الباب کی لڑائی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
الباب کی لڑائی
حصہ شام میں ترکی کی فوجی مداخلت، شام میں روس کی فوجی مداخلت اور شامی خانہ جنگی

شمالی حلب میں ترکی اور اتحادیوں کی کارروائیوں کا نقشہ
تاریخ6 نومبر 2016–23 فروری 2017
(3 مہینا، 2 ہفتہ اور 3 دن)
مقامالباب ضلع، محافظہ حلب، سوریہ
نتیجہ ترک فوج اور rebel victory* ترک مسلح افواج اور اتحادی باغیوں نے الباب، قصبہ Bizaah اور Qabasin اور 37 داعش کے گاؤں اور 4 [9][10][11][12][13][14][15]* The SDF captures 17 villages, including Arima from ISIL[16][17][18][19]* The Syrian Army captures the towns of Arran، Rasm Harmil، 51 villages and several hills from ISIL and sets fire control over دیر حافر۔[20][21][22][23][24][25][26][27][28][29][30][31][32][33]
محارب
Flag of Turkey.svg ترکی
Flag of سوری حزب اختلاف Free Syrian Army
Support:
روس (against ISIL only; since 29 Dec. 2016)[1]
Flag of the United States.svg ریاستہائے متحدہ (against ISIL only, since 17 Jan. 2017)[2]
AQMI Flag.svg عراق اور الشام میں اسلامی ریاست

Syrian Democratic Forces (until 27 نومبر 2016)


سوریہ[4]

Syrian National Resistance[4][5][6]
Syrian Resistance[7]

Support:
روس (against ISIL only)[8]
کمانڈر اور رہنما

Flag of ترکی Lt. Gen. Zekai Aksakallı[34]
(Operations chief commander)
Flag of ترکی Lt. Gen. İsmail Metin Temel[35][36]
(Second Army commander)
Flag of سوری حزب اختلاف Col. Ahmed Othman[37]
(Sultan Murad Division commander)
Flag of سوری حزب اختلاف Fehim İsa (Sultan Murad Division commander)[38]
Mahmoud Abu Hamza[39] (Descendants of Saladin Brigade commander)
Flag of سوری حزب اختلاف Capt. Yussuf Shibli[40] (Qabasin Military Council commander)
Capt. Abdel Salam Abdel Razaq[39] (Nour al-Din al-Zenki Movement commander)
Capt. Mohammed Abu Mustafa[41]
(Sham Legion commander)
Abu Jafer[42] (Brigade of Conquest commander)

Flag of سوری حزب اختلاف Zakariya Wali[43] (زخمی)
(Mehmed the Conqueror Brigade military commander)

Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست Abu Khalid al-Urduni  (ISIL Governor of al-Bab)[44]
Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست Abu Husen Tunisi [45]
(ISIL emir)
Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست Abu Ansari [46]
(ISIL emir)

Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست Jonathan Jeffrey (a.k.a. Abu Ibrahim Al-Francy)  (جنگی قیدی)[47][48]
(French ISIL leader in al-Bab)

Adnan Abu Amjad[49] (Manbij Military Council & شمالی Sun Battalion commander)

Anwar Khabat[50] (Euphrates Liberation Brigade commander)
Units involved

Flag of ترکی Turkish Armed Forces

Flag of سوری حزب اختلاف Hawar Kilis Operations Room

Other Syrian rebels:

Military of ISIL

Syrian Democratic Forces


Syrian Armed Forces

Syrian National Resistance[4]

طاقت
Flag of ترکی 1٬300 soldiers,[66][67][68]
40 tanks originally, 10 reinforcements[69]
15+ APCs[70]
Flag of سوری حزب اختلاف 2٬000–3٬000 rebel fighters[71][72]
3٬000–5٬000 militants[71][73]

Unknown


Flag of سوریہ 10٬000 soldiers[6]
اموات اور نقصانات

Flag of ترکی 57 ہلاک[74]

Flag of سوری حزب اختلاف 428 killed[75]
1٬348+ ہلاک (ترکی اور ایس اے اے کا دعوی)[76]

46 ہلاک[77]


Flag of سوریہ 16+ ہلاک[78]
444 شہری ہلاک[79]
30٬000+ ترک مکان[80]

