اسما برلاس

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
اسما برلاس
اسما برلاس
معلومات شخصیت
پیدائش 1950ء
پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قومیت پاکستان
عملی زندگی
پیشہ مصنفہ، ماہر تعلیم
پیشہ ورانہ زبان انگریزی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

اسما برلاس (پیدائش: 1950ء) ایک پاکستانی نژاد امریکی مصنف اور ماہر تعلیم ہیں۔ ان کی تحقیق کے موضوعات میں تقابلی اور بین الاقوامی سیاست ، اسلام اور قرآن اور خواتین کی تعلیم شامل ہیں۔[1]

ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

برلاس 1950 میں پاکستان میں پیدا ہوئی تھیں۔ انہوں نے کنیئرڈ کالج سے انگریزی ادب اور فلسفہ میں بیچلر اور پنجاب یونیورسٹی سے صحافت میں ماسٹر ڈگری حاصل کی۔ انہوں نے ڈینور یونیورسٹی سے بین الاقوامی تعلیم میں ماسٹر ڈگری اور پی ایچ ڈی کی ڈگری بھی حاصل کی ہے۔ [2]

پیشہ ورانہ زندگی[ترمیم]

اسما برلاس ان پہلی خواتین میں شامل تھیں جنھیں 1976 میں غیر ملکی سروس میں شامل کیا گیا تھا۔ [1] چھ سال بعد، جنرل ضیاء الحق کے حکم پر انھیں برخاست کر دیا گیا۔ انہوں نے 1983 میں ریاست ہائے متحدہ میں سیاسی پناہ حاصل کرنے سے قبل حزب اختلاف کے اخبارمیں اسسٹنٹ ایڈیٹر کی حیثیت سے کام کیا۔[3][4] اسما برلاس 1991 میں اتھاکا کالج کے شعبہ سیاست میں شامل ہوئیں۔ وہ 12 سال تک ثقافت، نسل اور نسلی امتیاز کے مطالعہ کے مرکز کی بانی ڈائریکٹر تھیں۔ انھوں نے 2008 میں ایمسٹرڈیم یونیورسٹی میں فلسفہ میں اسپنوزا چیئر کا انعقاد کیا تھا۔[5]

تحقیق[ترمیم]

اسما برلاس نے مسلمانوں کے مذہبی علم پیدا کرنے کی طرز پہ تحقیق کی ہے، خاص طور پر قرآن کی توجیہ تفسیر، اس موضوع پر جو انہوں نے اپنی کتاب "اسلام میں عورتوں کو ماننا": قرآن مجید کی غیر پڑھائی جانے والی تشریحات " میں کھوج کی ہے۔[6] وہ اپنے نظریات اور اسلام کی ترجمانی کو " اسلامی حقوق نسواں " کے نام سے مسترد کرتی ہیں، جب تک کہ اس اصطلاح کی وضاحت " صنفی مساوات اور معاشرتی انصاف کے ایک مباحثہ سے نا کی جائے۔ جو قرآن سے اس کی تفہیم حاصل کرتی ہے اور حقوق کے عملی عمل کو تلاش کرتی ہے اور عوامی نوعیت کے تسلسل میں تمام انسانوں کے وجود کے انفرادیت کے لیے انصاف کا تقاضا کرتی ہے۔"[7] اپنی پہلی کتاب، "جمہوریت، قوم پرستی اور فرقہ واریت: جنوبی ایشیا میں نوآبادیاتی میراث" میں اسما برلاس نے برطانوی استعمار سے پاکستانی سیاست میں عسکریت پسندی کے تعلقات کے بارے میں لکھا۔

کام[ترمیم]

کتابیں[ترمیم]

  • اسلام، مسلمان اور امریکا: مذہب اور سیاست سے متعلق مضامین (ہندوستان، عالمی میڈیا پبلی کیشنز ، 2004)
  • اسلام میں "خواتین پر اعتقاد": قرآن مجید کی غیر پڑھنے والی پدرشاہانہ تشریحات (یونیورسٹی آف ٹیکساس پریس ، 2002)۔
  • جمہوریت، قوم پرستی اور فرقہ واریت: جنوبی ایشیا میں نوآبادیاتی میراث (ویسٹ ویو پریس ، 1995)
  • قرآنی سرپرست کا مقابلہ (یونیورسٹی آف ٹیکساس پریس، 2018) (رایبرن فن کے ساتھ مشترکہ تحریر کردہ)
  • اسلام میں "خواتین پر اعتقاد": قرآن مجید کی غیر پڑھے جانے والے پدرشاہی کی ترجمانی (نظر ثانی شدہ ایڈیشن( یونیورسٹی آف ٹیکساس پریس ، فروری 2019) [8]

مضامین[ترمیم]

عبد العزیز سید اور مینا شریفی فنک (ایڈیشن) میں "اسلامی عالمگیرانی کی بحالی: مشرق / مغرب ، مغرب اور ہم آہنگی")، عصری اسلام: متحرک، جامد نہیں (روٹلیج ، 2006) جین ڈیم مین میک الف (ایڈیٹر) میں "قرآن کے خواتین اور نسوانی نسخے"، کیمبرج کمپینیئن قرآن مجید (کیمبرج یونیورسٹی پریس ، 2006)۔ "عالمگیریت مساوات: مسلم خواتین، تھیولوجی اور حقوق نسواں" فیرا سیمون (ایڈیٹر)، شفٹنگ گراؤنڈ پر: عالمی دور میں مسلم خواتین NY: فیمنسٹ پریس ، 2005 "امینہ ودود کی قرآن مجید کی ہرمینیٹکس: ویمن ریڈرنگ سیکریٹ ٹیکٹس" سوہا تاجی فاروقی (ایڈیٹر)، معاصر مسلم دانشور اور قرآن: جدید اور پوسٹ ماڈرنسٹ اپروچ (آکسفورڈ: آکسفورڈ یونیورسٹی پریس ، 2004)۔

  1. ^ ا ب Barlas، Asma. "Asma Barlas". Ithaca College. اخذ شدہ بتاریخ 06 اپریل 2017. 
  2. "Muslim Women: Past and Present". 12 اکتوبر 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 16 اگست 2011. 
  3. Sikand، Yoginder، ویکی نویس (2004). Struggling to be heard: South Asian Muslim voices. Global Media Publications. صفحہ 171. 
  4. "Bio of Asma Barlas". Center for the Study of Islam and Democracy. 28 جولا‎ئی 2005 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 06 اپریل 2017. 
  5. Ithaca College Politics Professor Named to Spinoza Chair at University of Amsterdam
  6. "Believing Women" in Islam
  7. The Qur’an, Sexual Equality, and Feminism آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ asmabarlas.com [Error: unknown archive URL] University of Toronto, 12 January 2004
  8. Believing Women in Islam: Unreading Patriarchal Interpretations of the Qur'an