مندرجات کا رخ کریں

اسقاط حمل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
اسقاط حمل
مترادفازبخود اسقاط حمل، قبل از وقت حمل ضائع ہونا
ایک الٹراساؤنڈ میں نظر آتی حملاتی تھیلی جس میں زردی کی تھیلی موجود ہے لیکن جنین نہیں ہے۔
اختصاصزچگی اور نسوانی امراض
علاماتدرد یا بغیر درد کے اندام نہانی سے خون بہنا [1]
مضاعفاتانفیکشن, خون بہنا,[2] اداسی, اضطراب, احساس جرم[3]
عمومی حملہحمل کے پہلے 20 ہفتوں میں[4]
وجوہاتکروماسوم کی غیرمعقولیت[1][5] رحم کی بے اعتدالی[6]
خطرہ عنصروالدین کی عمر رسیدگی ,سابقہ اسقاط حمل،, کا سامناتمباکو نوشی, موٹاپا, ذیابیطس, خودکار مدافعتی امراضs, منشیات یا الکحل کا استعمال[7][8][9]
تشخیصی طریقہطبی معائنہ, ،ایچ سی جی ،انسانی کوریونک گوناڈوٹروپین, الٹرا سائونڈ[10]
مماثل کیفیتحمل میں پیچیدگی, امپلاٹیشن سے خون بہنا.[1]
تدارکقبل از پیدائش کی دیکھ بھال[11]
علاجمتوقع حاملہ کی دئکھ بھال, مسوپروسٹول, ویکیوم اسپیریشن, جذباتی حوصلہ[8][12]
تعدد10–50فی صد حمل میں[1][7]

اسقاط حمل ، جسے ازخودسقاط حمل یا قبل از وقت حمل کا ضیاع بھی کہا جاتا ہے، اسقاط حمل کسی جنین یا حمیلکی آزادانہ طور پر زندہ رہنے سے قبل ہی اس کی قدرتی موت ہے۔ [1] [4] اسقاط حمل کے لیے کچھ ماہرین حمل کے 20 ہفتوں کوحتمی قرار دیتے ہیں، جس کے بعد جنین کی موت کو مردہ پیدائش کے نام سے جانا جاتاہے۔ [13] اسقاط حمل کی سب سے عام علامت درد کے ساتھ یا اس کے بغیر اندام نہانی سے خون بہنا ہے۔ [1] بعد ازاں حاملہ اداسی ، اضطراب اور احساس جرم کی شکار ہو سکتی ہے ۔ [3] [14] ٹشو اور جما ہوا مواد بچہ دانی سے نکل کر اندام نہانی سے باہر آسکتا ہے۔ [15] جب کسی عورت کو بار بار اسقاط حمل ہوتو یہ بانجھ پن بھی ہو سکتا ہے۔ [16]

اسقاط حمل کے خطرے کے عوامل میں والدین کاعمر رسیدہ ہونا، سابقہ اسقاط حمل، تمباکو کے دھوئیں کا مستقل سامنا، موٹاپا ، ذیابیطس ، تھائیرائیڈ کے مسائل اور منشیات یا الکحل کا استعمال شامل ہیں۔ [7] [8] تقریباً 80 فیصد اسقاط ، حمل ، کے پہلے 12 ہفتوں ( پہلی سہ ماہی ) میں ہوتے ہیں۔ [1] تقریباً نصف معاملات میں بنیادی وجہ کروموسومل کی غیر معقولیت ہوتی ہے۔ [5] [1] اسقاط حمل کی تشخیص میں یہ جانچنا کہ آیا رحم کا گردن نما حصہگریوا (سرویکس) کھلا ہوا ہے یا بند ہے، انسانی کوریونک گوناڈوٹروپن (ایچ سی جی) کی خون میں سطح کی جانچ اور الٹراساؤنڈ شامل ہو سکتے ہے۔ [10] جو حالتیں جو اسی طرح کی ملتی جلتی علامات پیدا کرسکتی ہیں ان میں ایکٹوپک حمل اور امپلانٹیشن سے خون بہنا شامل ہیں۔ [1]

کبھی کبھار قبل از پیدائش کی اچھی دیکھ بھال سے روک تھام ممکن ہو سکتی ہے۔ [11] منشیات، الکحل، متعدی امراض اور تابکاری سے پرہیز کرنے سے اسقاط حمل کا خطرہ کم ہو سکتا ہے۔ [11] عام طور پر پہلے 7 سے 14 دنوں کے دوران کسی خاص علاج کی ضرورت نہیں ہوتی ہے۔ [12] زیادہ تر اسقاط حمل بغیر کسی اضافی مداخلت کے مکمل ہو جائیں گے۔ [8] کبھی کبھار دوائی مسوپروسٹول یا ویکیوم ایسپیریشن جیسا طریقہ کار بقایا ٹشو زکو ہٹانے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ [12] [17] جن خواتین کے خون کی قسم ریسس نیگیٹو (Rh منفی) ہے انھیں Rho(D) امیون گلوبلین کی ضرورت پڑسکتی ہے۔ [8] درد کی دوا بھی فائدہ مند ہو سکتی ہے۔ [12] جذباتی مدد ، نقصان سے نبٹنے میں مددگار ہو سکتی ہے۔ [12]

