اسرار جمعی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
اسرار جمعی
معلومات شخصیت
پیدائش 1937ء
پٹنہ
وفات 4 اپریل، 2020ء
نئی دہلی
قومیت برطانوی ہند
بھارت
عملی زندگی
وجہ شہرت اردو شاعری
کارہائے نمایاں مزاحیہ پندرہ روزہ پوسٹ مارٹم

اسرار جمعی کا حقیقی نام اسرار الحق تھا۔ وہ پٹنہ، بہار سے تعلق رکھنے والے اردو زبان کے شاعر اور مزاحیہ پندرہ روزہ پوسٹ مارٹم کے مدیر تھے۔

خاندانی پس منظر[ترمیم]

جمعی پٹنہ میں 1937ء میں پیدا ہوئے۔ ان کے والد سید ولی الحق ایک زمین دار تھے۔ والد نے تحریک خلافت میں بھی حصہ لیا تھا اور وہ گاندھی جی اور مولانا محمد علی جوہر کے ساتھیوں میں سے ایک تھے۔ جمعی نے نئی دہلی میں ڈاکٹر ذاکر حسین کی شاگردی میں زانوئے تلمذ تہ کیا، بعد ازاں بھارت کے صدر جمہوریہ بھی بنے۔ حسین نے انہیں پلانی میں واقع برلا انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی میں انجینئرنگ پڑھنے کا مشورہ دیا۔ اسی زمانہ طالب علمی میں جمعی تخلص اختیار کیا گیا اور عوامی مشاعروں میں شرکت کا دور بھی شروع ہوا۔[1]

والد کی موت اور بعد کے حالات[ترمیم]

جمعی کالج ہی میں تھے جب انہیں انہیں ان کے والد کی رحلت کی خبر ملی اور وہ پٹنہ لوٹ آئے۔ یہاں انہوں نے ایک انسٹی ٹیوٹ شروع کیا جہاں طبی اور انجینئرنگ داخلے کے امتحانوں کی تیاری دی جا رہی تھی۔ اگلے کچھ سال مشکلات میں گزرے: جائداد کے تنازعات، خاندان میں پھوٹ اور والدہ کا گزر جانا ان سب کی اہم وجوہ شامل تھے۔[1]

اردو ادب کی خدمت[ترمیم]

شخصی، خاندانی اور مالی مشکلات کے باوجود وہ اردو ادب کی خدمت میں لگے رہے۔ انہوں نے چار شعری مجموعے اور ہندوستان کی تاریخ پر کئی کتابچے لکھے۔ وہ اردو پندرہ روزہ مزاحیہ رسالے پوسٹ مارٹم کے مدیر بھی تھے۔[1]

انتقال[ترمیم]

4 اپریل، 2020ء کے دن وہ نئی دہلی میں انتقال کر گئے۔[1]

نمونہ کلام[ترمیم]

جس دیش میں گنگا بہتی ہے
اس دیش میں پانی بکتا ہے۔[2]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]