اسرائیل–متحدہ عرب امارات امن معاہدہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مشرق وسطی میں اسرائیل (نیلے رنگ) اور متحدہ عرب امارات (سرخ)کا مقام

اسرائیل–متحدہ عرب امارات کے امن معاہدے یا ابراہیم ایکارڈ، اسرائیل اور متحدہ عرب امارات کے درمیان 13 اگست 2020ء کو کیا گیا۔ اگر اس معاہدے پر دستخط ہوجاتے ہیں تو متحدہ عرب امارات، مصر اور اردن کے بعد تیسرا عرب ملک ہوگا جو سرائیل کے ساتھ اپنے تعلقات کو باضابطہ طور پر معمول بنائے گا۔[1]

اس معاہدے سے قبل اسرائیل اور متحدہ عرب امارات میں طویل مدت تک غیر رسمی شرائط پر اچھے تعلقات تھے۔[2]

پس منظر[ترمیم]

1971ء کے اوائل تک، جس سال میں متحدہ عرب امارات ایک آزاد ملک بنا، متحدہ عرب امارات کے پہلے صدر شیخ زید بن سلطان ال نہیان نے اسرائیل کو "دشمن" کہا تھا۔[3] نومبر 2015ء میں، اسرائیل نے اعلان کیا تھا کہ وہ متحدہ عرب امارات میں ایک سفارتی دفتر کھولے گا جو ایک عشرے سے زیادہ کے دوران پہلی بار ہوگا کہ اسرائیل نے خلیج فارس میں باضابطہ طور پر موجودگی حاصل کی۔[4] اگست 2019ء میں، اسرائیل کے وزیر خارجہ نے ایران کے ساتھ بڑھتی ہوئی کشیدگی کے درمیان متحدہ عرب امارات کے ساتھ فوجی تعاون کے بارے میں ایک عوامی اعلان کیا۔ [5]

اسرائیل متحدہ عرب امارات کے ساتھ خفیہ کام کر رہا تھا جس میں کوویڈ 19 وبائی امراض کا مقابلہ کیا جاسکے۔ یوروپی نیوز میڈیا نے اطلاع دی ہے کہ موساد نے خلیجی ریاستوں سے احتیاط کے ساتھ صحت کا سامان حاصل کیا ہے۔[6][7] اسرائیل کے وزیر اعظم بنیامین نیتن یاہو نے جون 2020ء کے آخر میں اطلاع دی کہ دونوں ممالک کورونا وائرس سے لڑنے کے لئے باہمی تعاون میں ہیں اور موساد کے سربراہ یوسی کوہن نے متعدد بار متحدہ عرب امارات کا سفر کیا ہے۔ تاہم، متحدہ عرب امارات نے کچھ گھنٹوں بعد یہ انکشاف کرتے ہوئے اس کی پاداش میں دیکھا کہ ریاستی سطح پر یہ صرف نجی کمپنیوں کے مابین ایک انتظام تھا۔[8]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Baker، Peter؛ Kershner، Isabel؛ Kirkpatrick، David D. (August 13, 2020). "Israel and United Arab Emirates Strike Major Diplomatic Agreement". نیو یارک ٹائمز. If fulfilled, the pact would make the Emirates only the third Arab country to have normal diplomatic relations with Israel along with Egypt, which signed a peace agreement in 1979, and Jordan, which signed a treaty in 1994. 
  2. "Mellanösternexpert: "Avtalet mellan Förenade Arabemiraten och Israel ingen överraskning - länderna har länge varit på god fot med varandra"". svenska.yle.fi (بزبان سونسکا). اخذ شدہ بتاریخ 15 اگست 2020. 
  3. Kristian Coates Ulrichsen (September 2016). "Israel and the Arab Gulf States: Drivers and Directions of Change" (PDF). Rice University's Baker Institute for Public Policy. صفحہ 3. 
  4. Hadid، Diaa (November 27, 2015). "Israel to Open Diplomatic Office in United Arab Emirates". The New York Times. 
  5. Freedberg، Sydney J., Jr. "Israel Meets with UAE, Declares It's Joining Persian Gulf Coalition". 
  6. Baker، Peter؛ Kershner، Isabel؛ Kirkpatrick، David D. (August 13, 2020). "Israel and United Arab Emirates Strike Major Diplomatic Agreement". اخذ شدہ بتاریخ August 13, 2020. 
  7. Bergman، Ronen (April 12, 2020). "Israel's Not-So-Secret Weapon in Coronavirus Fight: The Spies of Mossad". The New York Times. 
  8. Bergman، Ronen؛ Hubbard، Ben (June 25, 2020). "Israel Announces Partnership with U.A.E., Which Throws Cold Water On It". اخذ شدہ بتاریخ August 13, 2020.