التخریج

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

التخریجاصطلاح حدیث میں استعمال ہے تخریج کی اصطلاحی تعریف یہ ہے کہ حدیث کے مصادرِ اصلیہ میں جہاں حدیث موجود ہو اس کو حدیث کی سند کے ساتھ اور عند الضرورۃ حدیث کا درجہ بھی بتلا دینا تخریجِ حدیث کہلاتا ہے ۔ ایسی کتاب ہے جس میں کسی دوسری کتاب کی بے حوالہ حدیثوں کی سند اور حوالہ جات درج کیے گئے ہوں۔ جیسے زیلعی کی نصب الرایہ لتخریج احادیث الہدایہ حافظ ابن حجر کی الدرایہ فی تخریج الھدایہ۔[1] محدثین کرامؒ نے فن تخریج پر درجنوں کتابیں تحریر فرمائی ہیں ، کچھ مشہور کتابیں یہ ہیں :

  1. ابو اسحاق شیرازیؒ کی ’’ تخریج أحادیث المہذب ‘‘ یہ محمد بن موسی حازمی رحمہ اللہ ( 584ھ ) کی تصنیف ہے ۔
  2. ابن حاجبؒ کی ’’ تخریج أحادیث المختصرالکبیر ‘‘ یہ محمدبن احمد بن عبدالہادی المقدسیؒ ( 744ھ ) کی تصنیف ہے ۔
  3. علامہ مرغینانیؒ کی ’’ نصف الرایہ لأحادیث الہدایہ ‘‘ یہ ’’ عبد اللہ بن یوسفؒ ( 762ھ ) کی تصنیف ہے ، ۔
  4. ’’ تخریج أحادیث الکشاف ‘‘ ، علامہ زمخشری کی تصنیف ہے ، حافظ زیلعیؒ نے بھی تخریج کی ہے ۔
  5. عمر بن علی بن الملقن ( متوفی 804ھ ) کی تصنیف ’’ البدر المنیر في تخریج الأحادیث والآثار الواقعہ في الشرح الکبیر للرافعي ‘‘ ۔
  6. ’’ المغني عن حمل الأسفار في الأسفار في تخریج ما في الأحیاء من الأخبار ‘‘ عبدالرحیم بن الحسین العراقی ( المتوفی 806ھ ) کی تصنیف ۔
  7. ’’ تخریج الأحادیث التي یشیر إلیہا الترمذي في کل باب ‘‘ حافظ عراقیؒ کی تصنیف ہے ۔
  8. ’’ التلخیص الحبیر في تخریج أحادیث شرح الوجیز الکبیر ، للرافعيؒ ‘‘ ، یہ احمد بن علی بن حجر عسقلانی یعنی علامہ ابن حجرؒ عسقلانی کی تصنیف ہے ( متوفی 852ھ ) ۔
  9. ’’ الدرایہ في تخریج أحادیث الہدایۃ ‘‘ از حافظ ابن حجر عسقلانیؒ ۔
  10. ’’ تحفۃ الراوي في تخریج أحادیث البیضاوي ‘‘ ، عبدالروف بن علی المنادیؒ ( 1031ھ ) کی تصنیف ہے ۔ [2]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. مرقاۃ المفاتیح شرح مشکوۃ المصابیح،ملا علی قاری جلد اول صفحہ51 مکتبہ رحمانیہ لاہور
  2. اصطلاحاتِ تخریجِ احادیث مؤلف : افتخار احمد قاسمی بستوی ناشر : مکتبہ ابو عبدالفتاح ، جامعہ اسلامیہ اشاعت العلوم ، اکل کوا ، نندوربار ، مہاراشٹرانڈیا