اسقاط حمل، ابتدائے حمل کی سب سے عام پیچیدگی ہے۔ [18] وہ خواتین جو یہ جانتی ہیں کہ وہ حاملہ ہیں، ان میں اسقاط حمل کی شرح تقریباً 10سے 20 فیصد ہے، جب کہ تمام فرٹیلائزیشن میں شرح تقریباً 30سے 50فیصد ہے۔ [1] [7] 35 سال سے کم عمر والوں میں یہ خطرہ تقریباً 10 فیصد ہے جبکہ 40 سال سے زیادہ عمر والوں میں یہ تقریباً 45 فیصد ہے [1] 30 سال کی عمر کے آس پاس خطرہ بڑھنا شروع ہو جاتا ہے [7] تقریباً 5فیصد خواتین کو لگاتار دو اسقاط حمل ہوتے ہیں۔ [19] کچھ پریشانی دور کرنے میں مدد کرنے والی تنظیمیں یہ مشورہ دیتی ہیں کہ اسقاط حمل کا سامنا کرنے والوں کے ساتھ بات چیت میں " اسقاط حمل " کی اصطلاح استعمال نہ کریں۔ [20]

حوالہ جات:[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح خ د The Johns Hopkins Manual of Gynecology and Obstetrics (4 ایڈیشن)۔ Lippincott Williams & Wilkins۔ 2012۔ صفحہ: 438–439۔ ISBN 9781451148015۔ September 10, 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  2. "Spontaneous Abortion - Gynecology and Obstetrics"۔ Merck Manuals Professional Edition۔ December 4, 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 مئی 2018 
  3. ^ ا ب GE Robinson (January 2014)۔ "Pregnancy loss"۔ Best Practice & Research. Clinical Obstetrics & Gynaecology۔ 28 (1): 169–78۔ PMID 24047642۔ doi:10.1016/j.bpobgyn.2013.08.012 
  4. ^ ا ب "What is pregnancy loss/miscarriage?"۔ www.nichd.nih.gov/۔ July 15, 2013۔ April 2, 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ March 14, 2015 
  5. ^ ا ب D Vaiman (2015)۔ "Genetic regulation of recurrent spontaneous abortion in humans"۔ Biomedical Journal۔ 38 (1): 11–24۔ PMID 25179715۔ doi:10.4103/2319-4170.133777Freely accessible 
  6. YY Chan، K Jayaprakasan، A Tan، JG Thornton، A Coomarasamy، NJ Raine-Fenning (October 2011)۔ "Reproductive outcomes in women with congenital uterine anomalies: a systematic review"۔ Ultrasound in Obstetrics & Gynecology۔ 38 (4): 371–82۔ PMID 21830244۔ doi:10.1002/uog.10056 
  7. ^ ا ب پ ت ٹ "How many people are affected by or at risk for pregnancy loss or miscarriage?"۔ www.nichd.nih.gov۔ July 15, 2013۔ April 2, 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ March 14, 2015 
  8. ^ ا ب پ ت ٹ A Oliver، C Overton (May 2014)۔ "Diagnosis and management of miscarriage"۔ The Practitioner۔ 258 (1771): 25–8, 3۔ PMID 25055407 
  9. HJ Carp، C Selmi، Y Shoenfeld (May 2012)۔ "The autoimmune bases of infertility and pregnancy loss"۔ Journal of Autoimmunity (Review)۔ 38 (2–3): J266–74۔ PMID 22284905۔ doi:10.1016/j.jaut.2011.11.016 
  10. ^ ا ب "How do health care providers diagnose pregnancy loss or miscarriage?"۔ www.nichd.nih.gov/۔ 2013-07-15۔ December 22, 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مارچ 2015 
  11. ^ ا ب پ "Is there a cure for pregnancy loss/miscarriage?"۔ www.nichd.nih.gov/۔ October 21, 2013۔ April 2, 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ March 14, 2015 
  12. ^ ا ب پ ت ٹ "What are the treatments for pregnancy loss/miscarriage?"۔ www.nichd.nih.gov۔ July 15, 2013۔ April 2, 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ March 14, 2015 
  13. "Stillbirth: Overview"۔ NICHD۔ 23 September 2014۔ October 5, 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 04 اکتوبر 2016 
  14. Radford EJ, Hughes M (June 2015)
  15. "What are the symptoms of pregnancy loss/miscarriage?"۔ www.nichd.nih.gov/۔ 2013-07-15۔ April 2, 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مارچ 2015 
  16. "Glossary | womenshealth.gov"۔ womenshealth.gov۔ January 10, 2017۔ February 3, 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 ستمبر 2017 
  17. Tunçalp O, Gülmezoglu AM, Souza JP (September 2010)
  18. National Coordinating Centre for Women's and Children's Health (UK) (December 2012)۔ "Ectopic Pregnancy and Miscarriage: Diagnosis and Initial Management in Early Pregnancy of Ectopic Pregnancy and Miscarriage"۔ NICE Clinical Guidelines, No. 154۔ Royal College of Obstetricians and Gynaecologists۔ October 20, 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 04 جولا‎ئی 2013 
  19. Garrido-Gimenez C, Alijotas-Reig J (March 2015)
  20. Ian Greaves، Keith Porter، Tim J. Hodgetts، Malcolm Woollard (2005)۔ Emergency Care: A Textbook for Paramedics۔ London: Elsevier Health Sciences۔ صفحہ: 506۔ ISBN 978-0-7020-2586-0۔ April 26, 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