے اور گرمیوں میں چار بجے کام ختم کر دیا جاتا ہے اور جمعہ کو ایک طرح سے نصف دن کام ہوتا ہے۔ کئی بار یہ بحث ہو چکی ہے کہ کاروباری ہفتہ باقی دنیا کی مناسبت سے طے کیا جائے کہ اتوار کی چھٹی ہو اور دیگر ایام میں کام کا دورانیہ بڑھا دیا جائے یا پھر اتوار کی جگہ جمعہ کو کام ہو۔

سائنس اور ٹیکنالوجی

اسرائیل میں کل 9 یونیورسٹیاں ہیں جو حکومتی امداد سے چلتی ہیں۔ ہیبریو یونیورسٹی آف یروشلم اسرائیل کی دوسری پرانی یونیورسٹی ہے۔ یہاں یہودیت کے موضوع پر دنیا بھر میں سب سے زیادہ کتب جمع ہیں۔ ٹیکنیون کی یونیورسٹی اسرائیل کی سب سے پرانی یونیورسٹی ہے اور دنیا کی 100 بہترین یونیورسٹیوں میں شامل ہے۔ اسرائیلی سات یونیورسٹیاں دنیا کی 500 بہترین یونیورسٹیوں کی فہرست میں شامل ہیں۔ 2002 سے اب تک اسرائیل نے 6 نوبل پرائز جیتے ہیں۔ فی کس آبادی کے اعتبار سے اسرائیل میں سب سے زیادہ سائنسی مقالے چھپتے ہیں۔

اسرائیل نے شمسی توانائی کا خیرمقدم کیا ہے اور اسرائیلی انجینئروں نے شمسی توانائی سے متعلق ٹیکنالوجی میں بہت ترقی کی ہے اور اسرائیلی کمپنیاں شمسی توانائی سے متعلق منصوبوں پر دنیا بھر میں کام کر رہی ہیں۔ 90 فیصد سے زیادہ اسرائیلی گھروں میں پانی گرم کرنے کے لئے شمسی توانائی استعمال ہوتی ہے۔ یہ شرح دنیا بھر میں سب سے زیادہ ہے۔ حکومتی اعداد و شمار کے مطابق اسرائیل اس طرح اپنی کل توانائی کا 8 فیصد بچا لیتا ہے۔

آبی ٹیکنالوجی میں اسرائیل دنیا کے بہترین ممالک میں سے ایک ہے۔ 2011 میں اسرائیلی آبی ٹیکنالوجی کا کل حجم 2 ارب ڈالر تھا اور سالانہ برآمدات کروڑوں ڈالر۔ ملک بھر میں آبی قلت کے پیش نظر آبی منصوبہ بندی، زراعت کو جدید بنایا جانا اور قطرہ قطرہ آبپاشی بھی اسرائیل میں ہی ایجاد ہوئیں۔ کھارے پانی کو صاف کرنے اور استعمال شدہ پانی کو دوبارہ قابلِ استعمال بنانے میں بھی اسرائیل سب سے آگے ہے۔ اسرائیل میں ہی دنیا بھر کا سب سے بڑا کھارے پانی کو میٹھا بنانے کا پلانٹ نصب ہے۔ 2013 کے اواخر تک امید ہے کہ اسرائیل کی آبی ضروریات کا 85 فیصد حصہ ریورس اوسموسز سے آئے گا۔ مستقبل قریب میں اسرائیل پانی کو دوسرے ممالک کو برآمد کرنے کے لئے پرعزم ہے۔

2000 کے اوائل سے ہی سٹیم سیل پر فی کس تحقیقات مقالہ جات کی مقدار میں اسرائیل دنیا بھر میں سب سے آگے ہے۔ ریاضی، طبعیات، کیمیا، کمپیوٹر سائنسز اور معاشیات میں اسرائیلی یونیورسٹیاں دنیا کی سو بہترین جامعات میں شامل ہیں۔

اسرائیل میں برقی کاروں کی چارجنگ اور بیٹریوں کی تبدیلی کا ملک گیر نظام موجود ہے۔ اس سے اسرائیل کو تیل پر انحصار کم کرنے میں سہولت ملی ہے۔

اسرائیلی خلائی ادارہ اسرائیل بھر میں ہونے والے خلائی تحقیقی پروگراموں کی نگرانی کرتا ہے جس میں سائنسی اور تجارتی، دونوں طرح کے پروگرام شامل ہیں۔ اسرائیل ان 9 ممالک میں شامل ہے جو اپنے مصنوعی سیارے بنانے اور اسے خلا میں بھیجنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