الباب کی لڑائی الباب، صوبہ حلب میں ایک لڑائی تھی۔ یہ الباب کے شمال میں سوری باغی گروہوں (آزاد سوری فوج کے ساتھ منسلک گروہوں) اور ترک مسلح افواج کی طرف سے شروع کی گئی، ایک علاحدہ جارحانہ شہر کے وسط اور مغرب سے سیرین ڈیموکریٹک فورسز (ایس ڈی ایف) اور ایک اور شہر کے جنوب سے جارحانہ سوری فوج نے شمالی ترک افواج کی زیر قیادت عراق اور الشام میں اسلامی ریاست (آئی ایس آئی ایل) سے الباب کو آزاد کرانے کے لیے لڑائی کی، یہ کارروائی سوریہ میں ترکی کی فوجی مداخلت کا حصہ ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ MEERussia نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  2. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ USstrikes نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  3. "RARE PIC" (Tweet)۔ 17 نومبر 2016 – بذریعہ Twitter۔ (ضرورت رکنیت)۔ 
  4. ^ ا ب پ ت ٹ "Syrian Army captures first village from Turkish-backed rebels on the outskirts of al-Bab"۔ al-Masdar News۔ 29 نومبر 2016۔ اخذ کردہ بتاریخ 29 نومبر 2016۔ 
  5. ""المقاومة السورية" إلى جانب الجيش: "الباب" أقرب"۔ 
  6. ^ ا ب "Syrian Army Prepares to Enter Al-Bab to Liberate City from Terrorists"۔ 
  7. "Ivan Sidorenko on Twitter"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  8. Leith Fadel (23 جنوری 2017)۔ "Syrian Army closes-on ISIS stronghold in east Aleppo: map"۔ 
  9. ایس ڈی ایف کے گاؤں پر سے آزاد کرا لیے[1] El Bab son durum harita (11 Aralık)
  10. After reaching the edges of al-Bab city… the "Euphrates Shield" factions expand their controlled areas in the vicinity of the city and its countryside
  11. Chris Tomson (7 نومبر 2016)۔ "Syrian rebels seize seven villages in major advance towards ISIS stronghold of al-Bab"۔ اخذ کردہ بتاریخ 8 نومبر 2016۔ 
  12. Chris Tomson (15 نومبر 2016)۔ "Turkish-backed rebels overrun another ISIS-held town near al-Bab"۔ اخذ کردہ بتاریخ 16 نومبر 2016۔ 
  13. "فصائل "درع الفرات" تسيطر على تلة الـ500 وقرى الغجران والعواصي واللواحجة والحساني بريف حلب الشرقي"۔ 
  14. Paul Antonopoulos (23 فروری 2017)۔ "Reports: ISIS surrenders Al-Bab to Turkish-led forces"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  15. Chris Tomson (23 فروری 2017)۔ "ISIS in full-scale retreat as the Turkish Army seizes two large towns neighboring Al-Bab"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  16. The Syria Democratic Forces are trying to besiege al-Arima and factions of "Euphrates Shield" advance in the vicinity of al-Bab with clashes on its frontiers
  17. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ four نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  18. Chris Tomson (16 نومبر 2016)۔ "US-backed Kurds seize 9 villages from ISIS while Turkish-backed rebels attack both"۔ 
  19. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ arimahr نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  20. Yusha Yuseef (7 فروری 2017)۔ "بالخريطة -- وحدات الجيش السوري تسيطر على بلدة بيرة الباب و اقل من 3.9 كم تفصلها عن مدينة الباب"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  21. Leith Fadel (8 فروری 2017)۔ "Race for Al-Bab continues as Syrian government forces liberate new village"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  22. Yusha Yuseef (9 فروری 2017)۔ "بالخريطة -- وحدات الجيش السوري تسيطر على بلدتي دير قاق والشماوية جنوب الباب"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  23. Paul Antonopoulos (10 فروری 2017)۔ "BREAKING: Al-Bab battle heat up as the Syrian Army reaches its southern gates"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  24. Leith Fadel (12 فروری 2017)۔ "Syrian Army liberates two villages northeast of Kuweires Airport"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  25. Leith Fadel (14 فروری 2017)۔ "ISIL's marathon-like retreat continues in east Aleppo as Syrian Army liberates two more villages"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  26. "SAA Tiger Forces full control Musharifah, Bayjan, and Tal Bayjan villages"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  27. Leith Fadel (15 فروری 2017)۔ "East Aleppo battle heats up as Syrian government forces close on ISIS stronghold"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  28. Leith Fadel (15 فروری 2017)۔ "Latest battlefield update from east Aleppo: map"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  29. Chris Tomson (21 فروری 2017)۔ "BREAKING: Syrian Army captures town in eastern Aleppo, inches closer to ISIS bastion"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  30. Chris Tomson (21 فروری 2017)۔ "Syrian Army on the roll in eastern Aleppo as Tiger Forces liberate another ISIS village"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  31. Chris Tomson (22 فروری 2017)۔ "Islamic State defensive line buckles in eastern Aleppo as Syrian Army liberates village"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  32. Leith Fadel (23 فروری 2017)۔ "ISIS in serious trouble in east Aleppo as Syrian Army cuts their supply line: map"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  33. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ Al_Jarif نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  34. Turkish Special Forces: From stopping a coup to the frontline of the ISIL fight Hürriyet Daily News، 24 اگست 2016.
  35. "Turkey signals no quick end to Syria incursion as truck bomb kills police"۔ Reuters۔ 26 اگست 2016۔ 
  36. "Korgeneral İsmail Metin Temel Cerablus’ta"۔ Hürriyet Daily News۔ 26 اگست 2016۔ 
  37. "Turkish Forces and Rebels Storm Into Syria, Taking IS Stronghold of Jarablus"۔ VOA۔ 24 اگست 2016۔ 
  38. "SULTAN MURAT TÜMENİ KOMUTANI FEHİM İSA TATHAMUS TÜRKMEN KÖYÜNÜN DEAŞ TERÖR ÖRGÜTÜNDEN TEMİZLENDİĞİNİ AÇIKLADI"۔ 24 اگست 2016۔ 
  39. ^ ا ب after-border-victory/ "Turkish-backed FSA rebels set their sights on last IS Aleppo stronghold after border victory"۔ Syria:direct۔ 5 ستمبر 2016۔ 
  40. "LCC Qabasin rejects Qabasin MC"۔ Yallasouriya۔ 13 نومبر 2016۔ 
  41. "ÖSO komutanlarından Türkiye'ye teşekkür"۔ 25 اگست 2016۔ 
  42. "41K Turkish soldiers ready to support operation Al Bab"۔ Yeni Şafak۔ 22 ستمبر 2016۔ اخذ کردہ بتاریخ 22 ستمبر 2016۔ 
  43. [2] إصابة القائد العسكري زكريا والي خلال اشتباكات على جبهة بزاعة في محيط مدينة الباب۔
  44. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ 33 terrorists killed نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  45. "ISIL ‘emir’ killed in Turkish air strike in Syria: Sources – MIDEAST"۔ اخذ کردہ بتاریخ 13 جنوری 2017۔ 
  46. "TSK açıkladı! DAEŞ'ın kritik ismi öldürüldü"۔ اخذ کردہ بتاریخ 13 جنوری 2017۔ 
  47. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ AAJeffrey نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  48. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ AMNJeffrey نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  49. "Turkey calls on US, allies to reconsider Syria no-fly zone"۔ AP۔ 21 نومبر 2016۔ 
  50. "Hassan Ridha on Twitter"۔ 
  51. "Syria Euphrates Shiel Hawar Kilis operation room"۔ Yalla Souriya۔ 20 ستمبر 2016۔ 
  52. "Hassan Ridha on Twitter"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  53. "Hassan Ridha on Twitter"۔ 
  54. ^ ا ب "Новости Абхазия on Twitter"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  55. "U.S. warplanes support Turkish tanks attacking Islamic State forces in Syria"۔ Military Times۔ 24 اگست 2016۔ 
  56. "fouad sarkis on Twitter"۔ اخذ کردہ بتاریخ 26 ستمبر 2016۔ 