ذرائع نقل و حمل

اسرائیل بھر میں 18096 کلومیٹر طویل پختہ شاہراہیں موجود ہیں اور کل گاڑیوں کی تعداد 24 لاکھ ہے۔ 1000 افراد کے تناسب سے 324 گاڑیاں دستیاب ہیں۔ پرائیوٹ کمپنیوں کی کل 5715 بسیں مختلف روٹس پر چلتی ہیں۔ ریلوے کا نظام کل 949 کلومیٹر طویل ہے اور اسے حکومت چلاتی ہے۔ 1990 کی دہائی کے وسط سے ہونے والی سرمایہ کاری کے بعد ٹرین کے مسافروں کی سالانہ تعداد 25 لاکھ سے بڑھ کر اب 2008 میں ساڑھے تین کروڑ ہو چکی ہے۔ ٹرینوں کی مدد سے سالانہ تقریباۢ 70 لاکھ ٹن سامان بھیجا جاتا ہے۔

اسرائیل میں دو بین الاقوامی ایئرپورٹ ہیں جن میں سے بن گوریان بین الاقوامی ہوائی اڈا سب سے بڑا ہے اور سالانہ 1 کروڑ 20 لاکھ سے زیادہ مسافر یہاں سے گذرتے ہیں۔ یہ ہوائی اڈا تل ابیب کے قریب واقع ہے۔

بحیرہ روم کے ساحل پر واقع حیفہ کی بندرگاہ اسرائیل قدیم ترین اور سب سے بڑی بندرگاہ ہے۔ بحیرہ احمر پر واقع ایلات کی بندرگاہ مشرق بعید کے ممالک کے ساتھ تجارت کے لئے استعمال ہوتی ہے۔ اشدود کی گہرے پانی کی بندرگاہ اپنی نوعیت کی دنیا بھر میں چند بندرگاہوں میں سے ایک ہے۔

سیاحت

سیاحت بالعموم اور مذہبی نوعیت کی سیاحت بالخصوص اسرائیل میں بہت اہمیت رکھتی ہے کیونکہ اسرائیل میں معتدل موسم، ساحل، آثارِ قدیمہ اور دیگر تاریخی اور مذہبی اہمیت کے مقامات اور جغرافیہ کی وجہ سے بہت سارے سیاح آتے ہیں۔ امن و امان کی صورتحال کی وجہ سے یہ صنعت براہ راست متائثر ہوتی ہے لیکن ابھی 2013 میں 35 لاکھ سے زیادہ سیاح اسرائیل آئے۔ فی کس کے اعتبار سے اسرائیل میں دنیا بھر میں سب سے زیادہ عجائب گھر ہیں۔

آبادی کی خصوصیات

2014 کے اوائل میں اسرائیل میں تقریباۢ 8146300 افراد آباد ہیں جن میں سے 6110600 افراد یہودی ہیں۔ اسرائیل کے عرب نژاد باشندے ملکی آبادی کے پانچویں حصے کے لگ بھگ ہیں۔ گذشتہ دہائی سے اسرائیل میں رومانیہ، تھائی لینڈ، چین، افریقہ اور جنوبی امریکہ کے ممالک سے بہت سارے کارکن اسرائیل آباد ہو گئے ہیں جن کی اکثریت غیرقانونی طور پر مقیم ہے۔ ایک اندازے کے مطابق یہ تعداد 203000 ہو سکتی ہے۔ جون 2012 تک کل 60000 افریقی تارکین وطن اسرائیل آئے ہیں۔ اسرائیلی آبادی کا 92 فیصد شہروں میں آباد ہے۔

اسرائیل کو یہودی افراد کا ملک مانا جاتا ہے اور اسرائیلی قانون کے مطابق تمام یہودیوں اور یہودی النسل افراد کو اسرائیلی شہریت کا حق حاصل ہے۔ اس قانون کی وجہ سے تقریباۢ 3 لاکھ غیر یہودی (روسی یہودی النسل) افراد اسرائیل کے شہری بنے ہیں۔ 73 فیصد اسرائیلی اسرائیل میں ہی پیدا ہوئے ہیں۔

زبان

اسرائیل کی دو سرکاری زبانیں ہیبریو اور عربی ہیں۔ ہیبریو زبان اسرائیلی اکثریتی زبان ہے اور سرکاری امور اسی سے نمٹائے جاتے ہیں جبکہ عربی زبان عربی اقلیت استعمال کرتی ہے۔ انگریزی زبان سکول کی ابتداء سے سکھائی جاتی ہے اور کافی اسرائیلی انگریزی میں مناسب دسترس رکھتے ہیں۔ تارکین وطن کی وجہ سے سڑکوں پر مختلف زبانیں سنائی دیتی ہیں۔ 1990 سے 1994 کے درمیان روس سے آنے والے تارکین وطن افراد سے اسرائیل کی کل آبادی میں 12 فیصد کا اضافہ ہوا ہے۔ 10 لاکھ سے زیادہ افراد روسی بولتے ہیں جبکہ فرانسیسی بولنے والے اسرائیلی افراد 7 لاکھ کے لگ بھگ ہیں جن کی اکثریت شمالی افریقہ سے آئی ہے۔