  57. "MuntasırBillahTugayı on Twitter"۔ اخذ کردہ بتاریخ 13 جنوری 2017۔ 
  58. "The Tel Rifaat Military Council shells Tel Rifaat with a mortar • r/syriancivilwar"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  59. "أشتباكات عنيفة تخوضها قوات الجيش السوري الحر ضد تنظيم داعش داخل مدينة الباب بريف حلب الشرقي"۔ 14 فروری 2017۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017 – بذریعہ YouTube۔ (ضرورت رکنیت)۔ 
  60. "Hassan Ridha on Twitter"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  61. "Thomas van Linge on Twitter"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 نومبر 2016۔ 
  62. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح "Turkish-backed rebels, Syrian Army and Kurdish forces all advance in race to al-Bab"۔ al-Masdar News۔ 26 نومبر 2016۔ اخذ کردہ بتاریخ 29 نومبر 2016۔ 
  63. "Thomas van Linge on Twitter"۔ 
  64. "Shahba forces"۔ RUMAF۔ 1 دسمبر 2016۔ 
  65. "HUGE GAINS for the newly formed Protection unit !" (Tweet)۔ 26 نومبر 2016 – بذریعہ Twitter۔ (ضرورت رکنیت)۔ 
  66. Yeni Şafak (5 جنوری 2017)۔ "8 bin asker emir bekliyor"۔ اخذ کردہ بتاریخ 13 جنوری 2017۔ 
  67. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ TSKFSAreinfocrements نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  68. "500 Turkish special forces have joined Al-Bab operation — Turkish media outlets report" (Tweet)۔ 25 دسمبر 2016 – بذریعہ Twitter۔ (ضرورت رکنیت)۔ 
  69. "Turkey sends military reinforcements to Syria as fight for al-Bab rages"۔ ARA News۔ 26 دسمبر 2016۔ اخذ کردہ بتاریخ 26 دسمبر 2016۔ 
  70. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ close نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  71. ^ ا ب "Turkey bogged down in Syria as it realigns with Russia"۔ اخذ کردہ بتاریخ 13 جنوری 2017۔ 
  72. Why Turkey has been taking so long to capture al-Bab
  73. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ surrounds 5٬000 نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  74. 71 soldiers reported killed since the start of the intervention,[3] of which 12 died up until the Battle of al-Bab,[4] leaving 57 to have died during the battle.
  75. 1 ہلاک (6 نومبر۔)،[5] 4 ہلاک (7 نومبر۔)،[6] 2 ہلاک (9 نومبر۔)،[7] 4 ہلاک (10 نومبر۔)،[8] 8ہلاک (11 نومبر۔)،[9] 5 ہلاک (12 نومبر۔)،[10] 9 ہلاک (14 نومبر۔)،[11] 2 ہلاک (15 نومبر۔)،[12] 2 ہلاک (16 نومبر۔)،[13] 2 ہلاک (19 نومبر۔)،[14] 1 ہلاک (20 نومبر۔)،[15] 4 ہلاک (24 نومبر۔)،[16] 1 ہلاک (26 نومبر۔)،[17] 83 ہلاک (2–15 Dec.)،[18] 35ہلاک (21 Dec.)،[19] 247 ہلاک (23 Dec.–18 Feb.)،[20][21] 11 ہلاک (20 Feb.)،[22] 7 ہلاک (23 Feb.)،[23] total of 428 reported killed
  76. 391 ہلاک (13 نومبر۔–28 دسمبر۔)،[24] 14 ہلاک (4 Jan.)،[25] 32 ہلاک (8 Jan.)،[26] 19 ہلاک (10 Jan.)،[27] 41 ہلاک (13 Jan.)،[28] 9 ہلاک (15 Jan.)،[29] 65 ہلاک (23 Jan.)،[30] 13 ہلاک (24 Jan.)،[31] 17 ہلاک (25 Jan.)، [32] 23 ہلاک (26 Jan.)،[33] 22 ہلاک (27 Jan.)،[34] 42 ہلاک (13 Februari)، [35] ترکی کے 688 کو ہلاک کرنے اور ایس اے اے کے 650 کو ہلاک کرنے کو رپورٹ کیا گيا[36]
  77. 26 ہلاک (باغیوں اور ترکی کے خلاف ; 13 نومبر۔–28 دسمبر۔)،[37] 19 ہلاک (آئی ایس آئی ایل کے خلاف; 21–29 نومبر۔)،[38][39][40] total of 45 reported killed
  78. "The Inside Source on Twitter"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  79. "Turkey-backed rebels seize Islamic State’s al-Bab stronghold in Syria"۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 فروری 2017۔ 
  80. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ 30٬000 Syrians flee نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔

بیرونی روابط[ترمیم]

سانچہ:Syrian Civil War

سانچہ:Military intervention against ISIL متناسقات: 36°22′21″N 37°31′04″E / 36.3725°N 37.5178°E / 36.3725; 37.5178