مذہب

اسرائیل اور فلسطینی علاقے مل کر ارض مقدس کا بہت بڑا حصہ بناتے ہیں جو ابراہیمی مذاہب یعنی یہودیت، عیسائیت، مسلمانوں اور بہائیوں کے لئےبہت اہمیت رکھتی ہے۔

اسرائیلی یہودیوں کے لئے مذہب مختلف حیثیت رکھتا ہے۔ ایک سروے کے مطابق 20 سال سے زیادہ عمر کے افراد کے 55 فیصد افراد خود کو روایتی یہودی، 20 فیصد سکیولر یہودی جبکہ 17 فیصد خود کو صیہونی کہلاتے ہیں۔

اسرائیلی آبادی کا 16 فیصد حصہ مسلمانوں پر مشتمل ہے۔ عیسائی 2 فیصد ہیں جبکہ دروز ڈیڑھ فیصد۔

یروشلم کا شہر یہودیوں، عیسائیوں اور مسلمانوں کے لئے خصوصی اہمیت رکھتا ہے اور ان کے مذہبی عقائد کے لئے بنیادی اہمیت رکھتا ہے۔ مذہبی مقامات میں دیوارِ گریہ، ٹمپل ماؤنٹ، مسجد الاقصٰی، نزراتھ، راملہ کی سفید مسجد وغیرہ اہم ہیں۔

ویسٹ بینک پر بھی مذہبی اہمیت کے کئی مقامات ہیں جن میں سینٹ جوزف کا مقبرہ، حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی جائے پیدائش بھی شامل ہیں۔

بہائی مذہب کا انتظامی مرکز بھی یہاں قائم ہے۔ بہائی مذہب کی زیارت گاہ ہونے کے باوجود یہاں محض انتظامی عملہ رہتا ہے اور یہاں بہائی نہیں رہتے۔

تعلیم

اسرائیل میں اسکول کا اوسط دورانیہ ساڑھے 15 سال پر محیط ہے اور اقوام متحدہ کے مطابق شرح خواندگی 97 فیصد سے زیادہ ہے۔

3 سے 18 سال تک کی عمر تک تعلیم لازمی ہے۔ اسکول تین مراحل پر مشتمل ہے جس میں پرائمری اسکول پہلی سے چھٹی تک، مڈل اسکول ہفتم سے نہم تک اور ہائی اسکول دسویں سے بارہویں تک ہوتا ہے۔ میٹرک کا امتحان ہائی اسکول کے اختتام پر ہوتا ہے اور اس میں کامیابی کے لئے ریاضی، ہبریو زبان، ہبریو اور عام ادب، انگریزی زبان، تاریخ اور بائبل کی تعلیم میں کامیاب ہونا لازمی ہوتا ہے۔ مسلمان، عیسائی اور دروز طلباء کے لئے ان کے متعلقہ مذہب کا مضمون بائبل کی جگہ ہوتا ہے۔

فہرست متعلقہ مضامین اسرائیل

حوالہ جات

  1. Cite error: حوالہ بنام population_stat کے لیے کوئی متن فراہم نہیں کیا گیا ().
  2. "Population, by Population Group"۔ Israel Central Bureau of Statistics۔ 2016۔ اخذ کردہ بتاریخ 14 اگست 2016۔ 
  3. "The 2008 Israel Integrated Census of Population and Housing" (PDF)۔ Israel Central Bureau of Statistics۔ 28 دسمبر 2008۔ اخذ کردہ بتاریخ 17 فروری 2012۔ 
  4. ^ 4.0 4.1 "Report for Selected Countries and Subjects"۔ International Monetary Fund۔ اکتوبر 2016۔ اخذ کردہ بتاریخ 21 اکتوبر 2016۔ 
  5. "Distribution of family income – Gini index"۔ The World Factbook۔ Central Intelligence Agency۔ اخذ کردہ بتاریخ 18 فروری 2016۔ 
  6. "2015 Human Development Report"۔ United Nations Development Programme۔ 2015۔ اخذ کردہ بتاریخ 14 دسمبر 2015۔ 
  7. "Sources of population growth, by type of locality, population group and religion"۔ Statistical Abstract of Israel 2014 (Hebrew, English زبان میں)۔ Israel Central Bureau of Statistics۔ 2014۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 August 2015۔